The Latest

nasirabbas

سیکرٹری جنرل مجلس وحدت نے ایران کے شہر تبریز میں زلزے سے ہونے والے نقصانات پر اظہار افسوس کیا ایم ڈبلیو ایم سیکرٹریٹ سے جاری ہونے والے بیان میں علامہ راجہ ناصر عباس جعفری نے کہا کہ پاکستانی عوام اپنے ہمسایہ اور اسلامی برادر ملک کی عوام کے اس دکھ میں برابر کے شریک ہیں 
انہوں نے کہا کہ قدرتی آفات تمام ملکوں کے لئے ایک چلینج کی شکل اختیار کر چکیں ہیں 
انہوں نے کہا کہ ہم اس دکھ میں برابر کے شریک ہیں اور اللہ کے حضور دعاکرتے ہیں کہ اس قدرتی آفت میں جاں بحق ہونے والوں کو اپنی رحمت کے سائے میں جگہ عنایت کرے اور پسماندگان کو صبر جمیل عنایت کرے

syria

شام کے بارے میں عرب لیگ کے وزیرائے خارجہ کا ہنگامی اجلاس جس کی بڑے زور شور سے تشہیر کی جارہی تھی اب اچانک خبر دی گئی کی کینسل کیا گیا لیکن اجلاس کے کو منسوخ کرنے کی وجوہات نہیں بتائیں گئیں 
اجلاس کو منسوخ کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ یہ اجلاس اب کسی اور دن منعقد ہوگا عرب لیگ کے سیکرٹری نے صرف اتنا کہا کہ اب یہ اجتماع کسی اور دن منعقد کیا جائے گا 
واضح رہے کہ اس اجلاس نے سعودی عرب میں منعقد ہونا تھا جہاں عرب ممالک کے وزراء خارجہ نے شام کے بارے میں کسی مشترکہ فیصلہ پر پہنچنا تھا 
اس اجلاس سے قبل ہیلری کلنٹن نے ترکی کا دورہ کرتے ہوئے ترکی کے ساتھ ایک مشترکہ پلان پر دستخط کردیے جس میں شام میں شدت پسندوں کی مزید مدد سمیت متعدد موضوعات شامل تھے 
بشار الاسد کی حکومت کے خلاف مسلسل ناکامیوں کے بعد اس وقت امریکہ اسرائیل سعودی عرب قطر اور ترکی مسلسل کسی ایسے آپشن پر غور خوص کررہے ہیں کہ جس کے سبب بشار الاسد کی عوامی مقبولیت کو کم کیا جائے اور شدت پسندوں کی ناکامیوں کوروکا جائ

domki

طوری امام بارگاہ کوئٹہ میں منعقدہ مجلس عزا سے خطاب کرتے ہوئے مجلس وحدت مسلمین بلوچستان کے سیکریٹری جنرل علامہ مقصود علی ڈومکی نے کہا کہ کوئٹہ میں 7200 کلوگرام بارود اور خودکش جیکٹس کی برآمدگی اور دہشت گردوں کی مسلسل دھمکیوں کا مقصد ملت جعفریہ کوئٹہ کو ڈرا کر جلوس عزا اور عزاداریکو روکنا تھا مگر کوئٹہ کی غیور شیعہ قوم نے دشمن کے عزائم خاک میں ملاتےہوئے جرات و بہادری کی اعلی مثال قائم کی. شوق شہادت لئے ہزاروں عاشقان اہلبیت ع نے کربلائے کوئٹہ میں یزیدیت کو عبرت ناک شکست دی. اس عرصہ میں منافقین نے لوگوں کو ڈرانے کے لئے جو سازش کی اور کہا کہ ہزارہ قوم مذہب کے معاملے میں سیکولر اور دینی اقدار سے بے گانہ ہے ان منافقین کو ذلت ورسوائی ملی غیور ہزارہ قوم کی تاریخ عشق اہلبیت ع میں قربانیوں سے عبارت ہے وہ اس امتحان میں بھی سرخرو ہوئی . انہوں نے 23 رمضان المبارک شہداءیوم القدس کوئٹہ کی دوسری برسی کے موقعہ پر ان کی عظمت کو سلام کرتے ہوئےکہا کہ انہوں نے سیرت مولا علی ع پر عمل کرتے ہوئے حالت روزہ میں جام شہادت نوش کیا. انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ کوئٹہ اور مستونگ میں دہشت گردوں کے خلاف گرینڈ آپریشن کرے.شہداء یوم القدس کی برسی کے موقعہ پر علامہ مقصود علی ڈومکی نے مزارشہداء پر حاضری دی

irnz
تہران … ایران میں تبریز کے نزدیک زلزلے سے 80 افراد ہلاک اور 400 سے زائد زخمی ہوئے ہیں جبکہ درجنوں دیہات کو نقصان پہنچا ہے۔ امریکی جیالوجیکل سروے کے مطابق زلزلہ تبریز شہر کے شمال مشرق میں 60 میل دور 10 کلومیٹر زیر زمین آیا۔ زلزلے سے ذرائع آمد و رفت کو شدید نقصان پہنچا ہے۔ مقامی انتظامیہ کے مطابق زلزلے سے 60 گاوٴں متاثر بھی ہوئے ہیں، تباہ ہونے والے علاقوں میں امدادی ٹیموں کو بھیج دیا گیا ہے جبکہ زخمیوں کو اسپتال منتقل کرنے کا کام جاری ہے

iqtedar
ایم ڈبلیو ایم ملتان کے سیکرٹری جنرل نے اسلام ٹائمز سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اما م خمینی کے فرمان کے مطابق علامہ راجہ ناصر عباس جعفری کی اپیل پر پورے پاکستان میں امریکہ و اسرائیل مخالف مظاہرے ہوں گے۔
اسلام ٹائمز۔ مجلس وحدت مسلمین ملتان کے ضلعی سیکرٹری جنرل علامہ اقتدار حسین نقوی نے ملتان میں مجلس عزاء سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ حضرت علی علیہ السلام کی زندگی ہمارے لیے مشعل راہ ہے، اگر پوری دنیا کے مسلمان حضرت علی علیہ السلام کی سیرت پر عمل کرتے تو آج پوری دنیا پر مسلمانوں کی حکومت ہوتی۔
علامہ اقتدار حسین نقوی نے مزید کہا کہ اما م خمینی رحمتہ اللہ علیہ کے فرمان کے مطابق علامہ راجہ ناصر عباس جعفری کی اپیل پر پورے پاکستان میں امریکہ و اسرائیل مخالف مظاہرے ہوں گے، اُنہوں نے کہا کہ ملتان میں یوم القدس کے موقع پر مجلس وحدت مسلمین دیگر جماعتوں امامیہ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن ، امامیہ آرگنائزیشن، شیعہ علماء کونسل اور فلسطین فائونڈیشن کے ساتھ ملکرعظیم الشان ریلی نکالے گی، انہوں نے کہا کہ اس بار ملتان میں شیعہ جماعتوں کے ساتھ ساتھ اہل سنت برادران بھی کثیر تعداد میں شرکت کریں گے۔

ijlas

مجلس وحدت مسلمین پاکستان کا سالانہ تنظیمی اجلاس آٹھ اور نو ستمبر کو اسلام آباد میں ہوگا 
اس اجلا س میں دستوری کیمیٹی،صوبائی اور مرکزی شوری کے اجلاس کے علاوہ شعبہ جاتی نشستیں اور ایک مذاکرہ بھی ہوگا 
اجلاس میں مرکزی کارکردہ گی رپورٹ بھی پیش کی جائے گی جبکہ اجلاس کے آخر میں مرکزی سیکرٹری جنرل مجلس وحدت مسلمین پاکستان علامہ راجہ ناصر عباس جعفری خطاب کرینگے

tabahi

گناہان کبیرہ میں سے ایک گناہ جوانسان کی فردی اور اجتماعی زندگی میں بہت زیادہ نقصان دہ ثابت ہوتی ہے وہ تہمت ہے اگر کوئی شخص کسی دوسرے شخص پر تہمت لگاتا ہے تو وہ دوسرے کو نقصان پہنچانے کے علاوہ خود اپنے کو بھی نقصان پہنچاتا ہے اور اپنی روح کو گناہوں سے آلودہ کرتا ہے۔
اب سوال یہ ہوتاہے کہ آخر تہمت ہے کیا ؟ تہمت کے معنی یہ ہیں کہ انسان کسی کی طرف ایسے عیب کی نسبت دے جو اس کے اندر نہ پائے جاتے ہوں ۔ تہمت گناہان کبیرہ میں سے ایک ہے اور قرآن کریم نے اس کی شدید مذمت کرتے ہوئےاس کے لئے سخت عذاب کاذکر کیا ہے۔
فرزند رسول حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام اس سلسلے میں فرماتے ہیں: بے گناہ پر تہمت لگانا عظیم پہاڑوں سے بھی زیادہ سنگین ہے (سفینۃ البحارج1 )
درحقیقت تہمت و بہتان، جھوٹ کی بدترین قسموں میں سے ہے اور اگر یہی بہتان، انسان کی عدم موجودگی میں اس پر لگایا جا‏ئے تو وہ غیبت شمار ہوگی در حقیقت اس نے دو گناہیں انجام دیں ہیں۔
ایک دن حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام کے ایک چاہنے والے آپ کے ساتھ کہیں جارہے تھےاور اس کے غلام اس سے آگے بڑھ گئے تھے اس نے اپنے غلاموں کو آواز دی لیکن غلاموں نے کوئی جواب نہ دیااس نے تین مرتبہ انہیں آواز دی لیکن ان کی جانب سے کوئی جواب نہ ملا تو یہ شخص غصے سے چراغ پا ہوگیا اور اپنے غلام کو گالیاں دیں جودر حقیقت اس کی ماں پر تہمت تھی۔
راوی کا بیان ہے کہ امام صادق علیہ السلام نے جب ان غیر شائستہ الفاظ کو سنا تو بہت زیادہ ناراض ہوئے اور اسے ان غیر مہذب الفاظ کی جانب متوجہ کرایا لیکن اس نے غلطی کا اعتراف کرنے کے بجائے توجیہیں کرنا شروع کردیں جب امام علیہ السلام نے دیکھا کہ وہ اپنی غلطی وگناہ پرنادم نہیں ہے توآپ نے اس سے کہاکہ تھجے اب اس بات کا حق نہیں کہ میرے ساتھ رہے۔
آیئے دیکھتے ہیں کہ تہمت کے برے اثرات کیا ہیں۔
تہمت معاشرے کی سلامتی کوجلد یا بدیرنقصان پہنچاتی ہے اور اجتماعی عدالت کو ختم کردیتی ہے ، حق کو باطل اور باطل کو حق بناکر پیش کرتی ہے ، تہمت انسان کو بغیر کسی جرم کے مجرم بناکر اس کی عزت و آبرو کو خاک میں ملادیتی ہے ۔ اگر معاشرے میں تہمت کا رواج عام ہوجائے اور عوام تہمت کو قبول کرلیں اس پر یقین کرلے تو حق باطل کے لباس میں اور باطل حق کے لباس میں نظر آئے گا۔
وہ معاشرہ ، جس میں تہمت کا رواج عام ہوگا اس میں حسن ظن کو سوء ظن کی نگاہ سے دیکھا جائے گا اورلوگوں کا ایک دوسرے سے اعتماد و بھروسہ اٹھ جائے گااور معاشرہ تباہی کے دہانے پر پہنچ جائے گا یعنی پھر ہر شخص کے اندر یہ جرات پیدا ہوجائے گی کہ وہ جس کے خلاف ، جو بھی چاہے گازبان پر لائے گااوراس پر جھوٹ ، بہتان اور الزام لگا دے گا۔
جس معاشرے میں تہمت و بہتان کا بہت زیادہ رواج ہوگا اس میں دوستی و محبت کے بجائے کینہ و عداوت زیادہ پائی جائے گی اور عوام میں اتحاد اور میل و محبت کم اور لوگ ایک دوسرے سے الگ زندگی بسر کریں گے۔کیونکہ ان کے پاس ہر صرح ای دولت ہونے کےباوجود محبت جیسی نعمت سے محروم ہوں گے اور ہر انسان اس خوف و ہراس میں مبتلا ہوگا کہ اچانک اس پر بھی کوئی الزام عائد نہ ہوجائے۔
تہمت کے بےشمار فردی اور اجتماعی برے اثرات موجود ہیں حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام فرماتے ہیں: جب بھی کوئی مومن کسی دوسرے پر الزام یا تہمت لگاتا ہے تو اس کے دل سے ایمان کی دولت بالکل اسی طرح ختم ہوجاتی ہے جس طرح نمک پانی میں گھل کراپنی اصلیت کھو دیتا ہے ۔(اصول کافی ج 4 ص 66 )
تہمت لگانے والے شخص کے دل سے ایمان کے رخصت ہونے کی وجہ یہ ہےکہ ایمان ہمیشہ سچائی کے ساتھ رہتا ہے اورحقیقت یہ کہ تہمت دوسروں پر جھوٹا الزام عائد کرتی ہے لہذااگر کوئی شخص دوسروں پر بہتان اور تہمت لگانے کا عادی بن جائے گا تو صداقت وحقیقت سے اس کا کوئی واسطہ نہ ہوگا اور اس طرح دھیرے دھیرے دوسروں پرتہمت و بہتان لگانے والے کا ایمان ختم ہوجائے گا اور اس کے قلب میں ذرہ برابربھی ایمان باقی نہیں رہےگا اور اس کا ٹھکانہ جہنم ہوگا۔
پیغمبر اسلام (ص) اس بارے میں فرماتے ہیں:
اگر کوئی شخص کسی مومن مرد یا وعورت پر بہتان لگائے یا کسی کے بارے میں کوئی بات کہے جو اس کے اندر نہ ہو تو پرودگار عالم اسے آگ کے بھڑکتے شعلوں میں ڈال دے گا تاکہ جو کچھ بھی کہا ہے اس کا اقرار کرلے۔(بحارالانوار ج 75 ص 194 )
تہمت کی دوقسمیں ہیں ۔کبھی کبھی تہمت لگانے والا جان بوجھ کر کسی پرگناہ یا عیب کی غلط نسبت دیتا ہے یعنی اسے معلوم ہے کہ اس کے اندر یہ عیب نہیں ہے یا اس سے یہ گناہ سرزد نہیں ہوا ہے لیکن اس کے باوجود اس کی طرف اس عیب کی نسبت دیتا ہے اور کبھی کبھی تو اس سے بدتر صورتحال پیدا ہوجاتی ہے یعنی وہ خود ان گناہوں کامرتکب ہوتا ہے اور مشکلات اور اس کی سزا سے اپنے کو بچانے کے لئے اس عمل کی نسبت دوسروں کی طرف دے دیتا ہے جسے اصطلاح میں "افتراء " کہتے ہیں۔
لیکن کبھی کبھی تہمت لگانے والا جہالت اور وہم و گمان کی بناء پر کسی کی طرف غلط نسبت دیدیتا ہے جسے اصطلاح میں "بہتان " کہتے ہیں اور بہتان دوسروں سے سوء ظن رکھنے اور بدبین ہونے کی بناء پرہرتا ہے۔اور یہی چیز سبب بنتی ہے کہ بعض لوگ ان کاموں کو جو دوسروں سے سرزد ہوتا ہے اسے برائی پر حمل کرتے ہیں جب کہ معاشرے میں اکثر تہمتیں سوء ظن اور جہالت کی بنیاد پر لگائیں جاتی ہیں اسی لئے خداوند عالم نے قرآن مجید میں فرمایاہے :
ایمان والو،اکثر گمانوں سے اجتناب کرو کہ بعض گمان ،گناہ کا درجہ رکھتے ہیں۔(سورہ حجرات آیت 12 )
البتہ یہ بات بھی واضح وروشن ہے کہ ظن وگمان یا وہم و خیال کا ذہن میں پیدا ہونا ایک غیر اختیاری امر ہے اور ثواب و عذاب اختیاری عمل پر دیا جائے گا نہ کہ غیر اختیاری عمل پر ، اس بناء پر وہ آیتیں یا روایتیں جو انسان کو سوءظن رکھنے سے نہی کرتی ہیں ان کا مقصد یہ ہے کہ اپنے وہم و گمان پر اعتبار نہ کرے اور جہالت کی بنیاد پر کوئی عمل انجام نہ دے کیونکہ بہت سے ایسے افراد جو علم و آگاہی کے بغیر صرف وہم وگمان کی بنیاد پر عمل کرتے ہیں وہ گناہ ومعصیت کے مرتکب ہوتے ہیں۔
چنانچہ ہم قرآن مجید میں پڑھتے ہیں ارشاد رب العزت ہوتا ہے:
جس چیز کا تمہیں علم نہیں ہے اس کے پیچھے نہ جانا"(سورہ اسراء آیت 36 )
اور ایک گروہ ، جس نے سوء ظن کی بناء پر عمل کیا تھا ان پر ملامت و سرزنش کرتے ہوئے فرمایا ہے " تم نے بد گمانی سے کام لیااوراس کی بنیاد پر عمل کیااور تم ہلاک ہوجانے والی قوم ہو "
کبھی کبھی سوءظن کے آثار ناقابل تلافی ہوتے ہیں جیسا کہ ماہرین نے تہمت کے بارے میں اپنی متعدد رپورٹوں میں اشارہ کیا ہے کہ بہت سے افراد نے سوء ظن کی بناء پر اپنی بیوی تک کو قتل کردیا ہے یہ ایسی حالت میں ہے کہ اکثر اوقات ان لوگوں نےاپنی بیوی سے سوء ظن رکھا اور تہمت لگائی اور صحیح قضاوت و فیصلہ نہیں کیاجب کہ ان کےوہم و گمان کی کوئی حقیقت نہ تھی ۔ایک سچے اور مومن شخص کے لئے ضروری ہے کہ وہ اپنے بھائی اوربہن سے سوء ظن نہ رکھے بلکہ اس کے عمل کو حسن ظن سےتعبیر کرے مگر یہ کہ اس کے عمل یا سوء ظن پر کوئی مستحکم دلیل ہو ۔
امیر المومنین حضرت علی علیہ السلام اس سلسلے میں فرماتے ہیں : انسان کے لئے ضروری ہے کہ اپنے دینی بھائی کی گفتگو و کردار کو بہترین طریقے سے توجیہ کرے مگر یہ کہ اس بات پر یقین ہو کہ واقعہ کی نوعیت کچھ اورہے اور توجیہ کے لئے کوئی راستہ نہ بچے۔(اصول کافی ج 2 ص 362 )
محمد بن فیضل کہتے ہیں : کہ میں نے امام موسی کاظم علیہ السلام سے کہاکہ : بعض موثق افراد نے مجھے خبر دی ہےکہ میرے ایک دینی بھائی نے میرے سلسلےمیں کچھ باتیں کہی ہیں جو مجھے نا پسند ہیں جب میں نے اس بارے میں سوال کیا تو اس نے انکار کردیاہے اور کہا کہ میں نے ایسا کچھ بھی نہیں کہا ہے اب میرا وظیفہ کیا ہے ؟
حضرت امام موسی کاظم علیہ السلام نےفرمایا : اگر پچاس عادل تمھارے پاس آکر گواہی دیں کہ فلاں شخص نے تمھارے بارے میں یہ ناروا باتیں کی ہیں تو تمھیں چاہیۓ ان کی گواہی کو رد کردو اور اپنے دینی بھائی کی تصدیق و تائید کرو اور جو چیز اس کی عزت و آبرو کے لئے خطرناک ہو اسے لوگوں کے سامنے ظاہر نہ کرو۔
آیئے اب دیکھتے ہیں کہ اگر کوئی شخص کسی پر تہمت لگائے تو اس کے مقابلے میں ہمارا وظیفہ کیا ہے؟
قرآن مجید نے سورہ حجرات کی چھٹی آیت میں اس سوال کا جواب دیتے ہوئے فرمایا ہے " ایمان والو اگر کوئی فاسق کوئی خبر لے آئے تو اس کی تحقیق کرو، ایسا نہ ہوکہ کسی قوم تک ناواقفیت میں پہنچ جاؤ اور اس کے بعد اپنے اقدام پر شرمندہ ہونا پڑے"
پس قرآن کے نظریئے کے مطابق جب بھی ہم کسی کے بارے میں کوئی خبر یا تہمت کے متعلق سنیں توسب سے پہلے ہمارا یہ وظیفہ ہونا چاہئیے کہ اس کے بارے میں تحقیق کریں اور اس کے صحیح یا غلط ہونے سے باخبر ہوں بہر حال اس سلسلےمیں عجلت اور فوری طور پر بغیر کسی دلیل و گواہ کے فیصلہ کرنے سے پرہیز کریں ۔
اسلام نے ایک جانب توتہمت کو حرام قرار دیا ہے اور مومنین کو حکم دیا ہےکہ ایک دوسرے کے ساتھ سوء ظن سے پیش نہ آئیں اور معتبر دلیل کے بغیر کسی پر بھی الزام عائد نہ کریں۔اور دوسری جانب انھیں حکم دیا ہے کہ اپنے کو بھی معرض تہمت میں نہ ڈالیں اور ایسی گفتگو اور عمل سے پرہیز کریں جو سوء ظن کا سبب بنے۔
حضرت علی علیہ السلام اس بارے میں فرماتے ہیں : وہ شخص جو اپنے کو معرض تہمت میں قرار دیتا ہے تو پھر وہ ایسے شخص پر لعنت و ملامت نہ کرے جو اس سے بدگمانی رکھتاہو۔(امالی شیخ صدوق ص 304 )
اسی وجہ سے روایتوں میں بہت زیادہ تاکید ہوئی ہے کہ مومنین کو چاہئیے کہ گناہگاروں اورفاسقوں کی ہمنشینی سے پرہیز کریں کیونکہ ان کےساتھ نشست و برخاست کی بناء پر عوام مومنین سے بدبین ہوجائیں گے اور پھر ان پر تہمت لگائیں گے۔
اگر ہم اس نکتہ پربھرپور توجہ رکھے کہ دوسروں پر تہمت لگانے سے جہاں اس کو نقصان پہنچتاہے وہیں ہماری روح بھی آلودہ ہو جاتی ہےاور بے شمار معنوی نقصانات سے دوچار ہوتے ہیں تو ہم کبھی بھی اس گناہ کے انجام دینے پر راضی نہیں ہوں گے۔
خدایا ایمان و عمل صالح کے صدقے میں ہم سب کو کامیابی و کامرانی سے ہمکنارفرما

abdul

مجلس وحدت مسلمین پنجاب کے دفتر سے جاری سیکرٹری جنرل علامہ عبدالخالق اسدی کے بیان میں کہا گیا ہے کہ کراچی جلوس پر ہوائی فائرنگ رینجرز کی شرانگیزی تھی، اس واقعے میں تمام حکومتی ادارے ملوث ہیں، یہ واقعہ عزاداری کو محدود کرنے کی سازش ہے، جسے ہم کبھی کامیاب نہیں ہونے دیں گے، نہتے عزاداروں پر گولیاں چلا کر قانون نافذ کرنے والے اداروں نے اپنا مکروہ چہرہ عوام کے سامنے بےنقاب کر دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وزیراعلٰی اور گورنر سندھ کا کردار بھی اس واقعہ میں مشکوک رہا ہے۔ سیکرٹری جنرل پنجاب علامہ عبدالخالق اسدی، سید اسد عباس نقوی، استاد ذوالفقار علی اسدی نے اس واقعہ کی پر زور مذمت اور تحقیقات کا مطالبہ کیا اور ذمہ داروں جس میں ڈی جی رینجرز کراچی، کمشنر کراچی کو برطرف کرنے کا مطالبہ کیا۔ انہوں نے لاہور میں پرامن جلوس عزا پر انتظامیہ، امامیہ اسکاؤٹس، حیدریہ اسکاؤٹس و دیگر ملی تنظیموں کا شکریہ ادا کیا۔

dado

دادو کے علاقے سیتا اور خیرپور ناتھن شاہ میں یوم شہادت امام علی ؑ کے جلوس ہائے عزا کے موقع پر مجلس وحدت مسلمین دادو ڈسٹرکٹ، امامیہ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن دادو ڈویژن، اصغریہ آرگنائزیشن، حزب المہدیؑ اور مقامی انجمنوں کے جانب سے پیپلز پارٹی کے رکن صوبائی اسمبلی عمران ظفر لغاری کے خلاف احتجاجی جلسے منعقد کئے گئے۔ جلسہ سے مجلس وحدت مسلمین پاکستان صوبہ سندھ کے سیکریٹری جنرل علامہ مختار احمد امامی نے خطاب کیا۔ اس موقع پر آئی ایس او کے رہنما شفقت عباس، ایم ڈبلیو ایم کے رہنما مجاہد عباس، حزب المہدی ؑ کے رہنما عامر شاہ و دیگر بھی موجود تھے۔ علامہ مختار امامی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پیپلز پارٹی کے رکن صوبائی اسمبلی عمران ظفر لغاری اپنے تکبر اور ہٹ دھرمی کی خاطر ملت جعفریہ کو دیوار سے لگانے کی کوشش کررہے ہیں۔

ایم ڈبلیو ایم سندھ کے سیکریٹری جنرل نے کہا کہ پی پی پی کے ایم پی اے کی جانب سے امام بارگاہ کی بے حرمتی اور مومنین کو زخمی کئے جانے پر پارٹی کی قیادت یا پھر مذکورہ ایم پی اے ملت جعفریہ سے معافی مانگے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اگر عمران ظفر لغاری اپنی ہٹ دھرمی پر قائم رہے اور ملت جعفریہ کے حقوق کی پامالی، امام بارگاہ، علم عباس ( ع ) کی بے حرمتی اور مومنین کو زخمی اور ہراساں کرنے پر معافی نہ مانگی تو یوم القدس اور نماز عید کے اجتماعات میں پیپلز پارٹی کے رکن صوبائی اسمبلی کے خلاف احتجاجی دھرنے دیئے جائیں گے۔ انہوں نے صدر زرداری اور وزیراعلیٰ سندھ سے مطالبہ کیا کہ عمران ظفر لغاری کے خلاف فی الفور ایکشن لیا جائے ورنہ ملت جعفریہ یہ سمجھنے پر مجبور ہوگی کہ ان سارے واقعات میں پیپلز پارٹی کی اعلیٰ قیادت بھی ملوث ہے۔

واضح رہے کہ گذشتہ دنوں قبل دادو سے منتخب ہونے والے پی پی پی کے رکن سندھ اسمبلی عمران ظفر لغاری نے دادو کے علاقے سیتا میں امام بارگاہ کی زمین کی زمین پر قبضہ کیا تھا اور بعد از قبضہ علم عباس ( ع ) کی بے حرمتی کرتے ہوئے مومنین کو زخمی و ہراساں کیا تھا۔ اس واقعے کے بعد مختلف سطح پر شیعہ تنظیموں کی طرف سے احتجاج کیا گیا اور دادو میں پیپلز پارٹی کے خلاف احتجاجی ریلی نکالی گئی اور ڈی سی ہاؤس کے باہر احتجاجی دھرنا دیا گیا

fanansal
برطانیہ کا معروف اخبار فنانشل ٹائمز کا کہنا ہے کہ شام ترکی کے لئے اب ایک ڈراونے خواب کی شکل اختیار کر رہا ہے خاص طور پر ایک ایسے صورت حال میں جب ترک مخالف کردوں(پی کے کے) نے ترکی کے بعض حصے پر قبضہ جمالیا ہے 
اخبار کا کہنا ہے کہ ترکی کو جلد ہی شام اور عراق کے کردوں کی جانب سے بھی اس مطالبے کی آوازیں سنائی دینگی جو کرد ملک کی تشکیل کے لئے اٹھ ینگی اس کا مطلب تو یہ ہوگا کہ ترکی میں موجود تیرہ ملین کردوں کی تقویت کرنا 
اخبار کا کہنا ہے کہ ایک ایسی صورت حال میں ترکی کو ایران کی زیادہ مخالفت مول نہیں لینا چاہیے 
اخبار خطے میں شدت پسند وں کی حمایت کے حوالے سے کہتا ہے کہ ترکی خطے میں شدت پسند سنی محاذ کی حمایت کر رہا ہے ،شام میں شدت پسندوں کی حمایت کی وجہ سے ترکی میں موجود علویوں میں سخت اضطراب پایا جاتا ہے اور اگر ترکی کی یہی صورت حال جاری رہی تو مذہبی اور قومی اختلافات سے ترکی کے معاشرے کو کوئی نہیں بچا سکتا

مجلس وحدت مسلمین پاکستان

مجلس وحدت مسلمین پاکستان ایک سیاسی و مذہبی جماعت ہے جسکا اولین مقصد دین کا احیاء اور مملکت خدادادِ پاکستان کی سالمیت اور استحکام کے لیے عملی کوشش کرنا ہے، اسلامی حکومت کے قیام کے لیے عملی جدوجہد، مختلف ادیان، مذاہب و مسالک کے مابین روابط اور ہم آہنگی کا فروغ، تعلیمات ِقرآن اور محمد وآل محمدعلیہم السلام کی روشنی میں امام حسین علیہ السلام کے ذکر و افکارکا فروغ اوراس کاتحفظ اورامر با لمعروف اور نہی عن المنکرکا احیاء ہمارا نصب العین ہے 


MWM Pakistan Flag

We use cookies to improve our website. Cookies used for the essential operation of this site have already been set. For more information visit our Cookie policy. I accept cookies from this site. Agree