وحدت نیوز(لاہور) مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی سیکریٹری جنرل علامہ راجہ ناصرعباس جعفری اور چیئرمین سنی اتحاد کونسل صاحبزادہ حامد رضانے پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ ڈاکٹرعلامہ طاہر القادری سے ان کی رہائش گاہ پر اہم ملاقات کی ہے، اس موقع پر ایم ڈبلیوایم کے مرکزی ڈپٹی سیکریٹری جنرل ناصرعباس شیرازی، مرکزی پولیٹیکل سیکریٹری اسدعباس نقوی، آصف رضا ایڈووکیٹ اور دیگر بھی موجود تھے، رہنماوں کے درمیان سانحہ ماڈل ٹاون اور جسٹس باقر نجفی کمیشن رپورٹ کے حوالے سے پاکستان عوامی تحریک کے زیر اہتمام آج ہونے والی آل پارٹیز کانفرنس کے حوالے سے تفصیلی بات چیت اور مشاورت بھی ہوئی،ڈاکٹر طاہر القادری نے رہنماوں کی آمد پر شکریہ اداکیا۔

وحدت نیوز (شگر) مجلس وحدت مسلمین ضلع شگر گلگت بلتستان کی جانب سے شگرکے مختلف سیاسی وسماجی امور اور انکے حل کیلئے آل پارٹیز کانفرنس کا انعقاد کیا گیا، جس میں شگر میں موجود تمام سیاسی جماعتوں نے شرکت کی، جن میں میزبان ایم ڈبلیو ایم کے علاوہ پیپلزپارٹی، اسلامی تحریک، تحریک انصاف، مسلم لیگ نون اور شگر خاص کے روسائ وعمائدین کی کثیر تعداد میں شرکت کی۔ اس موقع پر مقررین کا کہنا تھا کہ یقیناً ایسا اتحاد علاقے کی تعمیروترقی میں مددگار ثابت ہوسکتا ہے اور دوسری طرف سیاسی اختلاف جمہوریت کا حسن ہے جسکا ہونا بھی ضروری ہے اور اس اختلاف کے زریعے سے مسائل کی نشاندہی ممکن ہوسکتے ہیں نہ یہ کہ اس اختلاف کو بنیاد بناکر دشمنی کرتے ہوے مار ڈھار کی سیاست کو فروغ دے۔
 

وحدت نیوز(کراچی) سیاسی و مذہبی جماعتوں کے رہنماوں نے کہا ہے کہ پاراچنار پاکستان کے دفاع کی فرنٹ لائن ہے جسے دہشتگردی کا سامنا ہے، پاراچنار کمزور ہوگا تو پاکستان میں داعش کے داخلے کو نہیں روکا جا سکے گا، پاکستان کو دہشتگردی کی دلدل میں پھنسایا گیا ہے، ملک میں فرقہ واریت کا جڑ سے خاتمہ ناگزیر ہے اور اس کے لئے ایک دوسرے کے عقائد کا احترام کرنا ہوگا، دہشت گردی کے خلاف تمام سیاسی و مذہبی جماعتیں ایک پیج پر ہیں، اندرونی مسائل کے حل کیلئے فوج کو نہیں بلکہ حکومت اور سیاسی جماعتوں کو کردار ادا کرنا چاہیئے، عوام پاکستان کو شام، عراق، لیبیا نہیں بننے دینگے، وفاقی حکمران اگر دہشت گردی کی روک تھام نہیں کرسکتے تو مستعفی ہوجائیں۔ ان خیالات کا اظہار مقررین نے مجلس وحدت مسلمین پاکستان کراچی ڈویژن کے زیر اہتمام ”فرقہ واریت پاکستان کے لئے زہر قاتل“ کے عنوان پر کیتھولک گارڈن سولجر بازار میں منعقدہ آل پارٹیز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ کانفرنس سے ایم ڈبلیو ایم کے سربراہ علامہ راجہ ناصر عباس جعفری، علامہ حسن ظفر نقوی، علی حسین نقوی، پاک سر زمین پارٹی کے رہنما رضا ہارون، وسیم آفتاب، تحریک انصاف کے رہنما فردوس شمیم نقوی، ایم کیو ایم کے رکن سندھ اسمبلی قمر عباس، پیپلز پارٹی کے رہنما حبیب الدین جنیدی، جماعت اسلامی کے مرکزی نائب امیر اسد اللہ بھٹو، جمعیت علماءاسلام (ف) کے مرکزی ڈپٹی جنرل سیکریٹری محمد اسلم غوری، جمعیت علمائے پاکستان کے رہنما قاضی احمد نورانی، عوامی تحریک کے محمد اکرم مجاہد، آل پاکستان سنی تحریک کے چیئرمین مطلوب اعوان قادری، پاکستان فلاح پارٹی کے رہنما ڈاکٹر خالد اقبال و دیگر نے بھی خطاب کیا۔

علامہ راجہ ناصر عباس جعفری نے کہا کہ دنیا کی طاقت ایشیا کی طرف منتقل ہو رہی ہے، جو امریکا اور اسکے حواریوں کیلئے ناقابل برداشت ہے، امریکا اور برطانیہ سازشیں کرکے پاکستان سمیت ایشیا کو عدم استحکام کا شکار کرنا چاہتے ہیں، دہشت گردی نے پاکستان کو ہلا کر رکھ دیا ہے، تکفیری ٹولے نے شیعہ، اہلسنت اور غیر مسلموں کو بھی نشانہ بنایا ہے، استحکام پاکستان اور تکفیریت کے خاتمے کیلئے سیاسی، مذہبی، عوامی حلقوں کو متحد ہونا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ پاراچنار پاکستان کے دفاع کی فرنٹ لائن ہے، جسے داعش، لشکر جھنگوی کی دہشتگردی کا سامنا ہے، پاراچنار کمزور ہوگا تو پاکستان میں داعش کے داخلے کو نہیں روکا جا سکے گا، دہشت گردی کے خاتمے کیلئے پاکستان میں مضبوط مرکزی حکومت وقت کی اہم ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ قائد و اقبال کے پاکستان کا حصول تمام سیاسی و مذہبی و عوامی اکائیوں کا مقصد ہونا چاہیئے، ضیاءالحق کی سوچ نے ہم سے قائد و اقبال کے پاکستان کو چھین لیا ہے، تمام شہداء کسی مسلک و مکتب کے نہیں بلکہ پاکستان کے شہداء ہیں۔ علامہ حسن ظفر نقوی نے کہا کہ دہشت گردی کے باعث پاکستان میں اسی ہزار جانوں اور اربوں ڈالرز کا نقصان ہو چکا ہے، فرقہ واریت پاکستان کیلئے زہر قاتل ہے اور اس سازش کو ہمیشہ باہمی اتحاد کام بنائیں گے اور پاکستان کے دفاع پر آنچ نہیں آنے دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت ہمیں مل جل کر پاکستان کی بقاء، سالمیت و استحکام کو بچانا ہے، پاکستان کی تمام مذہبی و سیاسی جماعتیں دہشت گردی کے خلاف ایک پیج پر ہیں، سانحہ پاراچنار کے بعد ملک کے تمام مکاتب فکر کے علمائے کرام اور تمام سیاسی و مذہبی رہنماوں نے اتحاد و وحدت کے ذریعے ملک بھر میں امن کی فضا کو برقرار رکھا۔

پی ایس پی رہنما رضا ہارون نے کہا کہ فرقہ واریت کی سازش ناکام بنانے کیلئے ہمیں پیغمبر آخر، اہلبیت، خلفاء راشدین کے کردار کو سامنے رکھنا اور ایک دوسرے کے عقائد کا احترام کرنا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں فرقہ واریت کی سازش کو سمجھنے کیلئے ہمیں عالم اسلام کے خلاف عالمی گریٹ گیم کو سمجھنے کی ضرورت ہے، تمام شہریوں کو برابر ی کی بنیاد پر حقوق حاصل ہیں لیکن وزیراعظم کا پاراچنار نہ جانا عوام میں منفی تاثر پیدا کرنے کا باعث بنا ہے، ریاست عوام کے جان و مال، عزت و آبرو کی حفاظت کیلئے اپنا کردار ادا کرے۔ پی ٹی آئی رہنما فردوس شمیم نقوی نے کہا کہ فرقہ واریت کی سازشوں کو ناکام بنانا ملکی بقاء و سالمیت کے لئے ناگزیر ہے، اس پر کوئی سمجھوتا نہیں ہونا چاہیئے، اس زہر قاتل کا خاتمہ حکومت اور سیاسی جماعتوں کی اولین ذمہ داری ہے، اندرونی مسائل کے حل کیلئے فوج کو نہیں بلکہ حکومت اور سیاسی جماعتوں کو کردار ادا کرنا چاہیئے۔ ایم کیو ایم کے رکن سندھ اسمبلی قمر عباس نے کہا کہ فرقہ واریت اور دہشت گردی کے خلاف تمام سیاسی و مذہبی اکائیوں کو عملی میدان میں نکلنا ہوگا، ہمیں دوسروں کے عقائد کو چھیڑنے سے اجتناب کرنا چاہیئے، پاکستان کی عوام متحد ہے، بیرونی ایماء پر چند مقامی ایجنٹ فرقہ واریت پھیلانے کی سازش میں ملوث ہیں لیکن پاکستانی باشعور عوام ملک کو شام، عراق، لیبیا نہیں بننے دینگے۔

پیپلز پارٹی کے رہنما حبیب الدین جنیدی نے کہا کہ پاکستان میں تمام مذاہب و مکاتب فکر کے شہریوں کو برابر کے حقوق و آزادی حاصل ہے، آج پاکستان کے خلاف عالمی سازش کی جا رہی ہے، لیکن ہمارے مقامی لوگ کیوں اس سازش کا حصہ بن رہے ہیں، وفاقی حکمران اگر دہشت گردی کی روک تھام نہیں سکتے تو مستعفی ہوجائیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہم ایک ترقی پسند قوم ہیں، ہمیں ایک قوم بننا ہوگا، ہمیں ثابت قدم ہوکر پاکستان کا نام دنیا بھر میں روشن کرنا ہوگا، فرقہ واریت پھیلانے میں ملوث عالمی سامراج کے مقامی ایجنٹوں کو ناکام بنانا اور انہیں تنہا کرکے فرقہ واریت پھیلانے کی سازش کو ناکام بنانا ہوگا۔ جماعت اسلامی کے نائب امیر اسد اللہ بھٹو نے کہا کہ تمام سیاسی و مذہبی جماعتیں پاکستان میں فرقہ واریت اور دہشت گردی کے خلاف ہیں، لیکن انہیں آگے بڑھ کر عملی کردار ادا کرنا ہوگا، پاراچنار کا سانحہ ہو یا کوئٹہ یا کراچی میں، سب سے اظہار یکجہتی کرنا تمام پاکستان کے شہریوں کی ذمہ داری ہے، تاکہ ملک میں فرقہ واریت پھیلانے کی امریکی، اسرائیلی، بھارتی سازش کو یکسر ناکام بنایا جا سکے، دشمن کی سازشوں کو اتحاد و وحدت کے ذریعے ہی ناکام بنایا جا سکتا ہے۔

جے یو آئی کے رہنما اسلم غوری نے کہا کہ ملک بھر میں سنی شیعہ مسلمانوں کا اتحاد مثالی ہے، فرقہ واریت کے خلاف اے پی سی بلانا قابل تحسین ہے، جے یو آئی ہر قسم کی دہشت گردی کی مذمت کرتی ہے۔ جے یو پی رہنما علامہ قاضی احمد نورانی نے کہا کہ پہلے پاکستان کو دہشت گردی کی دلدل میں پھنسایا گیا، مدارس کے نام پر دہشت گردی کے تربیتی مراکز قائم کئے گئے اور اب امریکی مفاد کی جنگ میں پھر جھونکنے کی کو شش کی جارہی ہے جسے کامیاب نہیں ہونے دیں گے، تمام سیاسی و مذہبی رہنماوں کو پاراچنار کا دورہ کرنا چاہیئے۔ پاکستان عوامی تحریک کے محمد اکرم نے کہا کہ پاکستان نا صرف پاکستان کیلئے بلکہ تمام عالم اسلام کیلئے زہر قاتل ہے، پاکستان میں خوارج دہشت گردوں کی ناپاک سازش کو ملک کے اندر تمام اکائیاں مل جل کر ہی ناکام بنا سکتی ہیں۔ آل پاکستان سنی تحریک کے چیئرمین مطلوب اعوان قادری نے کہا کہ آج پاکستان کو عدم استحکام سے دوچار کرنے کیلئے فرقہ واریت پھیلانے کی سازش کی جا رہی ہے، جسے تمام سیاسی و مذہبی جماعتیں اور عوام اتحاد و وحدت کے ذریعے ہی ناکام بنا سکتے ہیں۔ اے پی سی میں علامہ باقر عباس زیدی، علامہ صادق جعفری، علامہ علی انور، علامہ احسان دانش، علامہ مبشر حسن، میثم عابدی سمیت دیگر رہنما بھی شریک تھے۔

وحدت نیوز(لاہور) پنجاب بھر کے تمام اضلاع کی جامع مساجد سے بعد از نماز جمعہ القدس ریلیاں نکالی جائے گی،بیت المقدس کی آزادی اور مظلوم فلسطینیوں کیساتھ اظہار یکجہتی ہمارے ایمان کا حصہ ہے،ہم جمعتہ الوداع کو مظلومین جہاں کیساتھ یکجہتی کے طور پر مناتے ہیں،ان خیالات کا اظہار مجلس وحدت مسلمین پنجاب کے قائم مقام سیکرٹری جنرل پروفیسر ڈاکٹر افتخار حسین نقوی نے صوبائی سیکرٹریٹ میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا انہوں نے کہا کہ اسرائیل کی بقا کے لئے امریکہ پوری مسلم امہ کیخلاف ساشوں میں مصروف ہے،ہمارے عرب حکمرانوں کو سب سے پہلے قبلہ اول کی آزادی کے لئے اتحاد بنانا چاہیئے،اگر اسرائیل ہی کا وجود اس دنیا سے ختم ہوجائے تو پوری دنیا میں امن قائم ہوگا،عالم اسلام کے تمام مشکلات اور مسائل کا ذمہ دار امریکہ ہے،ہم انشااللہ ان سامراجی قوتوں کیخلاف اپنے خون کے آخری قطرے تک جدو جہد جاری رکھیں گے۔

وحدت نیوز(فیصل آباد) مجلس وحدت مسلمین شعبہ خواتین فیصل آباد کی جانب سے مختلف علاقوں میں ماہ مبارک رمضان میں بیتی پروگرامز منعقد کیے گئے جس میں تربیتی نشست،شب دعا و مناجات ،مجالس اعمال شب قدر اورمختلف موضوعات پر درس شامل ہیں۔ یوم القدس کے حوالے سے منعقد کیے گئے سمینار میں خطاب کرتے ہوئے مجلس وحدت مسلمین شعبہ خواتین فیصل آباد کی سیکرٹری جنرل محترمہ فرجانہ گلزیب کا کہنا تھا کہ بانی انقلاب اسلامی حضرت امام خمینی (رح) نے ماہ رمضان المبارک کے آخری جمعے کو عالمی یوم القدس قرار دیا تھا اور اس کا مقصد فلسطین کی مظلوم قوم کا دفاع اور صیہونی حکومت کے جرائم کی مذمت کرنا ہے۔ اس دن دنیا بھر میں مظاہروں اور احتجاج کے ذریعے فلسطینیوں کی حمایت کا اعادہ کیاجاتاہے۔ اس لئے مسلمانوں کو چاہئے کہ یوم القدس کی ریلیوں میں وسیع پیمانے پر شرکت کریں اور اسرائیل کے خلاف نعرے لگائیں اور یہ جان لیں کہ ان کا یہ اقدام، عالمی سطح پر غیر معمولی اثرات کا حامل ہو گا۔ اس لئے کہ عالمی یوم القدس فلسطین کی مظلوم قوم کے ساتھ یکجہتی اورصیہونی حکومت کے غاصبانہ قبضے اور اس کی جارحیتوں کے خلاف تمام مسلم قوموں کے متحد ہونےکا دن ہے اور یہ سال ایک منفرد خصوصیت کا حامل ہے۔ اس لئے کہ داعش دہشت گرد گروہ اپنی دھشتگردانہ کارروائیوں کے سبب مسلمانوں کی توجہ اپنی جانب مرکوز کئے ہوئے ہے اور وہ غاصب اسرائیل کے جارحانہ اقدامات سے عالمی رائے عامہ کی توجہ ہٹا رہا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ دراصل بانی انقلاب اسلامی حضرت امام خمینی قدس سرہ نے اپنی دور رس اور گہری نگاہوں سے دیکھتے ہوئے مسئلہ فلسطین کو زندہ رکھنے کےلئے یوم قدس کا اعلان فرمایا تھا۔امام خمینی کی جانب سے ماہ مبارک رمضان کے جمعہ الوداع کو عالمی یوم قدس قراردینے سے صیہونی حکومت اور اسکے حامیوں کی سازشوں کا مقابلہ کرنے میں ملت فلسطین کی جدوجہد اور عالم اسلام کی پائداری کی تاریخ میں ایک نیا موڑ آیا ہے۔ جو چیز مسلم ہے وہ یہ ہے کہ مسئلہ فلسطین عالم اسلام کا بنیادی مسئلہ ہے اور بیت المقدس پر صیہونی حکومت کا قبضہ ہونے سے وہ مکمل فلسطین پر قابض ہوجائے گا۔ اسی وجہ سے مسلمانوں اور فلسطینیوں کو چاہیے کہ وہ بیت المقدس کی حمایت کو اولین ترجیح دیں۔ آج کے حالات میں عالمی یوم قدس سے ملت فلسطین اور مسلمانوں کو یہ موقع ملتا ہے کہ وہ قدس پر توجہ دے کر عملی طور سے قدس کو فراموش کرانےکی صیہونی سازشوں کو ناکام بنادیں۔

وحدت نیوز (مظفرآباد) مجلس وحدت مسلمین آزاد کشمیر کے زیر اہتمام آل پارٹیز کانفرنس بعنوان "پرامن کشمیر کانفرنس "مظفرآبادکے  مقامی ہوٹل  میں منعقد ہوئی ۔اس آل پارٹیز کانفرنس میں آزاد کشمیر کی تمام سیاسی ،مذہبی وسماجی شخصیات نے شرکت کی جن میں  مجلس وحدت مسلمین کے مرکزی رہنما ملک اقرار حسین سمیت شاہ غلام قادر سپیکر قانون ساز اسمبلی آزاد کشمیراور رہنما مسلم لیگ ن ،چوہدری لطیف اکبر  و جاوید ایوب  سابق وزراء آزادکشمیر ورہنما پاکستان پیپلز پارٹی،خواجہ فاروق احمد(سابق وزیر ) و عبدالماجد خان ممبر قانون ساز اسمبلی رہنما پاکستان تحریک انصاف،پیر سید مرتضیٰ علی گیلانی سابق وزیر آزاد کشمیرو راجہ ثاقب مجید رہنماآل جموں کشمیر مسلم کانفرنس،شیخ عقیل الرحمٰن  نائب امیر جماعت اسلامی آزاد کشمیر، سید شبیر حسین بخاری  و مولانا فرید عباس نقوی رہنما  جعفریہ سپریم کونسل آزاد کشمیر،سید وقار حسین کاظمی صدر پیپلز نیشنل پارٹی کشمیر،جاوید مغل مرکزی کوآرڈینیٹر آل پاکستان مسلم لیگ،میر افضال سہلریا رہنماکشمیر نیشنل پارٹی،قاضی منظور الحسن رہنماجمعیت علمائے اسلام ،سید اسحاق حسین نقوی  کوآرڈینیٹر مرکزی جماعت اہلسنت آزاد کشمیر،اجمل مغل رہنماجموں کشمیر پیپلز پارٹی،عبدالرزاق مغل رہنماتاجر جوائنٹ ایکشن کمیٹی،مولانااحمدعلی سعیدی رہنما حسینی فاونڈیشن آزاد کشمیر، سید ذاکر حسین سبزواری رہنما آئی۔او آزاد کشمیر،ضیاءاحمد چغتائی ریاستی سربراہ پاکستان عوامی تحریک شامل تھے ۔

مرکزی رہنما مجلس وحدت مسلمین پاکستان  ملک اقرار حسین نے اپنے خطاب میں کہا کہ ریاست آزاد کشمیر انتہائی سٹریٹیجک پوزیشن رکھتی ہے اور مظفرآباد تحریک آزادی کشمیر کا بیس کیمپ ہے۔ لہٰذا اس جگہ پر دہشت گردی کے پےدرپے واقعات حکومت وقت کی کارکردگی پر سوالیہ نشان ہیں ۔ اگر حکومت جلد سیکرٹری جنرل ایم ڈبلیو ایم آزاد کشمیر علامہ تصور جوادی اور ان کی اہلیہ پر قاتلانہ حملہ کرنے والے ملزمان کو گرفتار نہ کر سکی تو پھر نہ صرف آزاد کشمیر بلکہ پورا پاکستان سڑکوں پر نکلے گا۔ دیگر مقررین نے بھی علامہ تصور جوادی  اور ان کی اہلیہ پر حملے کی شدید الفاظ پر مذمت کی اور حکومت کو شدید تنقید کا نشانہ بھی بنایا ،آخرمیں  کانفرنس کا مشترکہ اعلامیہ بھی جاری کیا گیا۔

Page 1 of 6

مجلس وحدت مسلمین پاکستان

مجلس وحدت مسلمین پاکستان ایک سیاسی و مذہبی جماعت ہے جسکا اولین مقصد دین کا احیاء اور مملکت خدادادِ پاکستان کی سالمیت اور استحکام کے لیے عملی کوشش کرنا ہے، اسلامی حکومت کے قیام کے لیے عملی جدوجہد، مختلف ادیان، مذاہب و مسالک کے مابین روابط اور ہم آہنگی کا فروغ، تعلیمات ِقرآن اور محمد وآل محمدعلیہم السلام کی روشنی میں امام حسین علیہ السلام کے ذکر و افکارکا فروغ اوراس کاتحفظ اورامر با لمعروف اور نہی عن المنکرکا احیاء ہمارا نصب العین ہے 


MWM Pakistan Flag

We use cookies to improve our website. Cookies used for the essential operation of this site have already been set. For more information visit our Cookie policy. I accept cookies from this site. Agree