وحدت نیوز(مانٹرنگ ڈیسک/ سبی) صوبائی وزیر لائیو اسٹاک و جنگلات آغا سید محمد رضا نے کہا ہے کہ ڈرائنگ رومز میں بیٹھ کر اداروں کی کارکردگی کو بہتر نہیں بنایا جاسکتا ہے صوبائی حکومت کرپشن کے خاتمہ اور عوام تک سروسز کی فراہمی کے لیے کوشاں ہے،لائیواسٹاک کے فروغ ہی سے ہماری معیشت میں بہتر تبدیلی آسکتی ہے ،قدرتی چراگاہیں خشک سالی کے باعث ختم ہوتی جارہی ہیں،گوشت و دودھ سمیت پولٹری پیداوار میں اضافہ کے لیے لائیواسٹاک کے ماہرین و ڈاکٹرزہمہ وقت مصروف عمل ہیں بلوچستان ناڑی ماسٹر جیسے جانور وں سے یقینانہ صرف صوبہ بلکہ ملک بھر سے گوشت کی کمی کا مسئلہ ختم ہو سکتا ہے،جانوروں کی ایران اور افغانستان اسمگلنگ کو روکنے کے لیے وزارت داخلہ کو ثمری بھیجی جائے گی، گرین بلوچستان پیکج کے تحت صوبہ بھر میں 15لاکھ سے زائد درخت اور پودئے لگانے کی مہم کا آغاز کردیا گیاہے،ماحولیاتی تبدیلی میں عوام میں شعور و آگاہی پھیلانے کی ضرورت ہے ان خیالات کا اظہارانہوں نے سبی کے ایک روزہ دورہ کے دوران ڈیری فارم ،بیف اینڈ ریسرچ سینٹر ،اسٹیڈیم ،گھوڑا ہسپتال ،جنگلات نرسری کے معائنہ کے موقع پر صحافیوں سے بات چیت میں کیا۔

 اس موقع پر ڈائریکٹر لائیواسٹاک ڈاکٹر عتیق الرحمان شیرازی،ڈپٹی ڈائریکٹر ڈاکٹر جان محمد صافی،بیف اینڈ ریسرچ سینٹر کے سپرٹنڈنت ڈاکٹر عبدالصبور کاکڑ،ڈاکٹر عزیز عثمانی،ڈائریکٹر جنرل جنگلات ضیغم احمد ،کنزرویٹر جنگلات زاہد رند و دیگر بھی موجود تھے قبل ازیں صوبائی وزیر کو بیف اینڈ ریسرچ سینٹر کے سپرٹنڈنٹ ڈاکٹر صبور کاکڑ نے بلوچستان ناڑی ماسٹر نسل کے معرض وجود کے حوالے سے کی جانے والی سائنسی تحقیق اور بلوچستان ناڑی ماسٹر کی افادیت کے بارے میں تفصیلاً بریفنگ بھی دی ،اس موقع پر صوبائی وزیرلائیو اسٹاک و جنگلات آغا سیدمحمدرضا  نے کہا کہ کرپشن ہمارئے معاشرئے کی جڑوں میں سرعیت کر چکا ہے اور معاشرئے سے کرپشن کا خاتمہ کیئے بغیر بہتری لانا ناممکن ہے انہوں نے کہا کہ ڈرائنگ رومز اور ائیر کنڈیشنڈ کمروں میں بیٹھ کر اداروں کی کارکردگی کو بہتر نہیں بنایا جاسکتا ہے اس کے لیے اداروں کی مانیٹرنگ ناگزیر ہے اور اسی سلسلے میں سبی کا دورہ کیا ہے تاکہ محکمہ کی کارکردگی کو بہتر بنایا جاسکے اور پروڈکشن میں بھی خاطر خواہ اضافہ کیا جاسکے۔

 انہوں نے کہا کہ آسٹریلیا کے ڈراؤٹ ماسٹر اور بلوچستان کی بھاگناڑی کے کامیاب کراس تجربے کے بعد بلوچستان ناڑی ماسٹر یقیناًگوشت کی پیداوار میں اہمیت کا حامل جانور ہے اور اس نسل کو پال کر نہ صرف بلوچستان بلکہ ملک بھر سے گوشت کی کمی جیسے مسئلے کو حل کیا جاسکتا ہے بلکہ ہم اس قابل ہیں کہ بیرون ممالک بھی گوشت کو ایکسپورٹ کرکے اپنے زرمبادلہ میں اضافہ کرسکتے ہیں انہوں نے کہا کہ ملک بھر کے لائیو اسٹاک کا 48.1فیصد بلوچستان پروڈویوس کرتا ہے اور لائیواسٹاک کے فروغ کے لیے مزید اقدامات اٹھائے جارہے ہیں ۔

انہوں نے کہا کہ قدرتی چراگاہیں خشک سالی کی وجہ سے ختم ہوتی جارہی ہیں جس کا منفی اثر یقیناًمالداری کے شعبہ پر پڑ رہا ہے انہوں نے مزید کہا کہ صوبائی حکومت نے گرین بلوچستان پیکج کے تحت صوبہ بھر میں15لاکھ سے زائد درخت اور پودے لگانے کی قومی مہم کا آغاز کیا ہے تاکہ صوبے کے ماحول میں تغیراتی تبدیلی لائی جاسکے انہوں نے کہا کہ ماحولیاتی تبدیلی کے لیے میڈیا کو بھی چاہیے کہ وہ عوام میں شعور و آگاہی پھیلائے اور اگر ایک گھر ایک پودا لگا یا جائے تو ہم ماحولیاتی آلودگی کو کنٹرول کرسکتے ہیں۔

وحدت نیوز (کوئٹہ) وزیراعلٰی بلوچستان میر عبدالقدوس بزنجو کی زیر صدارت صوبائی کابینہ کا اجلاس وزیراعلٰی ہاؤس کوئٹہ میں منعقد ہوا۔ اجلاس میں ایجنڈے میں شامل مختلف امور کا جائزہ لیتے ہوئے ان کی منظوری دی گئی۔ کابینہ نے صوبے کے دور دراز علاقوں میں استاتذہ کی کمی کو فوری طور پر دور کرنے کے لئے کنٹریکٹ بنیادوں پر استاتذہ کی تعیناتی کی منظوری دی اور صوبائی کابینہ نے متعلقہ محکمے کو ہدایت کی کہ بھرتی کے نظام میں میرٹ اور شفافیت کو مقدم رکھا جائے۔ کابینہ نے ہدایت کی کے ایم پی اے فنڈز سے تعمیر شدہ پرائمری سکولوں کے ایس این ایز کو بھی فوری طور پر منظور کیا جائے، تاکہ تعمیر ہونے کے فوراً بعد وہاں تدریسی عمل کو شروع کیا جاسکے۔ صوبائی کابینہ نے صوبے میں سرمایہ کاری کے فروغ کے لئے پہلی بار پبلک پرائیوٹ پارٹنرشپ ایکٹ کی منظوری بھی دی، جس سے صوبے میں مختلف شعبوں میں سرکاری اور نجی شراکت داری سے صوبے میں ترقی آئے گی۔ صوبائی کابینہ نے سوئی ٹاؤن میں پینے کا صاف پانی مہیا کرنے کے منصوبے کی منظوری دے دی، تاکہ سوئی ٹاؤن کے ایک لاکھ سے زائد آبادی کو پینے کا صاف پانی میسر ہو۔ کابینہ نے صوبے میں معذور افراد کو خود کفیل اور کار آمد شہری بنانے کے لئے خصوصی فنڈز قائم کرنے کا فیصلہ کیا۔ کابینہ نے شہری دفاع کو ڈویژنل سطح پر پھیلانے اور ان کے دفاتر قائم کرنے کی منظوری بھی دی۔

کابینہ کو متعلقہ سیکرٹری نے صوبے میں گندم کی موجودہ اسٹاک کے حوالے سے بریفنگ دی اور موجودہ اسٹاک کو فوری طو پر سبسڈی ریٹ پر فلور ملز کو دینے کی منظوری دے دی۔ کابینہ نے گوادر جوڈیشل کمپلیکس کی تعمیر کے پی سی ون کی منظوری دی۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعلٰی نے کہا کہ ہم نے پہلے ہی بہت وقت ضائع کیا ہے، ہمیں تیزی سے کام کرنا ہوگا۔ عوام کا پیسہ اور وسائل عوام پر خرچ ہونے چاہئیں۔ اس سلسلے میں تمام محکمے اپنی کارکردگی میں بہتری لاکر عوام کو تبدیلی کا احساس دلائیں۔ اجلاس میں مجلس وحدت مسلمین سے تعلق رکھنے والے صوبائی وزیر قانون وپارلیمانی امورآغا سید محمد رضا  سمیت  صوبائی وزراء میر سرفراز بگٹی، میر عاصم کرد گیلو، سردار سرفراز چاکر ڈومکی، شیخ جعفر خان مندوخیل، عبدالماجد ابڑو، طاہر محمود خان، میرعامر رند، حاجی غلام دستگیر بادینی، محمد آکبر آسکانی، منظور کاکڑ، پرنس احمد علی، میر ضیاء لانگو، ڈاکٹر رقیہ سعید ہاشمی، محترمہ راحت جمالی، وزیراعلٰی کے مشیر کہدہ بابر، اراکین اسمبلی، میر حمل کلمتی چیف سیکرٹری بلوچستان اورنگزیب حق، ایڈیشنل چیف سیکرٹری (منصوبہ بندی و ترقیات) نصیب اللہ بازئی، سیکرٹری خزانہ، سیکرٹری قانون، سیکرٹری مواصلات اور دیگر متعلقہ حکام شریک ہوئے۔

وحدت نیوز (کوئٹہ) مجلس وحدت مسلمین کے رہنما اور رکن بلوچستان اسمبلی سید محمد رضارضوی (آغارضا) بلوچستان کی نئی صوبائی کابینہ میں بحیثیت وزیر شامل ،گورنر بلوچستان محمد خان اچگزئی نے ایم ڈبلیوایم کے رکن بلوچستان اسمبلی آغا رضا اور دیگر نومنتخب اراکین کابینہ سے ان کے عہدے کا حلف لیا، تفصیلات کے مطابق مسلم لیگ ن کی حکومت کے خاتمے کے بعد مسلم لیگ ق سے  تعلق رکھنے والے  نو منتخب وزیر اعلیٰ بلوچستان عبدالقدوس بزنجو نے حلف اٹھاتے ہی اپنی چودہ رکنی صوبائی کابینہ کے ناموں کا اعلان کردیا  جس میں پانچ مشیر بھی شامل ہیں، جن کے قلمدانوں کا اعلان بعد میں کیا جائے گا، بلوچستان کی نئی صوبائی کابینہ میں ایم ڈبلیوایم کے رکن اسمبلی سید محمد رضا سمیت  طاہر محمود خان،سردار سرفراز خان ڈومکی،نواب چنگیز خان مری ، میر سرفراز احمد بگٹی، راحت جمالی، عبدالمجید ابڑو ، میر عاصم کرد گیلو، عامر رند، گلام دستگیر بادینی، محمد اکبر اسکانی، شیخ جعفر خان مندوخیل،منظور احمد کاکڑ اور  پرنس احمد علی شامل ہیں ، وزیر اعلیٰ سمیت تمام اراکین کابینہ کی تقریب حلف برداری گورنر ہاوس کوئٹہ میں منعقد ہوئی ۔

واضح رہے کہ گذشتہ دنوں ایم ڈبلیوایم کے رکن اسمبلی سید محمد رضا اور مسلم لیگ ق کے رہنما اور نومنتخب وزیر اعلیٰ نےمسلم لیگ ن سے تعلق رکھنے والے  سابق وزیر اعلیٰ بلوچستان نواب ثناء اللہ زہری کے خلاف تحریک عدم اعتماد ایوان میں پیش کی تھی جسے اراکین نے بھاری اکثریت سے منظور کرلیا تھا اور آج جمہوری تسلسل کو آگے بڑھاتے ہوئے اراکین اسمبلی نے کثرت رائے سے مسلم لیگ ق سے تعلق رکھنے والے عبد القدوس بزنجو کو نیاء قائد ایوان منتخب کیا اور بعد ازاں انہوں نے اپنی چودہ رکنی صوبائی کابینہ کا اعلان جس نے اپنے عہدوں کا حلف بھی اٹھا لیا ہے، جبکہ مجلس وحدت مسلمین کے رکن اسمبلی سید محمد رضا بھی مسلم لیگ ق اور دیگر جماعتوں کی اتحادی حکومت میں بحیثیت وزیر شامل ہو چکے ہیں جن کے قلمدان کا اعلان جلد متوقع ہے ۔

وحدت نیوز (کوئٹہ) ایم ڈبلیوایم کے ممبر بلوچستان اسمبلی آغا سید محمد رضا نے کہا کہ میں شہداء کے خانوادگان کو سلام پیش کرتا ہوں، یہ وہ مقتل ہے جہاں ہم نے اپنے شہداء کے ٹکڑوں کو اُٹھایا ہے، یہی وہ مقام جہاں پوری قوم نے سخت سردی میں استقامت کا مظاہرہ کیا، آج کا دن شہداء کے لہو سے تجدید عہد کا دن ہے، آج تک ہمارے قاتلوں کو گرفتار نہیں کیا گیا، پورے ملک میں ہم نے فوجیوں پر حملے نہیں کیے، ہم نے فوجیوں کے سروں کے ساتھ فٹبال نہیں کھیلے، ان خیالات کا اظہار انہوں نے مجلس وحدت مسلمین کوئٹہ ڈویژن کے زیر اہتمام شہدائے سانحہ علمدار روڈ کی پانچویں برسی کے موقع پر منعقدہ  ’’یوم استقامت و یکجہتی مظلومین ‘‘ کانفرنس کے شرکاءسے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے مزیدکہاکہ  آج اللہ نے آپ کے نمائندے کو عزت بخشی ہے اور ہم نے ایک کرپٹ وزیراعلی کو مستعفی ہونے پر مجبور کردیا، آج کے بعد اگر کوئی وزیراعلی کرپشن کرے گا تو اس کا علاج بھی یہی ہوگا، میری نواب ثناء اللہ سے کوئی ذاتی لڑائی نہیں تھی، میں اپنی قوم کے لیے میدان میں کھڑا ہوں، مجھے خریدنے کی بارہا کوششیں کی گئیں لیکن میں بکا نہیں جھکا نہیں، میں نے آج تک نہ وزارت کا تقاضا کیا ہے نہ مشیر کا تقاضا کیا ہے، میں نے اپنے حلقے میں یونیورسٹی کا تقاضا کیا ہے، اپنے بیروزگار جوانوں کے لیے نوکریوں کا تقاضا کیا، ہم کوئٹہ کی آبادی کا پانچواں حصہ ہیں ، ہمارا حق کیوں پامال کیا جارہا ہے، میں نے اپنی قوم کا ساتھ دینے کا وعدہ کیا تھا اور آج بھی اپنے وعدے پر قائم ہوں، میں آج جس مقام پر ہوں وہ سب آپ کی بدولت ہے، میں اسمبلی میں اور پاکستان میں آپ کا نمائندہ ہوں، اگر نوازشریف اور نواب ثناء اللہ کا مواخذہ ہوسکتا ہے تو یہاں کے چوروں کا احتساب بھی ہوگا، ہم پوری قوم کے سامنے انہیں بے نقاب کریں گے، اس حلقے کے فنڈز بلوچستان حکومت کے پاس پڑے ہوئے ہیں، انشاء اللہ مستقبل میں یہ پراجیکٹ مکمل ہوں گے، شہداء کے خانوادگان کے لیے ہاؤسنگ سکیم، نوجوانوں کے لیے یونیورسٹی کا قیام اولین ترجیح ہے۔

وحدت نیوز (کوئٹہ) قائم مقام اسپیکر بلوچستان اسمبلی میرعبدالقدوس بزنجو کی زیر صدارت قائمہ کمیٹیوں کے چیئرمینز کے انتخاب کے لیے اجلاس منعقد ہوا. اجلاس میں مختلف قائمہ کمیٹیوں کے چیئرمینز کا انتخاب کیا گیا. جن میں مجلس وحدت مسلمین کے رکن بلوچستان اسمبلی سید محمد رضا سرکاری مواعید ( گورنمنٹ انشورنس )،عبدالمجید خان اچکزئی پبلک اکاونٹس کمیٹی ,  , حاجی محمد اسلام منصوبہ بندی و ترقیات , سید لیاقت علی آغا داخلہ , قبائلی امور , جیل خانہ جات , صوبائی ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی , محترمہ کشور احمد کھیل و سیاحت , آثار قدیمہ , ڈاکٹر رقیہ ہاشمی صحت و بہبود آبادی , سردار محمد ناصر صنعت و حرفت و معدنی ترقی و افرادی قوت کے قائمہ کمیٹیوں کے چیئرمین منتخب ہوئے،بعد ازاں اسپیکر میر عبدالقدوس بزنجو نے چیئرمین مجالس کو مبارکباد دیتے ہوئے انہیں گاڑیوں کی چابیاں بھی سپرد کیں. اور امید ظاہر کی کہ منتخب چیئرمین اپنے فرائض منصبی احسن طریقے سے سر انجام دیں گے.

وحدت نیوز(کوئٹہ) قرآن مجید کے اوراق کی بے حرمتی کے جھوٹے پروپگنڈے کی پر زور مذمت کرتے ہیں ،  جس میں بعض گروہوں کی جانب سے مقامی اخبارات میں چھپنے والے بیانات جن کے مطابق ہزار گنجی میں انار کے کنٹینر سے قرآن مجید کی آیات پر مشتمل اوراق کا برآمد ہونا، شہر سے قلندر مکان پر واقع معاویہ اسٹریٹ سے کالعدم تنظیم کے تین دہشتگردوں کی گرفتاری، معاویہ اسٹریٹ کی بجائے اخبارات میں انتہائی پرامن علاقے مری آباد کا نام چھپنا اور بھاری مقدار میں اسلحہ و بارود کی برآمدگی۔ لیکن کوئٹہ شہر میں آج دوپہر ایک مذہبی شرپسند تنظیم کی جانب سے کوئٹہ کے امن کو تہہ و بالا کرنے کی سازش کے حوالے سے ہے۔ان خیالات کا اظہار مجلس وحدت مسلمین کوئٹہ ڈویژن کے سیکریٹری جنرل سید عباس موسوی نے صوبائی وحدت ہائوس کو ئٹہ میں پریس کانفرنس کر تے ہو ئے کیا اس موقع پر رکن صوبائی اسمبلی آغا سید محمد رضااور نومنتخب کونسلر رجب علی بھی موجود تھے ۔

 

ان کا کہنا تھا کہ عینی شاہدین کے مطابق آج دوپہر ساڑھے بارہ بجے تکفیری گروہ کا جلوس شہر میں مختلف مقامات سے اشتعال انگیز نعرے لگاتا ہوا لیاقت بازار میں موجود جیولرز اور دیگر دکانوں پر حملہ آور ہوا۔ وہاں موجود سکیورٹی گارڈز کو زد و کوب کیا اور جیولرز کی دکان میں لوٹ مار کی نیت سے گھسنے کی کوشش کی۔ اس دوران جیولرز اور دیگر دکانوں کے ملازمین کو خوف کے باعث دکانوں کے اندر محبوس ہونا پڑا۔ جلوس لیاقت بازار سے گزرتا ہوا سٹی تھانے کے سامنے سے ہوتا ہوا جب میزان چوک پر پہنچا، تو وہاں موجود سیاسی جماعتوں کے جھنڈوں کو اتار کر جلایا گیا اور اُن کی بے حرمتی کی گئی۔ نیز وہاں موجود دہشت گردی کے واقعات میں شہید ہونے والوں کی تصاویر کو بھی اتار کر پاؤں تلے روندا گیا۔ مشتعل مظاہرین کو ڈیڑھ سے دو گھنٹوں کے دوران شہر میں کوئی روکنے والا نہ تھا۔ لیاقت بازار، عبدالستار، قندھاری بازار، میزان چوک اور علمدار روڈ پر واقع دکانداروں کی جانوں کو اِن مشتعل مظاہرین سے جان کے خطرات لاحق تھے۔ پولیس اور ایف سی کی طرف سے اِن شرپسند عناصر کو کھلی چھوٹ دی گئی تھی، جسکی وجہ سے یہ لوگ شہر میں ہر جگہ دندناتے پھر رہے تھے۔

 

انہوں نے کہا کہ شرپسند عناصر کی طرف سے نکالے جانے والا آج کا یہ جلوس کہاں سے برآمد ہوا؟ کس کی اجازت سے اس جلوس کو شہر میں داخل ہونے اور شہر کے امن کو تہہ و بالا کرنے کی اجازت دی گئی؟ کس کی اجازت سے انہیں اس بات کی اجازت دی گئی کہ جلوس کے شرکاء شہر میں موجود تاجروں کو ہراساں کریں اور دکانوں پر لوٹ مار کی نیت سے حملہ آور ہوں؟ ڈیڑھ سے دو گھنٹوں کے دوران اِن شرپسند عناصر کے خلاف کیوں کوئی بروقت کارروائی کرکے کوئی گرفتاری عمل میں نہیں لائی گئی؟ کیسے ان مشتعل شرپسندوں کو اس بات کی اجازت دی گئی کہ یہ لوگ علمدار روڈ کا رُخ کریں اور وہاں پہنچ کر اشتعال انگیز نعرہ بازی کریں؟ کیسے ممکن ہے کہ پولیس اور ایف سی کی موجودگی میں شرپسند عناصر شہر میں داخل ہوتے ہیں، ہوائی فائرنگ کرکے شہر میں خوف و ہراس پھیلاتے ہیں، دکانوں کو بند کرواتے ہیں اور شہر میں آباد دیگر اقوام کے عقائد کے خلاف شرانگیز نعرہ بازی کرتے ہیں۔

 

 گذشتہ چند دہائیوں سے پاکستان خصوصاً کوئٹہ شہر میں ایک تکفیری گروہ مختلف حیلوں اور بہانوں سے شہر میں موجود امن و امان اور اتحاد بین المسلمین کی فضا کو پارہ پارہ کرنے کی سازش میں مصروف ہے۔ پہلے شیعہ اور سنی کو دائرہ اسلام سے خارج قرار دے کر ان کے خلاف دہشت گردانہ کارروائی کی گئی۔ پھر شیعہ قوم کے خلاف صحابہ کرام رضی اللہ تعالٰی عنہم کے پاک نام کو استعمال کرکے کراچی اور راولپنڈی میں فرقہ وارانہ آگ لگانے کی کوشش کی گئی۔ لیکن اللہ کے فضل و کرم سے اور سنی شیعہ عوام کے دانشمندانہ اقدامات کی وجہ سے اس تکفیری گروہ کو تاحال ناکامی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ مسلسل ناکامی کے بعد اب وہی تکفیری گروہ خاص مذہب کا نام استعمال کرکے کوئٹہ شہر میں فرقہ وارانہ فسادات کرانے کی سازشوں میں مصروف ہے اور آج کا واقعہ ان سازشوں کی ایک کڑی ہے۔ اس واقعہ کے نتیجے میں ہمارے درجنوں افراد لاپتہ ہیں اور درجنوں موٹر سائیکلوں اور دکانوں کو آگ لگا دی گئی۔ تاہم دکانوں کی آگ پر وہاں موجود شیعہ سنی تاجر برادری کی کوششوں سے بروقت قابو پالیا گیا۔

 

مذکورہ تکفیری گروہ حالیہ قرآنی اوراق کے واقعہ کا سہارا لیتے ہوئے ایک بار پھر مسلمانوں کے جذبات کو ابھارنے کی سازش میں مصروف ہے اور پورے ملک میں فرقہ وارانہ فسادات پھیلانے کی مذموم کوشش کر رہا ہے۔ وطن عزیز پاکستان کے لئے خصوصاً کوئٹہ میں اس تکفیری گروہ کی سازشیں تباہ کُن ہیں اور پاکستان کے استحکام کے لئے روز بروز خطرے اور بدنامی کا باعث بن رہی ہیں۔ گذشتہ روز قلندر مکان کی معاویہ اسٹریٹ سے تین دہشت گردوں کو بھاری اسلحہ و بارود سمیت گرفتار کیا گیا جبکہ اس گرفتاری کی جگہ اخبارات میں مری آباد کا نام دے کر پرامن ہزارہ شیعہ قوم کو بدنام کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔ جس کی ہم پر زور مذمت کرتے ہیں۔ ہم گذشتہ روز کنٹینر سے برآمد ہونے والے اخباری اوراق جن پر قرآنی آیات اگر درج تھیں، تو ہم ایسے واقعات کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہیں۔

 

آخر میں ہم حکومت سے درج ذیل مطالبات کرتے ہیں:

1۔ کالعدم تنظیموں کے اخباری بیانات اور جلسے جلوسوں پر پابندی عائد کی جائے۔
2۔ آج کے جلوس کے ذمہ داران کے خلاف کریک ڈاؤن کرکے انہیں فوری گرفتار کرکے قرار واقعی سزا دی جائے۔
3۔ ذمہ داری سے غفلت برتنے پر پولیس اور ایف سی کے اہلکاروں کے خلاف کارروائی کی جائے۔
4۔ کوئٹہ شہر میں تاجر براداری نیز تعلیمی اداروں اور دفاتر میں کام کرنے والے ملازمین کی حفاظت کو یقینی بنایا جائے۔

Page 1 of 2

مجلس وحدت مسلمین پاکستان

مجلس وحدت مسلمین پاکستان ایک سیاسی و مذہبی جماعت ہے جسکا اولین مقصد دین کا احیاء اور مملکت خدادادِ پاکستان کی سالمیت اور استحکام کے لیے عملی کوشش کرنا ہے، اسلامی حکومت کے قیام کے لیے عملی جدوجہد، مختلف ادیان، مذاہب و مسالک کے مابین روابط اور ہم آہنگی کا فروغ، تعلیمات ِقرآن اور محمد وآل محمدعلیہم السلام کی روشنی میں امام حسین علیہ السلام کے ذکر و افکارکا فروغ اوراس کاتحفظ اورامر با لمعروف اور نہی عن المنکرکا احیاء ہمارا نصب العین ہے 


MWM Pakistan Flag

We use cookies to improve our website. Cookies used for the essential operation of this site have already been set. For more information visit our Cookie policy. I accept cookies from this site. Agree