The Latest

پیغامِ پاکستان اور قومی بیانیہ

وحدت نیوز (آرٹیکل) ہم ایک زندہ قوم ہیں، ہمیں ہجوم کہنا  ہماری توہین ہے، پاکستان کا وجود ہماری زندگی کی دلیل ہے۔ یہ بڑی بات ہے کہ ہم نے پاکستان کی حفاظت اور بقا کے لئے پیغامِ پاکستان صادر کیا ہے۔پاکستان کے تمام مسالک سے تعلق رکھنے والے 1829 علمائے کرام کے خودکش حملوں سے متعلق فتوے کی رونمائی کی تقریب ایوان صدر میں کی گئی اور  اس فتوے کو'پیغام پاکستان' کا نام دیا گیا ۔

ہمیں دیکھنا یہ چاہیے کہ یہ فتویٰ دینے والے علمائے کرام ہیں کون!؟

کہیں یہ وہی لوگ تو نہیں کہ جنہوں نے  بھائی کو بھائی سے لڑوانے کا بیانیہ تشکیل دیا تھا، جنہوں نے گولی اور گالی کا فکاہیہ عام کیا تھا، جنہوں نے کافر کافر کے سرٹیفکیٹ جاری کئے تھے، اگر اس فتوئے میں وہ لوگ بھی شامل ہیں اور آج پاکستان کے وارث اور مالک بن کر پیغامِ پاکستان صادر کر رہے ہیں  تو  پہلے  تو وہ اپنے آپ کو فرزندِ پاکستان ثابت کریں۔

جن کی تقریروں، تحریروں اور اشاعت شدہ لٹریچر کی وجہ سے ہمارے پولیس و فوج کے قیمتی  جوان قتل ہوئے، آرمی پبلک سکول کےنونہال خاک و خوں میں غلطاں ہوئے، مسافروں کو گاڑیوں سے اتار کر تہہ تیغ کیا گیا، نعت خوانوں، قوالوں اور پروفیسرز کا قتلِ عام ہوا، عام پبلک مقامات اور مساجد نیز اولیائے کرام کے مزارات پر دھماکے ہوئے ۔وہ لوگ جن کے دامن پر بے گناہوں کے خون کے دھبے ہیں ، وہ کب سے پاکستان کے وارث بن گئے ہیں اور اب نو سو چوہے کھا کے۔۔۔

یہ یقیناً ایک نئی چال اور ہماری ملت کا نیا امتحان ہے۔ اگر  یہ علما ئے کرام اس فتوے کی بنیاد پر  ایک ملی بیانیہ تشکیل دینا چاہتے ہیں تو پھر اب تک دہشت گردوں کے ہاتھوں  مارے جانے والے بے گناہوں کے قاتلوں کے قصاص کے لئے بھی بیانیہ تشکیل دیں۔ آئینِ پاکستان اور بانی پاکستان کو قبول نہ کرنے والوں کے خلاف بھی کوئی پیغام جاری کریں۔

 کیا آج اسلام کے قوانین بدل گئے ہیں کہ قاتل بیٹھ کر اتحاد کی بات کر رہے ہیں اور مقتولین کے قصاص کے مسئلے کو دفن کیا جارہا ہے۔

جب تک بے گناہوں کے خون  کا قصاص نہیں لیا جاتا، آئین پاکستان کو قبول نہیں کیا جاتا، بانی پاکستان کو بابائے ملت نہیں مانا جاتا تب تک کسی فتوے پر کوئی اعتبار نہیں جا سکتا اورکسی فتوے کی بنیاد پر کوئی بیانیہ تشکیل نہیں پا سکتا۔ یہ آئندہ چل کر پتہ چلے گا کہ اس فتویٰ سازی کے پردے میں کیا گُل کھلائے جا رہے ہیں۔

اگرچہ ہمارے سیاسی اکابرین خصوصاً صدر مملکت نے اس پیغام سے بڑی امیدیں باندھ رکھی ہیں تاہم ایک پاکستانی باشندہ ہونے کے ناطے ہمارے اپنے تحفظات ہیں جن کا  اظہار ضروری ہے۔

اسی طرح دوسرا اہم مسئلہ   یہ ہے کہ  میڈیا کے مطابق  ہمارے وزیر مذہبی امور سردار یوسف نے کہا ہے کہ  حج و عمرہ کی طرح شام و عراق اور ایران کی زیارات کو بھی آسان بنایا جائے گا۔  ہم ایک مرتبہ پھر اپنی سرکار سے یہ عرض کریں گے کہ  اگر آپ عراق اور ایران کی زیارات کو آسان کرنا ہی چاہتے ہیں تو کم از کم اُن لوگوں کے ساتھ بیٹھ کر مسائل کو جاننے کی کوشش کریں کہ جوپبلک ٹرانسپورٹ پر  زمینی سفر کرتے ہوں اور جنہوں نے عراق و ایران کے زمینی سفر کے  مسائل کو درک کیا ہے۔

بند کمروں میں، منرل واٹر پی کر اور ٹشو پیپر کے ساتھ گیلے ہاتھوں کو خشک کر کے  ایران و عراق کے زمینی سفر کے مسائل کو نہ ہی تو سمجھا جا سکتا ہے اور نہ اس طرح حل کیا جا سکتا ہے۔

ہمیں قومی مسائل کے حل کے لئے ہر سطح پر سماجی بیانیہ تشکیل دینا ہوگا۔ فتویٰ بھی جب تک عادلانہ  بیانیے میں نہ ڈھلے اور  ارباب حل و عقد بھی سماجی عدل کے معیارات پر پورے نہ اتریں تو  قومی مسائل کے لئے کی جانے والی کوششوں کو شک کی نگاہ سے دیکھنا ہر پاکستانی کا حق بنتا ہے۔

تحریر۔۔۔نذر حافی

This email address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.

وحدت نیوز(مظفرآباد) سید غفران علی کاظمی سیکریٹری جنرل مجلس وحدت مسلمین مظفرآباد نے کہا ہے کہ مظفرآبادکی قابل پولیس اندھے قتل کے قاتلوں کو ایک ہفتہ میں راولپنڈی اور سیالکوٹ سے پکڑ لائی ،گزشتہ کچھ روز قبل گہوترکے مقام سے نامعلوم شخص کی لاش برآمد ہوئی تھی جس کی شناخت نہ ہونے پر سٹی پولیس مظفرآباد نے میت کو امانتاََ دفن کر دیا تھا  مظفرآباد کی ایماندار و قابل پولیس نے اپنی کارکردگی کا مظاہرے کرتے ہوئے قاتلوں کو راولپنڈی و سیالکوٹ سے گرفتار کر لیا۔لیکن سمجھ اس بات کی نہیں آتی کے ایک ریاست کے باشندے علامہ تصور الجوادی اور ان کی اہلیہ پر دن دھاڑے قاتلانہ حملہ کرنے والوں کو یہی قابل پولیس ایک سال مکمل ہونے کے بعد بھی گرفتار نہ کر سکی حکومت کی بے بسی واضح طور پر نظر آرہی ہے یا حکومت اس معاملہ کو سنجیدگی سے نہیں دیکھ رہی۔ ہم حکومت اور انتظامیہ کو باخبر کر دیناچاہتے ہیں کہ 15 فروی 2018 کو جو احتجاج مظفرآباد میں ہوگا وہ مجرموں کی گرفتاری تک نہ ختم ہونے والااحتجاج ہوگا،اب معاملہ مذاکرت سے حل نہیں کیا جائے گا۔

وحدت نیوز(ہری پور) قصور میں ظلم کا شکار بننے والی معصوم بچی زینب کے قاتلوں کی عدم گرفتاری باعث تشویش ہے اگر ملزمان جلد گرفتار نہ ہوئے تو یہ پنجاب حکومت اور پولیس کی بہت بڑی ناکامی ہوگی ا ن خیالات کا اظہار مجلس وحدت مسلمین خیبر پختون خواہ کی صوبائی سیکرٹری جنرل راضیہ جعفری صوبا ئی ڈپٹی سیکرٹری جنرل روبینہ واجد اور ضلعی جنر ل سیکرٹری تصور نقوی نے ایم ڈبلیوایم کے زیر اہتمام احتجاجی مظاہرہ سے خطاب کرتے ہوئے کیا جس مجلس وحدت کی عہدیداروں اور کارکنوں نے شرکت کی احتجاجی مظاہرین نے ہاتھوں میں پلے کارڈ اٹھا رکھے تھے جن پر زینب کو انصاف دو ہم زینب کے ساتھ کھڑے ہیں سمیت دیگر نعرے درج تھے ۔

راضیہ جعفری نے کہا کہ اسلام امن وآشتی کا مذہب ہے جس میں کسی شخص چاہے اس کا مذہب و مسلک کوئی بھی ہو اس کے خلاف ظلم کی اجازت نہیں دی جاتی لیکن مقام افسوس ہے کہ اسلام کے نام پرحاصل ملک میں نہ صرف مرد و خواتین بلکہ معصوم بچے بھی اس ظلم سے محفوظ نہیں جس سے اسلام اور وطن عزیز کی بھی بدنامی ہورہی ہے اور دوسری طرف معصوم جانوں پر ظلم و بربریت کے پہاڑ توڑے جارہے ہیں اگر اب بھی ہم نے ہوش کے ناخن نہ لیے تو آنے والے وقت میں یہ ظلم مزید بڑھے گا انھوںنے والدین سے بھی مطالبہ کیا کہ وہ اپنے بچوں کی حفاظت کریں اور قریبی رشتہ داروں سمیت کسی پر بھی اعتماد نہ کریں انھوںنے مطالبہ کیاکہ معصوم زینب کے قاتلوں کو فی الفور گرفتار کرکے عبرت ناک سزا دی جائے تاکہ آئندہ کو ئی ایسے فعل کا سوچ بھی نہ سکے ان کا کہناتھاکہ اتنے دن گزرنے کے باوجود ملزم کی عدم گرفتاری حکومت اور حکومتی اداروں کی ناکامی ہے ۔

وحدت نیوز(جیکب آباد) مجلس وحدت مسلمین سندہ کے صوبائی سیکریٹری جنرل علامہ مقصودعلی ڈومکی نے کہا ہے کہ شریف خاندان کا کردار،ملکی سا لمیت اور سربلندی کے لئے خطرہ بن چکا ہے، شیخ مجیب بننے کے خواب دیکھنے والا نواز شریف یہ بات یاد رکھے کہ قوم وطن کے غداروں کو کبھی معاف نہیں کرتی۔ سانحہ ماڈل ٹاؤن کے شہداء کے خون ناحق سے انصاف ضروری ہے، آل شریف کے زوال کا آغاز ہوچکا ہے۔ ملت جعفریہ کے ہزاروں شہداء کے وارث بھی اپنے پیاروں کے خون کا انصاف طلب کرتے ہیں۔ کوئٹہ سے لے کر پاراچنار تک جن مظلوموں کا ناحق خون بہایا گیا، ہمیں ان کے لئے انصاف چاہئے۔ ملکی سیاسی قیادت جس طرح سانحہ ماڈل ٹاؤن کے شہداء کے انصاف کے لئے متحد ہوئی ہے وہ قابل تعریف ہے، انہیں چاہئے کہ پاک وطن کے ان اسی ہزار شہداء کے انصاف کے لئے بھی پرزور مطالبہ کرے جو بے جرم و خطا ملک کے گلی کوچوں میں مارے گئے۔

انہوں نے کہا کہ انڈیا اور اسرائیل کے بڑہتے ہوئے تعلقات پر تشویش ہے، حکومت کو دشمن کی ان سرگرمیوں پر گہری نظر رکھنی چاہئے۔ مجلس وحدت مسلمین ہر سطح پر ان اسلام دشمن سازشوں کو مسترد کرتی ہے، جوپاکستان دشمنی اور اسلام دشمنی پر مبنی ہوں۔ علماء اور خطباء عوام کو دشمن کی سازشوں سے آگاہ کریں، اور پاک وطن کی سلامتی اور استحکام کے لئے اپنا کردار ادا کریں۔

وحدت نیوز (گلگت)  گلگت بلتستا ن میں علم کے متلاشیوں کیلئے اعلیٰ تعلیم کے مراکز قائم کئے جائیں۔کب تک جی کے طلباء دوسرے صوبوں میں دھکے کھاتے رہیںگے جب تک متبادل بندوبست نہیں ہوسکتا تب تلک جی بی کے طلباء کی دوسرے صوبوں میں تحفظ کو یقینی بنائے جائے۔

مجلس وحدت مسلمین کی رکن گلگت بلتستان قانون ساز اسمبلی بی بی سلیمہ نے کہا ہے کہ لاہور میں دلاور عباس کے قتل سے جی بی کے طلباء عدم تحفظ کا شکار ہوگئے ہیں ۔ایک مسلم معاشرے میں علاقائی تعصب پر قتل تک کی نوبت کا آنا سمجھ سے بالاتر ہے اور پنجاب حکومت کا اس واقعے پر کوئی نوٹس نہ لینا اور قاتلوں کی گرفتار ی سے پس و پیش کرنا انتہائی مضحکہ خیز ہے۔ویسے تو پنجاب پولیس پھرتیاں دکھانے میں بڑی ماہر ہے لیکن سرعام ایک طالب علم کو تشدد کرکے ہلاک کرنے والوں کے خلاف تاحال کوئی ایکشن نہ لیکر پنجاب حکومت یہ مسیج دے رہی ہے کہ گلگت بلتستان کے لوگوں کو تحفظ فراہم کرنا پنجاب حکومت ک شاید ذمہ داری نہیں۔انہوں نے پنجاب حکومت کی اس بے حسی پر سخت خفگی کا اظہار کرتے ہوئے قاتلوں کی فوری گرفتاری کا مطالبہ کیا ہے ۔

وحدت نیوز (گلگت)  نااہل حکمرانوں نے ملک کو دلدل میں پھنسادیا ہے ،قصور میں زینب جیسی معصوم بچی کو جنسی تشدد کرکے ہلاک کرنا کسی المیے سے کم نہیں۔حکومت سنجیدہ ہوتی تو ایسے واقعات کی روک تھام کیلئے قانون سازی کرتی اور پھول جیسی بچیوں کو تحفظ فراہم کرتی ۔ملک میں جنسی تشدد اور قتل سے اندرون و بیرون ملک ہماری جگ ہنسائی ہورہی ہے اور حکمرانوں کو اپنے اقتدار کی پڑی ہے۔

مجلس وحدت مسلمین گلگت بلتستان شعبہ خواتین کی کوارڈینیٹر خواہر سائرہ ابراہیم نے ملک میں بڑھتی ہوئی بے راہ روی کو ملک وقوم کیلئے انتہائی شرمناک قرار دیا ہے۔ایک اسلامی معاشرے میں اس طرح کے واقعات نے ہمارے اسلام اسلام کے زبانی دعووں کا پول کھول دیا ہے۔امر باالمعروف اورنہی عن المنکر کو ترک کرنے سے ایسے ہی واقعات رونما ہونگے۔

انہوں نے کہا کہ انسانیت سوز مظالم کا پے درپے واقع ہونا اس بات کا ثبوت ہے کہ ہمارے نظام حکمرانی میں نقص پایا جاتا ہے۔ملک پر ایسا نظام مسلط کیا گیا ہے جہاں ایک پاک باز مومن کااقتدار تک پہنچنا ناممکن ہوچکا ہے اور کرپٹ مافیا آسانی کے ساتھ اقتدار سے چمٹ جاتا ہے۔جس نظام میں ظالم کا حساب نہ ہو اور مظلوم کو انصاف نہ ملے وہ معاشرہ ذلت کی پستیوں میں گر جاتا ہے ۔حکمرانوں میں کوئی شرم و حیا ہوتی تو قصور کے واقعے پر اپنے آپ کو اقتدار سے علیٰحیدہ کرلیتے۔

انہوں نے کہا کہ عوام جب تک ان ظالم حکمرانوں کے مقابل کھڑے نہیں ہونگے تب تلک انصاف کا قتل جاری رہے گا ،جب تک یہ قوم اسوہ شبیری پر عمل پیرا ہوکر زمانے کے یزیدی طاقتوں کو سرنگوں نہیں کرینگے اس وقت تک قوم کی معصوم بچیوں کی سرعام عصمتیں فروخت ہوتی رہینگی۔

وحدت نیوز(گلگت) پنجاب کا دارالحکومت لاہور گلگت بلتستان کے طلباء کی مقتل گاہ بن چکا ہے، دلاور عباس کا بہیمانہ قتل پنجاب حکومت کی گڈ گورننس پر سوالیہ نشان ہے۔دلاور عباس کو بہیمانہ تشدد کرکے شہید کرنے والوں کو تختہ دار پر لٹکایا جائے۔

مجلس وحدت مسلمین گلگت بلتستان کے ترجمان محمد الیاس صدیقی نے کہا ہے کہ لاہور میں دلاور عباس کا بہیمانہ قتل پر علاقے کے عوام میں شدید غم و غصہ پایا جاتا ہے پنجاب حکومت قاتلوں کو فوراً گرفتار کرکے قرار واقعی سز ا دے۔انہوں نے کہا کہ کچھ عرصہ قبل ضلع غذر سے تعلق رکھنے والے ایک جوان کو گھر کے دروازے پر قتل کیا گیا۔پنجاب حکومت کا گلگت بلتستان کے طلباء کے قتل پر کوئی نوٹس نہ لینا باعث تشویس ہے۔گلگت بلتستان کے ہزاروں طلباء اعلیٰ تعلیم کیلئے پنجاب ،سندھ اور کے پی کے میں زیر تعلیم ہیںکیونکہ گلگت بلتستان میں اعلیٰ تعلیمی اداروں کی عدم موجودگی سے ہزاروں طلباء پنجاب اور دیگر صوبوں کا رخ کرنے پر مجبور ہیں۔جی بی سے تعلق رکھنے والے طلباء کا کراچی اور لاہور میں قتل سے علاقے کے عوام میں گہری تشویش پائی جاتی ہے۔

انہوں نے جی بی حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ پنجاب حکومت سے اس طرح کے واقعات کی روک تھام کیلئے اپنا احتجاج ریکارڈ کروائیں۔انہوں نے پنجاب حکومت سے قتل کے اس اندوہناک واقعے پر فوری نوٹس لیکر قاتلوں کو گرفتار کرکے قرار واقعی سزا دلوائیں۔شہید دلاور عباس اپنے والدین کا اکلوتا سہارا تھا ان کی ناگہانی قتل سے والدین اپنے واحد سہارے سے محروم ہوچکے ہیںپنجاب حکومت لواحقین کو معقول معاوضے کی ادائیگی کرکے غمزدہ خاندان کی دلجوئی کرے۔

وحدت نیوز(سکردو) مجلس وحدت مسلمین پاکستان گلگت بلتستان کے سیکرٹری جنرل علامہ آغا علی رضو ی نے اپنے ایک تعزیتی بیان میں کہا کہ خپلو سے تعلق رکھنے والے طالب علم دلاور کے خانوادہ کو انکی المناک شہادت پر تعزیت پیش کرتے ہیں اور لواحقین سے صبر کی تلقین کرتے ہیں۔ علم کی جستجو کی راہ میں مرنے والا شہید کہلاتا ہے اور دلاور نہ صرف مسافرت میں حصول علم کی جستجو میں تھے بلکہ انکو بے گناہ شہید کر دیا گیا۔ ان کا قتل پنجاب حکومت کی کارکردگی پر سوالیہ نشان ہے۔ پنجاب کی حکومت گلگت بلتستان سمیت دیگر علاقوں کے شہریوں کو تحفظ فراہم کرنے میں نہ صرف نہ کام ہوئی ہے بلکہ لاقانیونیت عام کرنے والوں کی پشت پناہی میں مصروف ہے۔

انہوں نے کہا کہ دلاور کے حادثے کو پیش آئے کئی روز گزر گئے لیکن اطلاعات کے مطابق مقامی حکمرانوں کی مداخلت سے صرف دو نفر کی گرفتاری عمل میں آگئی ہے اور اس سانحے میں افسوسناک پہلو یہ ہے کہ ایف آئی آر جس انداز میں کاٹی گئی ہے قانونی ماہرین کے مطابق قاتلوں پہ ایسی دفعات عائد کی گئی ہے جس کا دفاع ملزمان آسانی سے کر سکتا ہے۔ اگر پنجاب حکومت سنجیدہ ہے تو ان تمام افراد جنہوں نے دلاور کو بے دردی سے شہید کیے ان سب کو گرفتار کرکے قرار واقعی سزا دی جائے۔ دو نفر کو گرفتار کر کے اوربعد میں انہیں ضمانت پر رہا کرکے گلگت بلتستان کے عوام کو بھلانے کی کوشش نہ کرے۔ ہم دلاور کے قتل میں ملوث تمام ملزمان کو عبرتناک سزا کا مطالبہ کرتے ہیں۔

 آغا علی رضوی نے کہا کہ چیف جسٹس آف پاکستان دلاور کے افسوسناک واقعے پر نوٹس لیں اور ذمہ داران کو سزا دلانے میں اپنا کردار ادا کرے ۔ پنجاب میں گلگت بلتستان کے طلباء پر یہ پہلا تشدد نہیں اس سے پہلے بھی اس طرح کے افسوسناک واقعات پیش آتے رہے ہیں ان تمام واقعات کی روک تھام کے لیے چیف جسٹس آف پاکستان اور آرمی چیف اپنا کردار ادا کرے۔

وحدت نیوز (لاہور) مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی ڈپٹی سیکریٹری جنرل سید ناصرعباس شیرازی اور چیئرمین سنی اتحاد کونسل صاحبزادہ حامد رضا کی سابق وزیر اعلیٰ پنجاب اور مسلم لیگ ق کے مرکزی رہنما چوہدری پرویز الہیٰ سے وفد کے ہمراہ  ان کی رہائش گاہ پر ملاقات،تینوں  رہنماوں کے درمیان دو طرفہ دلچسپی کے امورسمیت قومی سیاسی صورت حال پر تفصیلی  تبادلہ خیال  کیا گیا، اس موقع پر ایم ڈبلیوایم کے مرکزی سیکرٹری امور سیاسیات سید اسد عباس نقوی ، مرکزی ڈپٹی سیکرٹری امور خارجہ علامہ ظہیر الحسن نقوی،سیکریٹری جنرل پنجاب علامہ مبارک موسوی ، صوبائی سیکرٹری سیاسیات سید حسن رضا کاظمی  اور کوآرڈینیٹر شعبہ سیاسیات  آصف رضا ایڈووکیٹ بھی موجود تھے ۔

وحدت نیوز (لاہور) مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے سربراہ علامہ راجہ ناصر عباس نے اپوزیشن جماعتوں کے مشترکہ اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ماڈل ٹاؤن میں خون کی ہولی کھیلی گئی، لیکن افسوسناک امر یہ ہے کہ قاتل تاحال برسر اقتدار ہیں۔ انہوں نے کہا کہ قاتل اعلٰی کہتے تھے مجھ پر انگلی اٹھی تو فوری طور پر مستعفی ہو جاؤں گا، انگلی ہی نہیں پورا بازو ان کی طرف اٹھا ہے، لیکن وہ استعفٰی نہیں دے رہے۔

 علامہ ناصر عباس جعفری نے کہا کہ قصور میں 12 بچیوں کو زیادتی کے بعد قتل کیا گیا لیکن حکومت سوئی ہوئی ہے، قاتل تک گرفتار نہیں ہوئے۔ انہوں نے کہا کہ نواز شریف مجیب الرحمان بن رہا ہے، جہالت کی انتہا دیکھیں یہ مجیب الرحمان بن رہے ہیں، جس نے پاکستان توڑا تھا، نواز شریف بتائیں اب یہ پاکستان کا کون سا حصہ توڑنے کا سودا کرچکے ہیں۔ یہ مودی کا یار پاکستان کیلئے سکیورٹی رسک بنتا جا رہا ہے۔ ان کو مزید وقت دینا پاکستان کیلئے نقصان دہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ عوام قاتلوں کا پیچھا نہیں چھوڑیں گے، آج کا احتجاج سانحہ ماڈل ٹاؤن کے قاتلوں کیخلاف ہے، قاتل حکمرانوں کے ہاتھ جو چیز آئی تباہ ہوگئی، آج پنجاب کا ہر شہر قصور بنا ہوا ہے، لیکن یہ ایسے خود غرض ہیں کہ پھر بھی پوچھ رہے ہیں کہ مجھے کیوں نکالا، ہم بتاتے ہیں تمھیں تمھارے کرتوتوں کی وجہ سے نکالا گیا ہے۔

Page 1 of 809

مجلس وحدت مسلمین پاکستان

مجلس وحدت مسلمین پاکستان ایک سیاسی و مذہبی جماعت ہے جسکا اولین مقصد دین کا احیاء اور مملکت خدادادِ پاکستان کی سالمیت اور استحکام کے لیے عملی کوشش کرنا ہے، اسلامی حکومت کے قیام کے لیے عملی جدوجہد، مختلف ادیان، مذاہب و مسالک کے مابین روابط اور ہم آہنگی کا فروغ، تعلیمات ِقرآن اور محمد وآل محمدعلیہم السلام کی روشنی میں امام حسین علیہ السلام کے ذکر و افکارکا فروغ اوراس کاتحفظ اورامر با لمعروف اور نہی عن المنکرکا احیاء ہمارا نصب العین ہے 


MWM Pakistan Flag

We use cookies to improve our website. Cookies used for the essential operation of this site have already been set. For more information visit our Cookie policy. I accept cookies from this site. Agree