وحدت نیوز(اسلام آباد) مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی سیکرٹری جنرل علامہ راجہ ناصر عباس جعفری نے ایم ڈبلیو ایم کے مرکزی سیکرٹریٹ میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ سعودی عرب میں فوج بھیجنے کا فیصلہ ارض پاک کی موجودہ داخلی صورتحال سے مطابقت نہیں رکھتا۔انہوں نے کہا کہ سعودی عرب کو مقامات مقدسہ کی حفاظت کے بجائے یمن کے بے گناہ شہریوں کو نشانہ بنانے کے لیے فوجی تعاون کی ضرورت ہے۔پاکستان کو اس تنازع کا براہ راست حصہ بننے کی بجائے ثالثی کا کردار ادا کرنا چاہیے۔دوسروں کے گھروں میں لگی آگ بجھانا دانشمندی کا تقاضہ ہے۔ اپنے گھر کو دوسروں کو آگ میں جھونکنا سمجھداری نہیں ۔ہمیں ماضی کے تجربات سے سبق سیکھنے کی ضرورت ہے۔ پراکسی وار نے ہمیں ہمیشہ نقصان دیا ہے۔ایسی ہی جنگ کے نتیجے میں پاکستان کو گزشتہ کئی دہائیوں سے دہشت گردی کا سامنا ہے۔ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان سب سے زیادہ متاثر ہوا ۔ہمیں ستر ہزار سے زائد لاشیں اٹھانا پڑی۔حکومت کی ناکام خارجہ پالیسیوں کی بدولت آج دنیا ہماری قربانیوں کو تسلیم کرنے کے لیے تیار نہیں ۔امریکہ کے بعد دیگر یورپی ممالک نے بھی پاکستان سے ’’ڈو مور‘‘ کے مطالبے کا راگ الاپنا شروع کر دیا ہے۔دہشت گردی کے خلاف جنگ میں ہمارے کردار کو سراہنے کی بجائے دہشت گردوں کو مالی معاونت فراہم کرنے والے ممالک کی واچ لسٹ میں ہمارا نام شامل کرنے کی دھمکی دے کر ہم پر دباؤ ڈالا جا رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان کے خلاف امریکہ اور بھارت کا واویلا اقوام عالم کی آنکھوں میں دھول جھونکنے کی کوشش ہے۔پاکستان کو اس طرح کے مذموم ہتھکنڈوں سے دھمکایا نہیں جا سکتا۔ذرائع ابلاغ کے مطابق امریکہ فنانشل ایکشن ٹاسک فورس میں پاکستان کے خلاف تحریک پیش کرنے جا رہا ہے۔امریکہ نے ہمیشہ ان مسلم ممالک کی پیٹھ پر وار کیا ہے جنہوں نے اسے سر آنکھوں پر بٹھائے رکھا۔اگر پاکستان کے خلاف امریکہ کی طرف سے کوئی تحریک پیش کی جاتی ہے توپھر ہمارے قومی وقار کا واحد تقاضہ امریکہ سے راستے جدا کر لینا ہے۔ دہشت گردی کے خلاف پاکستان کی قربانیاں ایک اٹل حقیقت ہے جسے کسی صورت فراموش نہیں کیا جا سکتا۔انہوں نے کہا کہ عالمی طاقتوں کا مقابلہ تدبر ،حکمت اور فراست سے کیا جاتا ہے۔بدقسمتی سے ہمارے حکمرانوں کے پاس کوئی موثر خارجہ پالیسی سرے سے موجود نہیں ۔وزیر اعظم اور ان کی کابینہ عدالت عظمی سے نااہل قرار دیے جانے والے شخص کے دفاع میں مصروف ہیں۔سیاسی مخالفین کو مختلف حربوں سے انتقام کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔حکومتی وزراء ریاستی اداروں کو ذاتی مقاصد کے لیے استعمال کر کے ان کی ساکھ کو داغدار کرنے میں مصروف ہیں۔

انہونے مزید کہاکہ مجلس وحدت مسلمین ملک کی ایک ذمہ دار سیاسی و مذہبی جماعت ہے جس نے عام انتخابات میں باقاعدہ حصہ لیا ہے۔بلوچستان میں ہمارا رکن اسمبلی اس وقت وزیر ہے۔گلگت بلتستان اسمبلی میں بھی ہماری نمائندگی موجود ہے۔ہم ہمیشہ اس ملک کی نظریاتی وجغرافیائی سرحدوں کی حفاظت کے لیے آواز بلند کرتے آئے ہیں ۔ہم اپنی حب الوطنی پر کوئی آنچ نہیں آنے دیں گے۔کسی کو اس بات کی قطعاََ اجازت نہیں دی جائے گی کہ وہ اختیارات کا ناجائز استعمال کر کے ہماری جماعت پر کوئی غیر اخلاقی یا منفی الزام لگائے۔انہوں نے کہا کہ مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے پانچ کروڑ تشیع کی نمائندہ جماعت ہے جو اپنی قوم کے حقوق کے لیے آئینی جدوجہد پر یقین رکھتی ہے۔انہوں نے کہا کہ 2018 کے عام انتخابات کے حوالے سے ملک کی بڑی سیاسی جماعتیں ان سے رابطے میں ہیں تاہم ابھی تک اس بات کا حتمی فیصلہ نہیں کیا گیا کہ ایم ڈبلیو ایم کس جماعت کے ساتھ اتحاد کرے گی۔

وحدت نیوز(سکردو) مجلس وحدت مسلمین اور اسلامی تحریک پاکستان کی نگر میں اتحاد سے سابق حکمران جماعت پیپلز پارٹی کے رہنماووں کو دماغی عارضہ لاحق ہو گیا ہے جو ان کے بیانات سے واضح ہے  ان خیالات کا اظہار مجلس وحدت مسلمین بلتستان کے رہنماء سید الیاس موسوی نے ایک بیان میں کیا ۔انہوں نے کہا کہ پی پی نے اپنے پانچ سالہ دور میں جہاں کرپشن کا بازار گرم کیا وہیں علمائے کرام کی بلاجواز گرفتاری کی کوششوں سے بھی ذلت اٹھائی جو لوگ کل تک حق ملکیت پر بات کرنے والوں گرفتار کرتے رہے آج وہی اسطرح کے نعروں سے صرف اپنی سیاسی ساکھ بنانے کی ناکام کوشش کر رہے ہیں ۔ ہم سے گاڑی کے اخراجات پوچھنے والوں کی اوقات ہم خوب جانتے ہیں انہوں نے مزید کہا کہ پی پی رہنماء اپوزیشن جماعتوں پرتنقیدکی بجائے اپنی حالت خصوصاً پنجاب میں تیزی سیکم ہوتے حجماور ختم ہوتی مقبولیت   پر توجہ دیں ۔

وحدت نیوز (ملتان) مجلس وحدت مسلمین جنوبی پنجاب کے سیکرٹری جنرل علامہ سید اقتدار حسین نقوی اور ضلعی سیکرٹری جنرل سید ندیم عباس کاظمی نے ہارٹ آف ایشیا ء کانفرنس میں بھارت اور افغانستان کی طرف سے پاکستان پر لگائے جانے والے الزامات کو بے بنیادمضحکہ خیز قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ افغانستان کوتلیائی سیاست کے نرغے میں آچکا ہے۔پاکستان پر دہشت گردی کے الزامات لگانے سے پہلے افغانستان صدر اشرف غنی کو یہ بات ذہن نشین رکھنی چاہیے تھی کہ پاکستان کو دہشت گردی کی آگ میں جھونکنے والی طالبانی قوتیں افغانستان میں ہی پروان چڑھی ہیں۔پاکستان میں دہشت گردی کے جتنے بھی بڑے واقعات ہوئے ہیں ان میں بھارت اور افغانستان براہ راست ملوث رہے ہیں۔پاکستان میں کلاشنکوف اور منشیات کو متعارف کرنے والے عناصر بھی پناہ کی غرض سے افغانستان سے پاکستان میں داخل میں ہوئے تھے۔پاکستان کی سالمیت و استحکام کے خلاف پڑوسی ممالک کی کارستانیاں کوئی ڈھکی چھپی نہیں۔پاکستان کے داخلی معاملات میں مداخلت اور پھر واویلا چور مچائے شور کے مترادف ہے۔انہوں نے کہا کہ کانفرنس میں پاکستانی مدعوئین کے ساتھ بھارت کا تضحیک آمیز رویہ قابل مذمت ہے۔بھارت نے میزبانی کا حق ادا کرنے کی بجائے کم ظرفی کا ثبوت دیا ہے۔سفارتی آداب کے منافی اس نامناسب رویہ پر بھارت کو حکومتی سطح پر معذرت کرنی چاہیے۔انہوں نے کہا کہ وطن عزیز کا وقار ہمیں سب سے زیادہ عزیز ہے۔کسی بھی ملک کا پاکستان کے ساتھ جارحانہ رویہ قابل قبول نہیں۔کانفرنس میں شریک دیگر ممالک کو بھی بھارت کے اس ناروا رویہ پر تنقید کرنا چاہیے تھی۔ہمیں اپنی خارجہ پالیسی پر مزید توجہ دینے کی ضرورت ہے۔خطے کے دیگر ممالک سے ہم آہنگی اور دوستانہ روابط کو بڑھانے کے لیے مربوط لائحہ عمل طے کرنا ہو گا۔انہوں نے کہا افغانستان سمیت خطے کے دیگر مسلم ممالک سے بھارت کے مضبوط تعلقات ہمارے کمزور خارجہ پالیسی کا نتیجہ ہے۔بھارت کی طرف سے افغانستان میں ایک ارب ڈالر کی سرمایہ کاری کی خواہش کا اظہار ہمیں خواب غفلت سے بیدار کرنے کے لیے کافی ہے۔

وحدت نیوز(کوئٹہ) ایم پی اے آغا رضا نے علاقے میں تعلیمی اداروں کے قیام کیلئے مسلسل کوششوں سے پی بی 2 میں ریزیڈینشل اسکول اور یونیورسٹی کا کام شروع کیا، جو آئیندہ سالوں میں اپنی تکمیل کو پہنچ جائے گا اور تعلیم کو عام کرنے میں اہم کردار ادا کرے گا جو کہ ایک مثبت اقدام ہے مگر افسوس کی بات ہے کہ تعلیمی ادارے بنانے کے دوران بھی ایک نام نہاد اسٹوڈنٹ فیڈریشن اپنے بیانات سے قوم کی دل آزاری کر رہی ہے۔ تخریبی سوچ رکھنے والے ہمیشہ تخریبی اندازے ہی لگاتے ہیں اور اپنی بے وقوفانہ سوچ سے آگے کبھی بڑھ ہی نہیں پاتے، فاشسٹ ٹولہ اپنی انا سے آگے بڑھے اور قوم کیلئے کچھ سوچیں۔ ایک فاشسٹ ٹولہ جو خود کو قومی جماعت اور طلباء کے نمائندے سمجھتے ہیں ، مسلسل تعلیمی اداروں کے قیام کے خلاف اپنے بیانات سے اپنی تعلیم دشمنی کا مظاہرہ کر رہے ہیں۔ مجلس وحدت مسلمین کوئٹہ ڈویژن کے ترجمان محمد ھادی جعفری نے کہا ہے کہ ایک اسٹوڈنٹ فیڈریشن کا تعلیم کے خلاف بیان سمجھ سے بالا تر ہے۔ فاشسٹ ٹولہ اور نام نہاد اسٹوڈنٹ فیڈریشن قوم کو گمراہ کرنے میں مصروف نظر آ رہے ہیں اور تعلیمی اداروں کے خلاف کام کرکے قوم کو تاریکی میں رکھنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پی بی 2 کے نمائندے نے مسلسل جدوجہد کے بعد اپنے علاقے میں یونیورسٹی اور ریزیڈینشل اسکول کے پروجیکٹ کو منظور کروایا اور اسکا کام شروع ہوا مگر اب ایک نام نہاد اسٹوڈنٹ فیڈریشن ان پروجیکٹس کے خلاف کام کرنے میں مصروف ہیں۔اگر اتنا کام فاشسٹ ٹولہ قوم کی خدمت کیلئے کرتا تو آج قوم کو منہ دیکھانے کے قابل ہوتا۔ بیان میں مزید کہا گیا کہ پی بی 2 کے نمائندے ایم پی اے آغا رضا نے علاقے میں بنیادی ضروریات کو مد نظر رکھتے ہوئے اقدامات اٹھائے۔ عوام کے پانی کے مسئلے پر کام ہوا، کھیل کیلئے کام ہوا، تعلیمی اداروں کے ضروریات کیلئے فنڈز فراہم کئے گئے،طلباء میں فنڈز تقسیم کئے گئے،معیاری تعلیم کو عام کرنے کی کوششیں کی گئی اور اسکے علاوہ بے شمار اقدامات کے ذریعے قوم کی خدمت کی گئی مگر اسکے باوجود قوم دشمن اور فاشسٹ ٹولہ اپنے بیانات سے ان عناصر کی دل جوئی کر رہا ہے جو قوم کو تاریکی میں رکھنا چاہتے ہیں۔ آج فاشسٹ ٹولہ اپنے بیانات سے ہمارے دشمنوں کی زبان سے ادا ہونے والے الفاظ پیش کر رہا ہے، جو ان کے تعلیم و قوم دشمنی کی واضح دلیل ہے۔ بیان کے آخر میں کہا گیا کہ ہماری قوم تعلیم سے محبت رکھنے والی قوم ہے، ہمارے نوجوان باہنر اور محنتی ہیں ۔ ہم تعلیم کے فروغ کیلئے اپنا کام جاری رکھیں گے اور مسترد شدہ فاشسٹ ٹولے کے عزائم ناکام بنا دیں گے۔

وحدت نیوز(اسلام آباد) مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی سیکرٹری جنرل علامہ راجہ ناصر عباس جعفری نے کہا کہ اپوزیشن کی طرف سے پیش کئے جانے والی ٹی او آرز کو مسترد کیا جانا حکومتی بدنیتی کا برملا اظہار ہے۔ حکومت احتساب کے عمل سے کترا رہی ہے۔ پاکستانی عوام پانامہ لیکس کے کرداروں کو بےنقاب کرکے دم لے گی۔ قومی خزانے کو مال غنیمت سمجھ کر لوٹنے والوں کو ہر حال میں انصاف کے کٹہرے میں آنا ہوگا۔ مختلف وفود سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اقتدار پر قابض ٹولہ عوامی طاقت سے منتخب نہیں ہوا بلکہ چور دروازے سے اقتدار میں آیا ہے۔ عوام پر ان کی حقیقت آشکار ہوچکی ہے۔ ان عناصر کا کڑا محاسبہ اور لوٹی ہوئی رقم کی واپس منتقلی کے سوا کوئی دوسرا آپشن پاکستان کے عوام کے لیے قابل قبول نہیں۔

ایم ڈبلیو ایم کے سربرا کا کہنا تھا کہ وزیراعظم روزانہ بیان بدلنے کی بجائے پارلیمنٹ میں آکر الزامات کا سامنا کریں۔ انہوں نے کہا کہ ایک طرف حکومت بیرون ممالک سے سرمایہ کاروں کو پاکستان لانے کی دعویدار ہے تو دوسری طرف اپنے کاروبار دنیا کے دوسرے ممالک میں پھیلا رکھے ہیں۔ حکومت کا یہ عمل نہ صرف عوامی بےچینی میں اضافے کا باعث ہے بلکہ پاکستان پر سے دیگر اقوام کے اعتماد کو بھی زائل کر رہا ہے۔ حکومتی مشینری اور وسائل کو اقتدار کی بقاء کے لئے بےدریغ استعمال کیا جا رہا ہے جبکہ پاکستان کی بیس کروڑ عوام تعلیم، صحت، روزگار سمیت دیگر بنیادی سہولتوں کے حصول کے لئے خوار و پریشانی کا شکار ہے۔ نواز حکومت عوام کو ریلیف دینے میں مکمل طور پر ناکام ہوچکی ہے۔ حکومت کو چاہیے کہ خود کو احتساب کے لئے باوقار طریقے سے عوام کے سامنے پیش کر دے، تاکہ دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی ہو جائے۔


وحدت نیوز(سکردو) مجلس وحدت مسلمین بلتستان کے سیکریٹری جنرل سید آغاعلی رضوی نے کہ کہ ہم اقتدار کی نہیں اقدار کی سیاست کرتے ہیں جن لوگوں نے ماضی میں کرپشن کی ہے اور نوکریاں بیچی ہیں عوام انہیں مسترد کریں گے کتنی شرم کی بات ہے بعض لوگوں نے مل کر گلگت بلتستان کے وسائل کو لوٹا اور معزز لوگوں کی عزتیں نیلام کی گئی اور ہر طرف لوٹ مار کا بازار گر کیا گیا ، غریب عوام کے حقوق غضب کئے گئے میں ، ہم حقوق غصب کرنے والوں کا راستہ روکنے کے لئے الیکشن میں حصہ لے رہے ہیں ،عوام ہمارے نامزد امیدوار کو کامیاب کرائیں ،مختلف مقامات پر انتخابی جلسوں سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ مجلس وحدت مسلمین عوام کے حقوق کی جنگ لڑ رہی ہے،چوروں اور لڑیروں کا یو م حساب قریب آگیا ہے،عوام کے حقوق پر ڈاکہ ڈالنے والوں کو نشان عبرت بنائیں گے انہوں نے کہا کہ ہم عوامی مسائل حال کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں،اگر پانچ سال میں ،مسائل حل نہ کرسکے تو ہم ہر قسم کی سزابگھتنے کے لئے تیار ہیں ، انہوں نے کہا کہ ہم وہ لوگ نہیں جو دعوے کرکے اقتدار میں آتے ہیں اور لوٹ مار کرتے ہیں حقوق پرڈاکہ ڈالنے والے جان لیں کہ ہم ان کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر بات کریں گے۔

Page 1 of 2

مجلس وحدت مسلمین پاکستان

مجلس وحدت مسلمین پاکستان ایک سیاسی و مذہبی جماعت ہے جسکا اولین مقصد دین کا احیاء اور مملکت خدادادِ پاکستان کی سالمیت اور استحکام کے لیے عملی کوشش کرنا ہے، اسلامی حکومت کے قیام کے لیے عملی جدوجہد، مختلف ادیان، مذاہب و مسالک کے مابین روابط اور ہم آہنگی کا فروغ، تعلیمات ِقرآن اور محمد وآل محمدعلیہم السلام کی روشنی میں امام حسین علیہ السلام کے ذکر و افکارکا فروغ اوراس کاتحفظ اورامر با لمعروف اور نہی عن المنکرکا احیاء ہمارا نصب العین ہے 


MWM Pakistan Flag

We use cookies to improve our website. Cookies used for the essential operation of this site have already been set. For more information visit our Cookie policy. I accept cookies from this site. Agree