وحدت نیوز(سکردو) ممتاز عالم دین اور سیکریٹری جنرل مجلس وحدت مسلمین گلگت بلتستان آغا سید علی رضوی نے اپنے ایک صوتی پیغام میں قومی حقوق کی حصول کیلئے صبر اور استقامت کے ساتھ جدوجہد کرنے والوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے گلگت بلتستان کے مظلوم عوام کو اب سیاسی ،مذہبی، مسلکی اور علاقائی تعصبات سے بلاتر ہوکر ایک مظلوم قومی کی حیثیت سے اپنے غیر آئینی ٹیکس کے نفاذ کے خلاف اور  جائز حقوق کیلئے بھرپور انداز میں آواز اُٹھانے کی ضرورت ہے۔

اُنکا کہنا تھا حالیہ مسئلہ چونکہ قومی ہے لہذا موجودہ حکومت کے ممبران کو بھی چاہئے کہ اس تحریک میں عوام کے ساتھ شامل ہوجائیں کیونکہ چاہئے قانون ساز اسمبلی کا ممبر ہو یا رکن جی بی کونسل اس مسند نے مختصر وقت میں ختم ہوجانا ہے اور موجودہ حکمرانوں کو بھی واپس عوام میں ہی جانا ہے لہذا گلگت بلتستان میں ہونے والے مظالم کے پیش نظر ان افراد کو بھی چاہئے کہ وہ عوام کے ساتھ مل جائیں اور اپنے حقوق کیلئے ملکر جدوجہد کریں۔ اُنکا یہ بھی کہنا تھا کہ قوم کو یکجا ہونے کیلئے انتہائی ضروری ہے کہ عوام تمام قسم کے تعصبات کو دفن کرکے قومی ایشو پر ایک ہوجائیں تاکہ دشمن کو موقع نہ ملے۔

 اُنہوں نے انجمن تاجران گلگت بلتستان اور عوامی ایکشن کمیٹی کے ساتھ مکمل طور پر اظہار یکجہتی کرتے ہوئے اُنکی استقامت پر زبردست خراج تحسین پیش کیا ہے اور یہ بھی خدشہ ظاہر کیا ہے کہ اس تحریک کو ثبوتاز کرنے کیلئے جو قوتیں اس وقت سرگرم ہے یقیناًاُنکی طرف سے دباو بھی بڑھایا جائے گا ڈرایا دھمکایا جائے گا لہذا قومی یکجہتی کے ساتھ عوامی مسائل اور قومی حقوق کی حصول کیلئے اپنے صفوں میں صبر استقامت کے ساتھ قیام کرنے کی ضرورت ہے۔

وحدت نیوز (کربلا) مجلس وحدت مسلمین پاکستان گلگت بلتستان کے سیکرٹری جنرل علامہ آغا علی رضوی نے کربلا معلٰی سے اپنے صوتی پیغام میں کہا ہے کہ موجودہ حکومت کے ظلم حد سے بڑھ گیا ہے، لوٹ کھسوٹ اور سیاسی انتقام کے بعد ٹیکسز کی سونامی حقوق سے محروم عوام پر بہت بڑا ظلم ہے۔ انہوں نے کہا کہ کربلا معلی اور نجف اشرف میں جی بی کے مظلوم عوام کے حق میں اور انہیں ظالم حکومتوں سے نجات کے لیے خصوصی دعا کی ہے۔ خطے کے عوام کا غی رآئینی ٹیکس کے خلاف سڑکوں پر نکلنا لائق تحسین ہے۔ انجمن تاجران اور عوامی ایکشن کمیٹی کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں جنہوں نے اس ظلم کے خلاف قیام کا اعلان کیا اور میدان میں ڈٹ گئے۔ حکومت جی بی کے عوام کو تقسیم کرنے کی کوشش کرے گی لیکن امید ہے کہ باشعور اور غیرت مند عوام اتحاد کا مظاہرہ کرتے ہوئے حکومت کے خواب کو چکنا چور کریں گے۔انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ نون کی حکومت کے دن گنے جا چکے ہیں۔ حکمرانوں کو چاہیے کہ ہوش کے ناخن لیں اور عوام کے مطالبے کو تسلیم کر کے ثابت کریں کہ وہ اس خطے کے باسی ہیں۔ وفاقی حکومت کے غرور میں عوام پر ظلم کے پہاڑ توڑنے والی حکومت کو معلوم ہونی چاہیے کہ وفاقی حکومت خود عبرت بننے والی ہے۔ اگر صوبائی حکومت ٹیکس کے فیصلے کو واپس نہ لے تو وہ بھی دوسروں کے لیے عبرت بن جائے گی۔ آغا علی رضوی نے کہا کہ تمام جماعتیں اور تنظیمیں اپنے اندر اتحاد قائم رکھتے ہوئے صبر اور ہمت سے کام لیتے ہوئے اس تحریک کو منطقی انجام تک پہنچائیں۔ میں بھی اپنے سفر کو مختصر کر کے میدان میں حاضر رہنے والے اور ظالموں کے خلاف قیام کرنے والے غیرت مندوں کی صفوں میں پہنچ کر اس تحریک کو مزید تیز کریں گے۔ انہوں نے مزید کہا کہ جی بی کے عوام بلخصوص مجلس وحدت مسلمین کے تمام کارکنان، خیرخواہان اور رہنماء ٹیکس کے خلاف جاری تحریک میں صف اول کا کردار ادا کریں اور کسی قسم کی قربانی سے دریغ نہ کریں۔ غیر قانونی ٹیکس کے خلاف قیام اخلاقی ذمہ داری ہے۔

وحدت نیوز (گلگت) کراچی میں مجاہد عالم دین علامہ حسن ظفر نقوی کی ملت جعفریہ کے لاپتہ افراد کی بازیابی کی خاطر خود کو احتجاجا گرفتاری پیش کرنے پر خراج تحسین پیش کرتے ہیں۔ علامہ حسن ظفر نقوی کا یہ اقدام ملت کے مظلوم طبقے کیساتھ ہمدردی اور حقیقی درد و اخلاص کی علامت ہے۔ مجلس وحدت مسلمین گلگت بلتستان سیکرٹری جنرل علامہ سید علی رضوی نے کہا ہے کہ ملت تشیع کے سینکڑوں لاپتہ افراد کی عدم بازیابی سے ان کے اہل خانہ شدید اضطراب کا شکار ہیں۔ جبری طور اغوا کرکے لاپتہ کرنا اور اہل خانہ کو ان لاپتہ افراد کے متعلق کوئی معلومات نہ دینا عدل و انصاف کے منافی اقدام ہے اور انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزی ہے۔ بعض اداروں کے ا ہل کار اپنے اختیارات کا ناجائز استعمال کررہے ہیں اور اگر اغوا کئے گئے ان افراد سے کوئی جرم سرزد ہوا ہے تو عدالتوں میں پیش کیا جائے۔انہوں نے کہا کہ ایک عرصے سے ملک میں لاقانونیت کا راج ہے اور حکومتوں کو صرف اپنے اقتدار کو طول دینے کے علاوہ مظلوم کی دادرسی سے کوئی سروکار نہیں۔ایک بزرگ عالم دین کا گمشدہ افراد کی بازیابی کیلئے خود کو گرفتاری کیلئے پیش کرنے کا عمل حکومت بدترین کارکردگی ثبوت ہے۔ملت تشیع کے بے گناہ افراد کو بازیاب نہ کرایا گیا تو اس تحریک کو پورے ملک میں پھیلادیا جائیگا۔انہوں نے کہا کہ مجاہد عالم دین علامہ حسن ظفر نقوی میدان عمل کے سپاہی ہیں ،ملت کے گمشدہ افراد کی بازیابی کیلئے شروع کیجانے والی تحریک کی مکمل حمایت کرتے ہیں اور یہ تحریک اس وقت تک جاری رہے گی جب تک گمشدہ نوجوانوں کو بازیاب نہیں کرایا جاتا۔انہوں نے مقتدر حلقوںسے مطالبہ کیا ہے وہ اس ظلم وناانصافی کا فوری ازالہ کریں اور لاپتہ نوجوانوں کی بازیابی کو یقینی بناکر ان کے اہل خانہ کو ذہنی کرب سے نجات دلانے میں اپنا کردار ادا کریں۔

وحدت نیوز(گلگت) کربلا ظلم کے خلاف ایک ابدی جنگ ہے اور عاشورہ باطل پر حق کی فتح کا دن ہے۔امام عالی مقام نے حق اور باطل کے درمیان ایک ایسی لکیر کھینچ دی ہے کہ قیامت تک آنیوالی والی نسلیں اس راہ پر چلتے ہوئے ابدی سعادت سے سرفراز ہوسکتی ہیں۔کربلا والوں کی یاد دلوں میں ایک ایسی حرارت پیدا کرتی ہے جسے زمانے کے تندوتیز طوفان بھی ٹھنڈا کرنے کی صلاحیت نہیں رکھتے۔

مجلس وحدت مسلمین گلگت بلتستان کے ترجمان محمد الیاس صدیقی نے عاشورا کے حوالے سے اپنے پیغام میں کہاہے کہ آج کے دور میں عاشورا کی اہمیت پہلے سے کہیںزیادہ بڑھ گئی ہے۔ملک کو امن وآشتی کی طرف لیجانے کیلئے کربلا کے پیغام کو عام کرنے ضرورت ہے اس لئے کہ کربلا کسی ایک مکتب فکر کیلئے نہیں بلکہ بنی نوع انسان کیلئے کربلا ایک مکمل ضابطہ حیات ہے۔انہوں نے کہا کہ کربلا کو مشعل راہ بناکر ہی ملک سے فتنوںکا قلع قمع کیا جاسکتا ہے اور آج دشمنان اسلام امریکہ ،اسرائیل اور ان کے حواریوں نے یزیدی فکر کو پروان چڑھاکر دنیا کے کونے کونے میں کشت وخون کی ہولی کھیلی ہے جس کا مقابلہ صرف اور صرف کربلائی فکر سے ہی ممکن ہے۔

انہوں نے کہا کہ ملک عزیز کو آج جس قدر تکفیری فکر سے خطرہ ہے کسی دشمن ملک سے اتنا خطرہ نہیں جہاں ہمارے سپہ سالار اور جوان ملک کے سرحدات کی حفاظت پر اپنی توانائیاں صرف کررہے ہیں وہی پر قوم کے دانشور اور سیاستدانوں کو چاہئے کہ وہ اس یزیدی فکر کی بیخ کنی کیلئے جامع پالیسیاں مرتب کریں اور تاکہ ملک وقوم کا مستقبل روشن ہو۔انہوں نے کہا کہ عاشوراظالموں کے ظلم کے خلاف صدائے احتجاج ہے اور عصر حاضر میں سنی شیعہ ملکر وقت کے یزیدی لشکر کے ارادوں کو ملیامیٹ کرسکتے ہیں۔یزید ایک شخص کا نام نہیں بلکہ ایک فکر کا نام ہے اور ہماری جنگ اسی یزیدی فکر سے ہے۔ان باطل نظریات کا مقابلہ وہی کرسکتے ہیں جو حق شناس ہوں اور دشمن کی سازشوں کا بخوبی علم رکھتے ہوں۔انہوں نے کہا کہ باطل قوتوں کیلئے میدان خالی رکھنا بھی ظلم کے زمرے میں آتا ہے اور تمام مسلمان ہر سال نواسہ رسول حضرت امام حسین علیہ السلام کے ذکر سے باطل قوتوں کا مردانہ وار مقابلہ کرنے کیلئے قوت و طاقت لیتے ہیں۔

وحدت نیوز(سکردو) عاشورائے محرم کے موقع پر امامیہ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن بلتستان ڈویژن کے زیر اہتمام منعقدہ مجلس عزا سے خطاب کرتے ہوئے مجلس وحدت مسلمین پاکستان گلگت بلتستان کے سیکرٹری جنرل علامہ آغا علی رضوی نے کہا ہے کہ محرم تلوار پر خون کی فتح کا مہینہ ہے۔ محرم الحرام مظلومین جہاں کی طاقت کا سرچشمہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ عراق و شام میں داعش اور دہشتگردوں کی عبرتناک شکست دراصل کربلائی عزم رکھنے والے جوانوں کی ہمت و حوصلے کا نتیجہ ہے۔ پاکستان میں بھی دہشتگردوں کے خلاف آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر بات کرنے کی ہمت کرسکتا ہے اور اپنا واضح موقوف رکھتا ہے تو وہ مکتب عاشورا سے تربیت پانے والے ہیں۔ ہم ہی پاکستان کی نظریاتی سرحدوں کے امین اور محافظ ہیں۔ اپنے خطاب میں انہوں نے کہا کہ جی بی کی صوبائی حکومت بدمعاشی پر اتری ہوئی ہے اور یزیدی ہتھکنڈے استعمال کر رہی ہے۔ پرامن علماء کے خلاف گلگت میں داخلے پر پابندی اور شیخ مرزا علی سمیت متعدد بے گناہوں کو شیڈول فور میں ڈالنا انکی ذہنیت کی عکاسی کرتا ہے۔ آغا علی رضوی نے کہا کہ گلگت میں شیخ نیئر مصطفوی کو کئی ماہ سے حراست میں لے رکھا ہے، انکا جرم یمن کے مظلومین کی حمایت کرنا ہے۔ صوبائی حکومت مکمل طور جانبدار اور ظالم و جابر حکومت بن چکی ہے۔ بلتستان میں زمینوں پر قبضے کی کوشش ہو رہی ہے۔ ہم واضح کردینا چاہتے ہیں کہ ہم بلتستان کی زمین پر کسی کو ناجائز قبضہ کرنے نہیں دیں گے۔

اپنے خطاب میں انہوں نے مزید کہا کہ قانون خالصہ سرکار کی آڑ میں حکومت یہاں کی زمینوں کو اپنے من پسند افراد میں بانٹنا چاہتی ہے۔ خالصہ سرکار کے قانون کی آڑ میں اسماعیلی جماعت خانہ کے لیے مختص زمین اور عوام کی ملکیتی اراضی پر قبضے کی کوشش ظلم و انصافی ہے اور ہم کسی صورت خاموش نہیں رہیں گے۔ بلتستان کے علماء ہشیاری کا مظاہرہ کرتے ہوئے حفیظ حکومت کی خطہ دشمن پالیسی کے خلاف کھڑے ہو جائیں۔ حفیظ الرحمان کو وزارت علماء کی وجہ سے ملی تھی لیکن اب وہ حد سے آگے نکل چکے ہیں، انکو لگام دینے کی ضرورت ہے۔ گلگت بلتستان میں اگر امن قائم ہے تو یہاں کے عوام اور علماء کی وجہ سے ہے۔ حکومت اس غلط فہمی میں نہ رہے کہ انہوں نے امن قائم رکھا ہے۔ اگر ایسا ہے تو ملک کے دیگر خطوں میں امن قائم کرکے دکھائیں۔ حفیظ کی حکومت نواز شریف سے سبق لیتے ہوئے اپنا قبلہ درست کرے۔ سربراہ ایم ڈبلیو ایم جی بی نے کہا کہ فوج اور عدلیہ سے اپیل کرتے ہیں کہ انڈیا سے مراسم رکھنے والی طاقتوں اور مودی کے تجارتی شراکت داروں کو عبرتناک سزا دیں۔ اسی طرح ہم سکیورٹی اداروں سے بھی جی بی میں مطالبہ کرتے ہیں کہ ایکشن پلان کی حرمت کو پائمال نہ ہونے دیں اور اسے کلعدم جماعتوں سے رابطہ رکھنے، انکے ایجنڈے کو آگے بڑھانے والوں کے استعمال نہ ہونے دیں۔

وحدت نیوز(سکردو) مجلس وحدت مسلمین پاکستان گلگت  بلتستان کے سیکرٹری جنرل علامہ آغا علی رضوی نے ایم ڈبلیو ایم اور اسلامی تحریک کے مرکزی رہنماوں کے گلگت داخلے پر پابندی عائد کرنے پر شدید برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ گلگت انتظامیہ مکمل طور پر جانبدار ہو چکی ہے اور دانستہ طور پر خطے کے امن کو خراب کرنے پر تلی ہوئی ہے۔ گلگت انتظامیہ کی طرف سے پرامن علماء کے داخلے پر عائد پابندی کو یکسر مستر کرتے ہیں اور اسے بدترین ریاستی جبر سے تعبیر کرتے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ گلگت کی انتظامیہ اور سکیورٹی فراہم کرنے والے ادارے اس خام خیالی میں نہ رہیں کہ جی بی میں امن انکی وجہ سے قائم ہیں ،اگر ایسا ہے تو پورے پاکستان میں امن قائم کرنے میں سکیورٹی ادارے کیوں ناکام ہیں۔ یہاں کا امن یہاں کے پرامن عوام اور علماء کی وجہ سے قائم ہے۔ آج بدقسمتی سے گلگت  بلتستان میں ایسے نااہل اور غیرمنطقی افسران سکیورٹی اداروں میں موجود ہیں جنکو سکیورٹی کے اصولوں کی الف با سے بھی واقفیت نہیں اور یہی افسران سیاسی جماعتوں کے ہاتھوں کھلونا بنا ہوا ہے۔ جو شخصیات پورے پاکستان میں دہشتگردی کے خلاف خط مقدم پر سرگرم عمل ہیں ان پر پابندی دہشتگردی کو خوش کرنے کے عمل کے علاوہ کیا ہوسکتا ہے۔ ہم واضح کردینا چاہتے ہیں کہ پرامن علماء کی گلگت آمد کو دنیا کی کوئی طاقت نہیں روک سکتی۔ جی بی کسی کی جاگیر ہے اور نہ کسی کو حق مہر میں ملا ہے۔ یہ خطہ یہاں کے عوام کا گھر ہے یہاں کس نے آنا ہے اور کس نے نہیں آنا وہ یہاں پر زبردستی افسری کرنے والے طے نہیں کریں گے بلکہ یہاں کے عوام کو علماء طے کریں گے۔ آغا علی رضوی نے کہا کہ محرم الحرام میں دیامر کی سرحد سے لے کر سیاچن کی سرحد تک ہر مسلک کے افراد اور ہر شہری احترام کرتے ہیں اور سب امام عالی مقام کے عقیدت مند ہے انتظامیہ یہاں کے کسی بھی طبقے کو مشکوک کرکے امن کو خراب کرنے کی کوشش نہ کرے۔انہوں نے مزید کہا کہ گلگت بلتستان میں داخلے پر پابندی عائد کرنی ہے یہاں پر آنے والی دہشتگرد جماعتوں کے سہولت کاروں پر، امریکہ و اسرائیل کے ایجنٹوں ، یہاں کے وسائل کو لوٹنے والوں پر، پاکستان کو عدم استحکام کی طرف دھکیلنے والوں پر اور ملکی خرانے کو اپنے خاندان پر لوٹنے والوں پر پابندی عائد کرے۔ گلگت انتظامیہ ہر معاملے میں منفی کردار ادا کر رہا ہے اور حفیظ کے اشارے پر ناچتی ہے جو کہ افسوسناک ہے۔ جی بی دہشتگردوں کو دعوت دینے کی باتیں کرنے والوں کے اشارے پر چلنے والی اس متعصب اور ظالم انتظامیہ کے خلاف بھرپور احتجاج کیا جائے گا۔ سکیورٹی اداروں سے مخاطب ہوتے انہوں نے کہا کہ ملکی نظریاتی اساس کے مدافع شخصیات کے داخلے پر پابندی عائد کرنے میں سکیورٹی ادارے بھی شامل ہیں تو انکی بصیرت پر فاتحہ پڑھ لینا ضروری ہے۔ آج بھی اگر سکیورٹی اداروں بلخصوص حساس اداروں کو دہشتگردوں اور ملک کے مدافع کے بارے میں پہچان نہ ہو تو یہ عمل واضح ہوتا ہے کہ سکیورٹی اداروں میں بھی کس طرح کے افراد بیٹھے ہیں جو کہ افسوسناک عمل ہے۔

Page 1 of 6

مجلس وحدت مسلمین پاکستان

مجلس وحدت مسلمین پاکستان ایک سیاسی و مذہبی جماعت ہے جسکا اولین مقصد دین کا احیاء اور مملکت خدادادِ پاکستان کی سالمیت اور استحکام کے لیے عملی کوشش کرنا ہے، اسلامی حکومت کے قیام کے لیے عملی جدوجہد، مختلف ادیان، مذاہب و مسالک کے مابین روابط اور ہم آہنگی کا فروغ، تعلیمات ِقرآن اور محمد وآل محمدعلیہم السلام کی روشنی میں امام حسین علیہ السلام کے ذکر و افکارکا فروغ اوراس کاتحفظ اورامر با لمعروف اور نہی عن المنکرکا احیاء ہمارا نصب العین ہے 


MWM Pakistan Flag

We use cookies to improve our website. Cookies used for the essential operation of this site have already been set. For more information visit our Cookie policy. I accept cookies from this site. Agree