The Latest

breaking-news

کراچی میں یوم القدس کی ریلی میں شرکت کے لئے آنے والی بس پر بم حملے سے ایک شہید اور متعدد زخمی ہوئے ہیں دھماکے کے بعد فایرنگ میں بھی کی گئی جبکہ ٹی وی چینلز نے تین

افراد کی شہادتوں کی خبر دی ہے 
ابتدائی معلومات کے مطابق یہ واقعہ سفاری پارک کے قریب پیش آیا تفصیلات آرہی ہیں جہاں سے یوم القدس کے شرکائ کو لیکر بسیں نمائش چورنگی جا رہیں تھیں بتایا جارہا ہے کہ بسوں میں زیادہ تر جامعہ کراچی کے طلبہ تھے آئی جی پولیس نے بم دھماکے کو سی این جی دھماکہ قراردینے کی کوشش کی جبکہ میڈیا ان کے سفید جھوٹ کا پول کھودیا کہ آئی جی اصل بات کو چھپانے کی کوشش کر رہا ہے 
دھماکے سے پانچ سے چھ بسوں کو نقصان پہنچا اور پولیس کی جانب سے سیکوریٹی ہائے الرٹ کے دعوئے جھوٹ پر مبنی نکلے ادھر ایم ڈبلیو ایم میڈیا سیل کراچی نے تصدیق کی ہے کہ اب تک اس بم دھماکے میں ایک شخص کی شہادت ہوچکی ہے جبکہ دو مزید افراد کی شہادتوں کی خبریں آرہی ہیں انہوں نے کہا کہ بمدھماکے سے قبل بس پر فائرنگ بھی کی گئی ہے 

exclusive
گلگت بابوسر دہشت گردی میں معجزانہ طور پر بچنے والے استور کے 22 سالہ امتیاز نامی نوجوان کا کہنا ہے کہ حملہ آوروں کی تعداد 30 سے 40 تک تھی۔ جن کے لمبے بال تھے اور کمانڈو وردی میں ملبوس تھے۔ جن کے ہاتھوں میں رسہ، بلیٹ، میں خنجر بھی تھے۔ انہوں نے بتایا کہ حملہ آوروں نے چاروں اطراف سے گھیر لیا اور مسافروں کے شناختی کارڈز چیک کیے اور مشکوک لوگوں سے کلمہ بھی پوچھا۔ حملہ آور بول رہے تھے اور لب و لہجہ سے خیبرپختونخواہ سے تعلق رکھتے تھے اور ان کے لمبے بالوں سے گمان تھا کہ وہ خواتین ہیں۔ اپنے بارے میں بتایا کہ دوران شناخت وہ گاڑی کے نیچے گھس گئے اور گاڑی کے ٹینک سے لپٹ کر بیٹھے رہے، جب غیر مطلوب لوگوں کو گاڑی میں بٹھا کر روانہ کر دیا تو ڈیڑھ کلومیٹر دور جا کر ڈرائیور سے خیریت معلوم کی اور گاڑی میں بٹھا کر علاقے سے نکال دیا۔ 
عینی شواہدین نے بتایا کہ مرنے والوں کی تعداد 20 سے 25 تک ہے۔ جن میں زیادہ کا تعلق استور سے ہے۔ 11 افراد کا تعلق استور سے، 2 کا تعلق کراچی سے، 2 کا نگر سے اور ایک شخص کا تعلق بگروٹ سے اور 2 کا تعلق گوجر خان پنجاب سے ہے۔ یاد رہے 30 جولائی 2012ء کو مرکزی حکومت وزارت داخلہ سے سیکرٹری داخلہ کے ایک مراسلہ آیا جن میں شاہراہ قراقرم پر دہشت گرد دوبارہ سے کوئی کارروائی کرنے کا منصوبہ بنا رہے ہیں۔ سانحہ کوہستان میں ملوث فاروق نامی دہشت گرد جس کا تعلق جاگیر من عبدالجبار کا بیٹا ہے، اپنے دہشت گرد ساتھیوں جن کا تعلق مکار کوئی جاگیر بین اور کشروٹ سے ہے رابطہ میں ہے۔ انہیں کوہستان آنے کی دعوت دے رہا ہے۔ اس خدشے کا اظہار مرکزی مسجد بو کمیٹی کے چیف سیکرٹری کے آفس میں ایک مہینہ قبل آئی ایس آئی کے کرنل نے اپنے بریفینگ میں بتایا تھا لیکن مقامی حکومت اور ایجنسیاں دہشت گردوں کے نیٹ ورک کو توڑنے اور ان کی نقل و حمل کو تباہ کرنے کی بجائے انہیں مواقع فراہم کر رہے ہیں تاکہ وہ مذید منظم انداز میں گلگت بلتستان میں شیعوں کا قتل عام کریں۔ سانحہ منادر کے پس پردہ حقائق کو اب تک حکومت منظر عام تک نہیں لائی بلکہ چلاس، کوہستان میں طالبان دوبارہ منظم ہو رہے ہیں، جس کے بارے میں ایجنسیوں کو پہلے سے معلوم ہے۔ مگر کارروائی کرنے سے گریز کر رہی ہے۔ نامعلوم حکومت اپنی ذمہ داریوں سے چشم پوشی کیوں کر رہی ہے؟

سابق چرمین بلدیہ گلگت کیا کہتے ہیں؟
سانحۃ بابوسر چلاس محض ایک حادثہ نہیں بلکہ مکمل منصوبہ و سازش ہے۔ وزارت داخلہ نے قبل از وقت علاقے میں سرگرم دہشت گردوں کی جانب سے ممکنہ دہشت گردی کا خدشہ ظاہر کرتے ہوئے دہشت گردوں کے نام گلگت بلتستان حکومت کو آگاہ کیا لیکن کسی کے کان پر جوں تک نہیں رینگی۔ جس کا نتیجہ درجنوں بے گناہ مسافروں کو شہید کیا گیا۔ ان خیالات کا اظہار محمد الیاس سابق چیئرمین بلدیہ گلگت اور آرگنائزر آل مسلم لیگ نے اپنے بیان میں کیا۔ انہوں نے کہا کہ ضلع دیامر میں طالبان دہشت گردوں کا نیٹ ورک منظم ہو چکا ہے۔ جس کا ثبوت مسلسل تین دہشت گردی کے واقعات ہیں لیکن حکومت نے نہ تو گزشتہ دہشت گردی کے ذمہ داروں کے خلاف کوئی کارروائی کی، محض نام بتا دیا، ہر جرگے سے ملی بھگت کر کے چند افراد کی گرفتاری پر اکتفاء کیا لہٰذا اس مجرمانہ غفلت اور ملی بھگت پر دیامر جرگے کے اراکین کے خلاف دہشت گردی میں مدد دینے کی پاداش ہیں۔ دہشت گردی ایکٹ کے خلاف مقدمات درج کیے جائیں ورنہ گلگت بلتستان کو سوات اور وزیرستان بنانے کی ناپاک سازش کامیاب ہو سکتی ہے

isd

مجلس وحدت مسلمین اسلام آباد اور راولپنڈی کے زیر اہتمام جی سکس مرکزی جامع مسجد سے ایک احتجاجی ریلی بر آمد ہوئی جس کی قیادت ڈپٹی سیکرٹری پنجاب علامہ اصغر عسکری ,ایم ڈبلیوایم اسلام آباد و پنڈی کے سیکرٹری صاحبان مولانا فخر عباس علوی اور مسرورنقوی کے علاوہ علامہ شیخ سخاوت قمی کر رہے تھے جبکہ انجمن دعائے زہرا اور دیگر انجمنوں کے ذمہ دار بھی شریک تھے
ریلی مرکزی مسجد سے برآمد ہوکر علم غازی عباس علمدار ع کے سائے میں ڈی چوک پہنچی جہاں شرکاء نے علامتی دھرنا دیا اور تقاریر کیں
اپنی تقاریر میں علامہ اصغرعسکری اور علامہ سخاوت قمی نے جی بی حکومت کو اس سانحے کا اصل ذمہ دار ٹھراتے ہوئے کہا کہ حکومت نے سانحہ چلاس اور سانحہ کوہستان میں کئی ہوئے وعدوں میں سے ایک بھی پورا نہیں کیا بلکہ استور جیل سے ناقص حکومتی انتطامات کے سبب خطرناک دہشتگرد فرار ہوئے
مقررین نے کہا کہ یوں لگتا ہے کہ حکومتی اداروں اور سیکوریٹی فورسز کو اہل تشیع کے قتل عام کا کوئی دکھ نہیں کیونکہ اس سلسلے میں کسی بھی قسم کے اقدامات نہیں کئے جارہے
مقررین عدلیہ پر بھی کڑی تنقید کرتے ہوئے کہا چیف جسٹس اور عدلیہ لگتا ہے کہ غیر جانب دار ادارہ نہیں رہا کیونکہ اہل تشیع کے قتل عام کا کہیں بھی ایک دفعہ نوٹس نہیں لیا گیا بلکہ الٹا دہشت گردوں کو آزاد کیا جارہا ہے

Allama-Raja-Nasir

سیکرٹری جنرل مجلس وحدت مسلمین پاکستان علامہ راجہ ناصر عباس جعفری کا سانحہ بابوسر ٹاپ گلگت اور کامرہ پر تعزیتی پیغام

انا للہ و انا الیہ راجعون
ایک بار پھر ماہ رمضان میں دین اور وطن دشمن قوتوں نے وطن عزیز کے باوفا سپوتوں کو اپنی بربریت کا نشانہ بنایا ہے۔ آج جبکہ رمضان المبارک کےآخری عشرے میں امت مسلمہ عبادت میں مصروف ہے توسفاک دہشت گردوں نے کامرہ ایئربیس پر حملہ کر کے ایک جوان کو شہید کر دیا جبکہ دوسری طرف گلگت جانے والی مسافر بسوں پر حملہ کر کے 20 سے زائد بے گناہ مسافروں کو شہید کر دیا۔
ہم ان وحشت ناک اور المناک سانحوں سے گھبرائیں گے نہیں اور نہ ہی ان سانحوں کا مقابلہ سر جھکا کر کریں گے بلکہ ہم آل محمد ؐ کی محبت میں بڑی سے بڑی قربانی دینے کے لیے ہمیشہ تیار ہیں اور تیار رہیں گے۔
ہمیں اب یقین ہو چکا ہے کہ ہمارے قاتل ریاستی سرپرستی میں ہمارا قتل عام کر رہے ہیں۔ اتنے بڑے سانحوں کے بعد بھی دہشت گردوں کے خلاف آپریشن نہ کرنا اور ان کے خلاف ایکشن نہ لینا اس بات کی دلیل ہے کہ سفاک دہشت گرد ریاستی سرپرستی میں ملت تشیع کا قتل عام کر رہے ہیں۔
اے عظیم ملت تشیع پاکستان! ان سانحات سے مایوس نہ ہونا بلکہ اپنی باہمی وحدت و اتحاد کو اور زیادہ مضبوط کرنا۔ ہم چودہ سو سال سے یزیدیت کے تعاقب میں ہیں، دہشت گردی اور بربریت ،راہ حق سے ہمیں ہر گز ہٹا نہیں سکتی۔ دہشت گردوں کے دن گنے جا چکے ہیں اور انشاء اللہ فتح و کامرانی مظلوموں کی ہو گی۔
ہم جانتے ہیں کہ اصلی دشمن کون ہے۔ آج شام سے لے کر سانحہ بابوسرٹاپ گلگت تک دین داروںکے قتل عام کے پیچھے عالمی سامراج خاص کر امریکہ اور اسرائیل اور اس کے گماشتوں کا کام ہے۔
گلگت بلتستان کے راستوں مسلسل ایک ہی انداز میں محبان وطن کا قتل عام سکیورٹی کے اداروں کے لیے ایک ایسا بنیادی سوال ہے جو اب ہر خاص و عام کے ذہن میں پیدا ہو چکا ہے۔
میں آخر میں ملت کے تمام ذمہ داروں سے دست بستہ اپیل کرتا ہوں کہ ان نازک حالات میں اپنے تمام تر اختلافات کو بھلا کر اکٹھے ہو جائیں اور مل کر راہ حل کو تلاش کریں۔ میں اس المناک سانحے پر امام زمانہ ؑ ، رہبر مسلمین آیت اللہ خامنہ ای اور شہداء کے گھرانوں اور پاکستان کی عوام کو تعزیت پیش کرتا ہوں۔
والسلام علیکم ورحمۃ اللہ و برکاۃ
ناصر عباس جعفری
مرکزی سیکرٹری جنرل
مجلس وحدت مسلمین پاکستان

ameen

کراچی مجلس و حدت مسلمین کراچی ڈویژن کی جانب سے کاغان کے علاقے بابوسرمیں گلگت جانے والی مسافر بس پر حملے 25 سے زائد شیعہ مسافروں کی المناک شہادتوں کے خلاف محفل

شاہ خراسان سے احتجاجی ریلی نکالی گئی اس ریلی سے خطاب کرتے ہوئے مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے رہنما مولانا امین شہیدی مولانا مرزایوسف حسین علامہ آغا آفتاب جعفری، مولانا محمد کریمی،محمد مہدی ،علی اوسط کہنا تھا کے وفا قی و صوبائی حکومت کی جانب سے ملت جعفریہ کو عید الفطر کا تحفہ 25خون آلود لاشوں کی صورت میں موصول ہوگیا ہے۔حکومت اور قانون نافذ کرنے والے ادارے ملت جعفریہ کے تحفظ میں ناکامی پر مستعفی ہو جائیں ۔استعماری تنخواہ دار مزدور پاکستان میں امریکی ٹھیکے پر ملت جعفریہ کی نسل کشی میں مصروف ہیں گذشتہ 6 ماہ میں مذہبی دہشت گردی کا یہ مسلسل تیسر ا بڑا دردناک سانحہ رونما ہو گیا اور ہمارے ملک کے اعلی ٰ اختیاراتی ادارے عدلیہ ، حکومت اورفوج خاموش تماشائی بنی بیٹھی ہے اگر ماہ اپریل میں چلاس کے مقام پر اور اس سے پہلے کوہستان میں40 بیگناہ شیعہ مسافروں کی جن میں خواتین ، بچے، بزرگ اور جوان بھی شامل تھے کی بسوں سے اتار کر گولیوں سے بھونے جانے کا سختی سے نوٹس لے لیا جاتا اور دہشت گردوں کو کیفرکردار تک پہنچایا جاتا تو آج یہ اور مزید 20 جنازے نہ اٹھانے پڑتے حکومت وقت کو متنبہ کرتے ہیں کے جلد از جلد کوہستان ، چلاس ، بابوسر اور دیگر علاقوں میں پہلے ہوئے دہشت گردوں کے اس نیٹ ورک کے خلاف آپریشن کلین اَپ کرے ورنہ ملت جعفریہ اپنے دفاع کا حق محفوظ رکھتی ہے۔اس موقع پر مظاہرین کی بہت بڑی تعداد موجود تھی جو دہشتگردوں ، حکومت اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کے خلاف نعرے لگا رہے تھ

fida

مجلس وحدت مسلمین پاکستان بلتستان ڈویژن کے ترجمان فدا حسین نے اپنے ایک بیان چلاس میں بابوسر کے مقام پر ہونے والے المناک سانحے کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ سانحہ بابوسر کو گلگت بلتستان حکومت کی طرف سے عوام کو یوم آزادی کے موقع پر تحفہ سمجھیں یا عید کے موقع پر عیدی۔؟ انہوں نے کہا اس جیسے حادثے کا امکان اس وقت سے متوقع تھا، جب سے حکومت کی ملی بھگت سے چلاس اور استور سے انتہائی خطرناک نوعیت کے دہشت گردوں کو چھڑایا گیا تھا۔ ماہ رمضان مبارک میں امریکہ کے ایجنٹوں کی یہ سیاہ کاری ہے، جنہیں جی بی حکومت نے کھلی چھوٹ دے رکھی ہے۔

فدا حسین نے مزید کہا کہ ہم گلگت بلتستان میں امریکی مداخلت اور پر اسرار سرگرمیوں کے بارے میں بالخصوص یو ایس ایڈ کے حوالے سے حکومت کو واضح کرتے رہے ہیں لیکن حکومت چند کھوٹے سکوں کی خاطر بھیگی بلی بنی رہی اور اپنا حصہ وصول کرتی رہی ہے۔ اگر اب بھی حکومت بالخصوص پاک فوج گلگت بلتستان میں امریکہ اور اس کے ایجنٹوں کی سرگرمیوں کو نہیں روکتی ہے تو وہ دن دور نہیں جب امریکہ اور اس کے ایجنٹ گلگت بلتستان کو بھی افغانستان بنا کر دم لیں گے۔

qarihanifپچیس سے زائد افراد کی المناک شہادت پر گلگت میں خومر سڑک کو احتجاجا مظاہرین نے بلاک کردی ہے جبکہ بلتستان میں مجلس وحدت مسلمین بلتستان کی جانب سے یادگار چوک پر احتجاج جاری ہے احتجاج کی قیادت مقامی ایم ڈبلیو ایم رہنماوں کے علاوہ مرکزی سیکریٹری امور جوان علامہ اعجاز بہشتی بھی کر رہے ہیں جبکہ معروف اور ہر دلعزیز عالم دین آغا علی موسوی بھی تشریف فرما ہیں
مظاہرین کا مطالبہ ہے کہ قاتلوں کو فوری طور پر گرفتار کیا جائے اور واقعے پر ذمہ دار اپنی ناہلی کو تسلیم کرتے ہوئے مستعفی ہو جائیں
مظاہرین کا مطالبہ ہے کہ قاری حنیف کے جنازے کو مانسرہ سے سکردو لایا جائے

Allama-Raja-Nasir1-300x199

سیکرٹری جنرل مجلس وحدت مسلمین پاکستان علامہ راجہ  ناصر عباس جعفری کا سانحہ بابوسر ٹاپ گلگت اور کامرہ پر تعزیتی پیغام

انا للہ و انا الیہ راجعون
ایک بار پھر ماہ رمضان میں دین اور وطن دشمن قوتوں نے وطن عزیز کے باوفا سپوتوں کو اپنی بربریت کا نشانہ بنایا ہے۔ آج جبکہ رمضان المبارک کےآخری عشرے میں امت مسلمہ عبادت میں مصروف ہے توسفاک دہشت گردوں نے کامرہ ایئربیس پر حملہ کر کے ایک جوان کو شہید کر دیا جبکہ دوسری طرف گلگت جانے والی مسافر بسوں پر حملہ کر کے 20 سے زائد بے گناہ مسافروں کو شہید کر دیا۔
ہم ان وحشت ناک اور المناک سانحوں سے گھبرائیں گے نہیں اور نہ ہی ان سانحوں کا مقابلہ سر جھکا کر کریں گے بلکہ ہم آل محمد ؐ کی محبت میں بڑی سے بڑی قربانی دینے کے لیے ہمیشہ تیار ہیں اور تیار رہیں گے۔
ہمیں اب یقین ہو چکا ہے کہ ہمارے قاتل ریاستی سرپرستی میں ہمارا قتل عام کر رہے ہیں۔ اتنے بڑے سانحوں کے بعد بھی دہشت گردوں کے خلاف آپریشن نہ کرنا اور ان کے خلاف ایکشن نہ لینا اس بات کی دلیل ہے کہ سفاک دہشت گرد ریاستی سرپرستی میں ملت تشیع کا قتل عام کر رہے ہیں۔
اے عظیم ملت تشیع پاکستان! ان سانحات سے مایوس نہ ہونا بلکہ اپنی باہمی وحدت و اتحاد کو اور زیادہ مضبوط کرنا۔ ہم چودہ سو سال سے یزیدیت کے تعاقب میں ہیں، دہشت گردی اور بربریت ،راہ حق سے ہمیں ہر گز ہٹا نہیں سکتی۔ دہشت گردوں کے دن گنے جا چکے ہیں اور انشاء اللہ فتح و کامرانی مظلوموں کی ہو گی۔
ہم جانتے ہیں کہ اصلی دشمن کون ہے۔ آج شام سے لے کر سانحہ بابوسرٹاپ گلگت تک دین داروںکے قتل عام کے پیچھے عالمی سامراج خاص کر امریکہ اور اسرائیل اور اس کے گماشتوں کا کام ہے۔
گلگت بلتستان کے راستوں مسلسل ایک ہی انداز میں محبان وطن کا قتل عام سکیورٹی کے اداروں کے لیے ایک ایسا بنیادی سوال ہے جو اب ہر خاص و عام کے ذہن میں پیدا ہو چکا ہے۔
میں آخر میں ملت کے تمام ذمہ داروں سے دست بستہ اپیل کرتا ہوں کہ ان نازک حالات میں اپنے تمام تر اختلافات کو بھلا کر اکٹھے ہو جائیں اور مل کر راہ حل کو تلاش کریں۔ میں اس المناک سانحے پر امام زمانہ ؑ ، رہبر مسلمین آیت اللہ خامنہ ای اور شہداء کے گھرانوں اور پاکستان کی عوام کو تعزیت پیش کرتا ہوں۔
والسلام علیکم ورحمۃ اللہ و برکاۃ
ناصر عباس جعفری
مرکزی سیکرٹری جنرل
مجلس وحدت مسلمین پاکستان

breaking-news
سانحہ بابوسر ٹاپ میں اب تک کی اطلاعات کے مطابق پچیس سے تیس افراد کی شہادت کنفرم ہوچکی ہے جبکہ اطلاعات آرہی ہیں کہ اس سانحے میں پانچ سے چھ علمائے کرام بھی شہید کئے گئے ہیں جن میں 
میں سے ایک عالم دین کی شناخت ہوگئی 
مولانا شیخ قاری حنیف کا تعلق استور سے تھا لیکن وہ پچھلے کئی سالوں سے کراچی میں آباد تھے جبکہ سکردو میں بھی ان کی رہائش تھی 
اس کے علاوہ شہداء میں غلام نبی ،مشرف،یعقوب ،ڈاکٹر نثا،ردولت علی ،اشتیاق،ساجد،مظاہر،جلال الدین،غلام مصطفی شامل ہیں جبکہ باقی شہداء کی شناخت جاری ہے

breaking-newsراولپنڈی سے گلگت جانے والی بسوں سے مسافروں کو اتار کر25افراد کو گولیوں کا نشانہ بنایاگیا

اطلاعات کے مطابق راولپنڈی سے گلگت جانے والی4بسیں جب ناران کے علاقے میں پہنچیں تو تقریباً 40دہشت گردوں نے جو فوجی وردیوں میں ملبوس تھے ،ان بسوں کو محاصرے میں لے کر تمام مسافروں کو شناختی کارڈ دیکھ دیکھ کر شیعانِ حیدرِکرار ؑ کو قطار میں کھڑا کرکے گولیوں سے چھلنی کرکے شہید کردیا۔شہید ہونےوالوں کی تعداد 25سے زائدبتائی جاتی ہے۔  شہیدہونے والے افراد میں معروف عالم دین قاری حنیف صاحب بھی شامل ہیں ۔
اس دلخراش سانحے پر مجلس وحدت مسلمین کے قائدین نے دس روزہ سوگ اور عید الفطر کو یوم سوگ کے طور پہ منانے کا اعلان کیاہے۔ مرکزی سیکرٹری روابط ملک اقرار حسین، پنجاب کے ڈپٹی سیکرٹری جنرل علامہ اصغر عسکری اور دیگر قائدین نے اس سانحے پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اگر اس سے پہلے سانحہ چلاس اور سانحہ کوہستان کے مجرموں کو تختہ دار پر لٹکایا جاتا تو آج سینکڑوں خاندان سوگوار نہ ہوتے ۔انہوں نے کہا کہ عید سے دو روز قبل کامرہ میں طالبان کا حملہ اور بسوں پر نہتے مسافروں پر فائرنگ ایک ہی سلسلے کی کڑی ہے اور ایسی سنگین واردات سیکوریٹی اداروں کی نہ بے بسی کو ظاہرکرتی ہے بلکہ اب ان کی وفاداری پر سوالیہ نشان بھی اٹھارہی ہے ۔تسلسل کے ساتھ ایسے بڑے سانحات وزیر اعلی گلگت بلتستان کی نہ صرف ناہلی کو بیان کرتےہیں بلکہ صوبائی اور مرکزی حکومت کی مجرمانہ غفلت پر بھی دلالت کرتے ہیں۔

مجلس وحدت مسلمین پاکستان

مجلس وحدت مسلمین پاکستان ایک سیاسی و مذہبی جماعت ہے جسکا اولین مقصد دین کا احیاء اور مملکت خدادادِ پاکستان کی سالمیت اور استحکام کے لیے عملی کوشش کرنا ہے، اسلامی حکومت کے قیام کے لیے عملی جدوجہد، مختلف ادیان، مذاہب و مسالک کے مابین روابط اور ہم آہنگی کا فروغ، تعلیمات ِقرآن اور محمد وآل محمدعلیہم السلام کی روشنی میں امام حسین علیہ السلام کے ذکر و افکارکا فروغ اوراس کاتحفظ اورامر با لمعروف اور نہی عن المنکرکا احیاء ہمارا نصب العین ہے 


MWM Pakistan Flag

We use cookies to improve our website. Cookies used for the essential operation of this site have already been set. For more information visit our Cookie policy. I accept cookies from this site. Agree