آخر غریب کس طرح بات کرتا!

وحدت نیوز (آرٹیکل) ایک آدمی کو بات کرنے والا طوطا بہت پسند تھا ایک دن وہ پرندہ فروش کے پاس گیا اور ایک خوبصورت بات کرنے والا طوطا خرید لایا ایک دن گزر گیا لیکن طوطے نے ایک حرف نہیں بولا اگلے دن وہ دوکاندار کے پاس آیا اور کہنے لگا بھائی صاحب جو طوطا میں خرید کے لے گیا تھا وہ تو ایک حرف بھی نہیں بولتا اور تم تو کہہ رہے تھے کہ وہ بات کرتا ہے؟ دکاندار نے پوچھا کیا طوطے کے پنجرہ میں آئینہ ہے؟ اس نے جواب دیا نہیں کیوں؟ دکاندار نے کہا طوطہ جب آئینہ میں اپنا عکس دیکھتا ہے تو بات کرنے لگتا ہے۔ خریدار ایک آئینہ لے کر گیا اور ایک روز بعد پھر واپس آیا کہنے لگا بھائی آئینہ نصب کردیا تھا طوطہ پھر بھی بات نہیں کرتا۔ دکاندار نے کہا کیا پنجرہ میں سیڑھی ہے؟ اس نے کہا نہیں دکاندار نے کہا بے وقوف طوطا تو سیڑھیوں کا عاشق ہے اسی لئے وہ کچھ نہیں بول رہا۔ خریدار کچھ غصے کی حالت میں واپس گیا اور آگلے دن پھر غصے کی حالت میں واپس آیا، دکاندار نے جب خریدار کو دیکھا تو اس سے پہلے کہ وہ کچھ کہتا فورا سوال کر ڈالا کیا طوطے کے پنجرہ میں جھولا ہے؟ اس نے غصے میں جواب دیا نہیں، دکاندار نے کہا بس مسلۂ ہی حل ہوگیا طوطا تو جھولا جھولتے ہوئے بات کرتا ہے، خریدار کچھ کہہ نہ سکا اور ایک جھولا خرید کر واپس ہوا۔ چوتھے روز خریدار روتے ہوئے دکاندار کے پاس گیا اور کہنے لگا طوطا مرگیا میرا طوطا مر گیا۔۔۔ دکاندار نے جب اس کی حالت دیکھی تو دلاسہ دیتے ہوئے پوچھا کیا تمھارے طوطے نے مرتے ہوئے بھی کوئی بات نہیں کی؟؟ اس نے روتے ہوئے جواب دیا کیوں نہیں اس نے بات کی۔ دکاندار نے پوچھا کیا بات کی ، طوطے نے کیا بولا؟؟ خریدار نے کہا طوطے نے مرنے سے پہلے انتہائی ضعیف آواز میں مجھ سے پوچھا کیا اُس دکان پر طوطوں کے لئے کھلونوں کے علاوہ کوئی کھانے پینے کی چیزیں نہیں تھی ۔۔۔؟!

وطن عزیز میں بھی عوام اور حکمرانوں کے درمیان کچھ ایسے ہی رشتے قائم ہیں۔ قومی اسمبلی میں وزارت برائے منصوبہ بندی و ترقی کی جانب سے جمع کرائی جانے والی ایک دستاویز کے زریعے انکشاف ہوا ہے کہ پاکستان کی آبادی کا 29.5 فیصد حصہ غربت کی لکیر سے نیچے زندگی بسر کر رہا ہے۔ جو تعداد کے تناسب  سے تقریبا ساڑھے پانچ کروڑ افراد بنتی ہے۔ دستاویز ات کے مطابق اس طریقے کار کے تحت پاکستان میں غربت کی لکیر کو ہر فرد کے ماہانہ خرچہ 3030 روپے مقرر کیا گیا جس کے تحت اگر کسی شخص کی ماہانہ آمدن 3030 روپے سے کم ہے تو اس کا شمار خط غربت سے نیچے زندگی گزارنے والوں میں ہوگا۔اس حساب کے مطابق جن لوگوں کی روزانہ آمدن ایک ڈالر سے زیادہ ہے انہیں غربت کی لکیر سے اوپر قرار دیا جاتا ہے۔ لیکن بین الاقوامی معیار کے حساب سے بات کی جائے تو 3030کے بجائے 5000 یا تقریبا 600 روپے ماہانہ کمانے والے افراد غربت کی لکیر سے باہر ہونگے اور اس لحاظ سے پاکستان میں غربت کی لکیر سے نیچے زندگی گزارنے والوں کی تعداد دگنی ہوجائے گی۔اب غربت کی وجہ سے ایک فیملی پر کیا کیا اثرات پڑھتے ہیں یہ تو ہم سب ہی جانتے ہیں،کھانے پینے سے لیکرتعلیم،شادی غرض ہر چیز پر ہی اثر انداز ہوتی ہے یہاں تک کہ زندگی اور موت کا بھی مسئلہ بن جاتی ہے، لوگ اپنے لخت جگر کو چند پیسوں کے عوض بیچنے پر مجبور ہوجاتے ہیں، قابل لائق اور زہین بچے تعلیم سے محروم رہ جاتے ہیں۔۔۔اور ایسی ہی ناجانے کتنی مشکلات سامنے آتی ہیں ۔۔ھر قدم پھونک پھونک کے اٹھانا پرھتا ہے۔۔اور آج کل کے حالات میں بین الااقوامی خط غربت کے حساب سے بھی پاکستان میں کوئی کماتا ہے تو وہ صرف 12گھنٹے کی لوڈشیڈنگ سے آنے والے بل کی نظر ہوجاتا ہے۔ لیکن اگر اس غربت سے صرف بچوں کی زندگیوں پر پڑھنے والے اثرات کو دیکھیں توہماری انکھیں کھولنے کے لئے کافی ہے۔ ایک سروے کے مطابق ملکی آبادی کا 69فیصد حصہ غذا کے حوالے سے غیر محفوظ ہے اور عام طور پر لوگوں کی غذا کا بڑا حصہ روٹی پر مشتمل ہوتا جب کہ گوشت ،پھل،ڈیری مصنوعات کا استعمال بہت کم ہوتا ہے، یوں ملک کی تقریبا ستر فیصد آبادی کو صحت مند قرار نہیں دیا جاسکتا۔اُوپر سے لوگوں کی بڑی تعداد ایسی گندم کا استعمال کر رہی ہے جس میں بیکٹریا موجود ہیں اور اس سے ان کی صحت پر منفی اثرات مرتب ہو رہے ہیں "خواتین اور بچوں کی نصف آبادی غذا میں وٹامن موجود نہ ہونے کی وجہ سے بہت سی بیماریوں کا شکار ہیں، اور بچوں میں ہونے والی اموات میں سے 45فیصد اموات نامکمل غذا کی وجہ بتائی جاتی ہے"۔ یہ غربت کی وجہ سے پڑھنے والے اثرات پر ایک چھوٹی سی رپورٹ ہے۔

اب اگر ہم اپنے حکمرانوں کی جانب دیکھیں تو عوام کی بھوک ،پیاس،غربت کے حقیقی درد سے کوسوں دور وزیر اعظم صاحب ملتان میں میٹرو کا افتتاح کرتے ہوئے کہتے ہیں " میٹرو بنے سے قبل طالب علم، نوجوان اور غریب افراد کتنی مشکل سے سفر کرتے تھے اور کتنا کرایہ دے کر جاتے تھے ہمیں اس بارے میں سوچنا چاہیے۔۔۔!! "
بلکل صحیح فرمایا ہے جناب وزیر اعظم صاحب (میں بذات خود میٹرو کا مخالف نہیں۔۔لیکن اہم مہم بھی کوئی چیز ہے۔۔اور میٹرو۔۔!کرپٹ لوگوں کے ہاتھوں کچھ نہ ہونے سے میٹرو ہی صحیح) آپ ابھی یہ سوچ رہے ہیں اور ہم تو سوچ رہے تھے کہ تین دفعہ وزیر اعظم بنے کے بعد تو ملتان کیا پاکستان بھر سے غربت کا خاتمہ ہو جانا چاہیے تھا، آپ تو سفر کی مشکلات کا ذکر کر رہے ہیں ہم تو وی آئی پی پروٹوکول سے کوئی غریب بیمار زندہ بچ کے ہسپتال پہنچ جائے تو شکر ادا کرتے ہیں،آپ تو کرایوں کی بات کرتے ہیں ہم تو 24گھنٹوں میں ایک وقت کی عزت کی روٹی مل جائے اور زندہ رہے تو خوشی خوشی میلوں پیدل چلنے کو تیار ہیں۔آپ تو کہتے ہیں پاکستان کے ہر شھر کو خوبصورت بنائیں گے، بلکل درست بات کی آپ نے لیکن ہم کہتے ہیں اس شہر کو خوبصورت بنانے سے پہلے یہاں بسنے والوں کو خوبصورت بنے کے موقعے فراہم کیے جائیں، آپ بیروزگاروں کا کچھ سوچیں تو ہم خود اپنے اپنے گلی کوچوں ،سڑکوں اور شہروں کو خوبصورت بنائیں گے۔ آپ نے 28 ارب 88 کروڑ کی لاگت سے ملتان میٹرو تعمیر کروایا ہے یقیناًبڑی رقم ہے قابل تعریف ہے آپ کا بہت بہت شکریہ لیکن اگر آپ اس میں سے صرف دس ارب ملتان کے جوانوں اور بچوں کی تعلیم پرخرچ کرتے، دس ارب غریب عوام پراور پانچ ارب سے ٹرانپورٹ کا نظام درست کرواتے تو یہ شھر جنت بنتا اور 3 ارب 88 کروڑ بھی آپ کی آف شورز ایکاونٹز میں جمع ہو جاتا یوں عوام بھی خوش ہوتے اور آپ کو بھی فائدہ پہنچتا کم از کم اگلے الیکشن میں آپ ملتان میں پیسے بہانے اور گلوبٹ کو میدان میں اتارنے کی زحمت سے بچ جاتے ۔۔۔


تحریر۔۔۔۔۔۔ ناصر رینگچن

مجلس وحدت مسلمین پاکستان

مجلس وحدت مسلمین پاکستان ایک سیاسی و مذہبی جماعت ہے جسکا اولین مقصد دین کا احیاء اور مملکت خدادادِ پاکستان کی سالمیت اور استحکام کے لیے عملی کوشش کرنا ہے، اسلامی حکومت کے قیام کے لیے عملی جدوجہد، مختلف ادیان، مذاہب و مسالک کے مابین روابط اور ہم آہنگی کا فروغ، تعلیمات ِقرآن اور محمد وآل محمدعلیہم السلام کی روشنی میں امام حسین علیہ السلام کے ذکر و افکارکا فروغ اوراس کاتحفظ اورامر با لمعروف اور نہی عن المنکرکا احیاء ہمارا نصب العین ہے 


MWM Pakistan Flag

We use cookies to improve our website. Cookies used for the essential operation of this site have already been set. For more information visit our Cookie policy. I accept cookies from this site. Agree