The Latest

press.khatabمجلس وحدت مسلمین صوبہ پنجاب کے ضلعی عہدیداران کا اجلاس لاہور میں مرکزی ڈپٹی سیکرٹری جنرل علامہ محمد امین شہیدی کے زیرصدارت منعقد ہوا، جس میں پنجاب کے 37 اضلاع کے نمائندون نے شرکت کی۔ اجلاس صبح نو بجے سے شام پانچ بجے تک جاری رہا، جس میں موجودہ ملکی صوتحال اور آئندہ انتخابات سمیت ملکی سیاسی صورتحال کا تفصیلی جائزہ لیا گیا۔ تمام اضلاع نے اپنی سیاسی اور ملی حکمت عملی سے صوبائی کابینہ کو آگاہ کیا۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے ایم ڈبلیو ایم پاکستان کے مرکزی ڈپٹی سیکرٹری جنرل علامہ محمد امین شہیدی نے کہا کہ پاکستان کو درپیش داخلی اور خارجی چیلنجز سے نمٹنے کیلئے تمام محب وطن قوتوں کا اتحاد نہایت ضروری ہے۔
اُنہوں نے کہا کہ دہشت گردی، کرپشن، لاقانونیت اور بے روزگاری ملکی استحکام کیلئے ایک بڑا چیلنج ہے اور ضرورت اس امر کی ہے کہ تمام محب وطن قوتیں سر جوڑ کر بیٹھیں اور ملک کو ان بحرانوں سے نکالنے کیلئے جدوجہد کریں۔ علامہ امین شہیدی نے کراچی اور کوئٹہ میں بڑھتی ہوئی دہشت گردی اور ٹارگٹ کلنگ کے واقعات پر سخت تشویش کا اظہار کرتے ہوئے حکومت سے مطالبہ کیا کہ کراچی اور کوئٹہ میں فوری طور پر فوجی آپریشن کیا جائے، تاکہ لوگوں کو تحفظ اور امن مہیا کیا جاسکے۔

allama hasan zafar mwmمجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی ترجمان نے کہا ہے کہ کراچی کے مومنین نے ہمیشہ ملت جعفریہ پاکستان کے لئے روڈ میپ دیا ہے، ملت جعفریہ کی بیداری کے لئے کراچی کے مومنین ہمیشہ صف اول کا کردار ادا کرتے رہے ہیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے نمائش چورنگی پر منعقدہ کفن پوش دھرنے کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ علامہ حسن ظفر نقوی کا کہنا تھا کہ آج کراچی کے مومنین نے 36 گھنٹوں پر مشتمل دھرنا دے کر یہ ثابت کر دیا کہ دشمن چاہے کتنی سازشیں کرلے لیکن یہ ملت جعفریہ اپنے حقوق کی جنگ کے لئے ہر میدان عمل میں موجود ہے، آج یہاں ملت کی تمام تنظیمیں، ماتمی انجمنیں و دیگر ادارے ایک ساتھ ہیں۔ انہوں نے سکیورٹی اداروں کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ اے ایجنسیوں آؤ اور نمائش چورنگی کے اس منظر کو دیکھو، آج اس ملت جعفریہ نے تمہارے اربوں ڈالر ضائع کر دیئے ہیں، تم نے جو اس ملت کو تقسیم کرنے کی سازش کی تھی وہ اس ملت نے آج اپنی بیداری اور اتحاد سے ناکام بنا دی ہے۔

yafiz naveed mwmمجلس وحدت مسلمین پاکستان کے سیکرٹری تعلیم یافث نوید کا کہنا ہے کہ امامیہ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن کے نوجوانوں کو یہ سعادت حاصل ہے کہ یہ نوجوان ہر سال عاشور کے بعد پورے پاکستان کے تعلیمی اداروں میں امام حسین (ع) کی عظیم قربانی کو خراج تحسین پیش کرنے کے لیے یوم حسین (ع) منعقد کرتی ہے جو کہ اُن کا حق ہے، گزشتہ چند سالوں سے کچھ شرپسندوں کو یوم حسین (ع) سے تکلیف ہو رہی ہے اور یہ بات واضح ہے کہ امام حسین (ع) سے تکلیف اُسی کو ہوگی جو یزیدی فکر اور سوچ کا حامل ہوگا، گزشتہ دنوں قراقرام یونیورسٹی گلگت میں یوم حسین (ع) کی تقریب منعقد کرنے کی پاداش میں امامیہ نوجوانوں کو یونیورسٹی سے بے دخل کیا گیا جو کہ یونیورسٹی انتظامیہ کی علم، اسلام اور انسان دشمن پالیسی کی علامت ہے، یونیورسٹی انتظامیہ نے چند شرپسندوں کے خوف سے بے گناہ طلباء کو یونیورسٹی سے نکالا ہے جو کہ یزیدیت کی ترجمانی ہے۔ قراقرم یونیورسٹی کی انتظامیہ ہوش کے ناخن لے اور طلباء کو بے دخل کرنے کے احکامات واپس لے ورنہ پوری قوم کراچی کی طرح ہر شہر میں دھرنا دینے پر مجبور ہو جائے گی، جس کی ذمہ داری حکومت پر عائد ہوگی۔ ان خیالات کا اظہار مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی سیکرٹری تعلیم یافث نوید ہاشمی نے اسلام ٹائمز سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

nasir sherazimwmپاکستان اقتصادی، معاشی، سیاستی سمیت دیگر بحرانوں سے دوچار ہے۔ ملک کی سلامتی خود مختاری کو خطرات لاحق ہیں، قوم مایوسی کا شکار ہے، ہر ایک کو چور لٹیرا سمجھتے ہیں۔ یہ حالات حکمرانوں کی ناقص پالیسیوں، کرپشن، لوٹ مار امریکہ اور مالیاتی اداروں کی غلامی کا نتیجہ ہیں جبکہ پاکستان وسائل سے مالا مال ہے۔ اللہ تعالٰی نے پاکستان کو ہر نعمت سے نوازا ہے مگر نااہل، بددیانت اور کرپٹ قیادت نے پاکستان کو اس حال میں پہنچایا ہے۔ کراچی میں خون کی ہولی کھیلی جارہی ہے۔ جس میں پیپلزپارٹی، ایم کیو ایم، اے این پی برابر کی شریک ہیں۔ حکومت بھتہ خوری، ٹارگٹ کلرز اور دہشت گردوں کو پکڑنے کی بجائے اپنی حکومت بچانے کیلئے سرپرستی کر رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کو ناکام ریاست بنانے کیلئے غیر مستحکم کیا جا رہا ہے۔ بہاولپور اور جنوبی پنجاب کی عوام اپنے صوبوں کا مطالبہ کر رہی ہے جو اُن کا حق ہے مگر حکومت صرف پوائنٹ سکورنگ کے سوا کچھ نہیں کر رہی ہے۔ ان خیالات کا اظہار مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی سیکرٹری سیاسیات سید ناصر عباس شیرازی نے ملتان میں آئی ایس او پاکستان کی ڈویژنل مسئولین کی ورکشاپ سے خطاب کرتے ہوئے کیا

krch.dhrna01ملت جعفریہ کی تاریخی کامیابی، حکومت مطالبات ماننے پر مجبور،41 گھنٹے بعد کفن پوش دھرنا ختم کرنے کا اعلان کردیا گیا۔ تفصیلات کے مطابق علامہ ناظر عباس تقوی نے اعلان کیا ہے کہ حکومت نے ہمارے مطالبات کو تسلیم کیا ہے، لہٰذا اس کفن پوش دھرنے کو ختم کرنے کا اعلان کرتے ہیں اور سندھ بھر کو جام کرنے کی دی جانے والی کال کو واپس لیتے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ مذاکراتی کمیٹی کے وفدنے گورنر سندھ ڈاکٹر عشرت العباد خان سے مذاکرات کئے اور شیعہ قوم کے مطالبات حکام بالا کے آگے پیش کئے، جس پر گورنر سندھ نے مطالبات پر عملدرآمد کی یقین دہانی کرائی ہے۔ مذاکراتی کمیٹی میں شیعہ علما کونسل کے علامہ ناظر عباس تقوی، مجلس وحدت مسلمین کے علامہ صادق رضا تقوی، شیعہ ایکشن کیمٹی و مجلس وحدت کے علامہ مرزا یوسف حسین، قاسم نقوی، شیعہ علما کونسل کے علامہ جعفر سبحانی اورعلامہ شبیر حسن میثمی و دیگر شامل تھے۔
مذاکراتی کمیٹی نے مطالبات کئے تھے کہ آئندہ کسی پر بھی جھوٹا توہین رسالت کا مقدمہ قائم نہیں کیا جائے اور اس سلسلے میں موجود قانونی پیچیدگیوں کو دور کیا جائے، علامہ آفتاب حیدر جعفری و دیگر شہدائے قاتل فی الفور گرفتار کئے جائیں، دہشت گردوں کی سیاسی سرپرستی کرنے والے عناصر کے خلاف کارروائی کی جائے، قراقرم یونیورسٹی کے جن لڑکوں پر تعلیم کے دروازے بند کئے گئے ان تک تعلیم کی رسائی کو یقینی بنایا جائے، جن مجرمان کی سزائے موت پر عملدرآمد کو صدر زرداری کے حکم پر روکا گیا ہے ان کی سزا پر عملدرآمد یقینی بنایا جائے، جو این جی اوز سزائے موت کی سزا کو ختم کرانے کے لئے کوشاں ہیں ان کے خلاف قانونی کارروائی کی جائے، شہداء کے خانوادگان میں سے کسی ایک فرد کو سرکاری ملازمت فراہم کی جائے،دہشتگردی میں شہید ہونے والوں کو دس لاکھ معاوضہ دیا جائے بعد ازاں شرکائے دھرنا پر امن طور پر منتشر ہوگئے۔
اس دھرنے آج ایک بار پھر یہ ثابت کردیا کہ ملت کے تمام رنگ اپنی الگ الگ شناخت کے باوجود ایک ہیں درحقیقت یہ ایک ایسا گلادان ہے جس میں مختلف اقسام کے پھول رکھے گئے ہیں جن میں ہرایک کی ایک الگ خشبوہے وحدت اور مشترکہ کوششوں کے اس سفر کو مزید آگے بڑھنا چاہیے

Allama raja nasir abbas jaffry.mwm.krcمیڈیا پر جاری ہونے والے ایک اہم بیان میں مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے سیکرٹری جنرل علامہ راجہ ناصر عباس جعفری نے کراچی میں ملک بھر میں جاری شیعہ نسل کشی کیخلاف گذشتہ روز سےتسلسل کے ساتھ کے ساتھ جاری ہزاروں مرد و زن کے دھرنے کے بارے میں کہاکہ کراچی شہر میں چوبیس گھنٹے سے دہشت گردی کیخلاف جاری منظم دھرنا اسلام اور ملک دشمن طاقتوں کے منہ پر طمانچہ ہے۔انہوں نے کہا کہ عوام دہشت گردوں سے زیادہ طاقتور ہیں اور دھرنا جاری رہیگا۔دھرنا قومی وحدت کا ایک اچھا نمونہ ہے
واضح رہے کہ اس دھرنے کہ جس کی دعوت شیعہ علما کونسل کراچی کی جانب سے دی گئی تھی جس کی حمایت تمام شیعہ جماعتوں نے کی ہے اور مجلس وحدت مسلمین کراچی اپنے کارکنوں کے ساتھ مسلسل اس دھرنے میں شریک ہے اور اس وقت یہ دھرنا قومی وحدت کی ایک اچھی مثال بن چکا ہے

nisar faizi.mwmڈھوک سیداں میں مجلس عزا سے خطاب کرتے ہوئیبرادر نثار علی فیضی مرکزی سیکرٹری فلاح بہبود نے کہا کہ آج کا طاغوت ، فرعون اور یزید، مقصد کربلا اور پیغام عاشورہ سے خوف زدہ ہے اور عزاداری سید شہداء کو اپنے مذموم عزائم کی تکمیل میں بڑی رکاوٹ سمجھتا ہے ۔ شہداء عزادری سید الشھداء نے کار حسینی انجام دیتے ہوئے آج کی کربلا میں اپنے لہو سے اپنا نام لکھوا دیا ہے ۔ کوئٹہ ، کراچی ، ڈی آئی خان اور راولپنڈی میں عزاداری کو نشانہ بنانے والی یزیدی طاقتیں ملت جعفریہ کی ہمت اور استقامت کے سامنے ناکام و مایوس ہوئیں۔انشاء اللہ جو زندہ ہیں وہ کربلا سے درس حریت لیتے ہوئے سنت زینبؑ و سجادؑ ادا کریں گے اور عزاداری کی بقا ،دوام اور پرچار کے لیے ہر قسم کی قربانی سے دریغ نہیں کریں گے۔ مجلس وحدت مسلمین پاکستان شہداء کے لہو کی امین جماعت ہے اور انشاء اللہ ان شہادتوں سے مقصد شہادت مزید نمایاں ہوگا اور شہادتوں کے متوالے اپنے لہو کے زریعے وقت کی یزیدی طاقتوں کو شکست دیں گے۔ جیسے حزب اللہ نے فقط 133شہید دیے اور مقابلے میں اسرائیل جیسی فوجی طاقت کو شکست دی۔ہمیں تیاری کرنی ہوگی ،منظم ہونا ہوگا، اپنی صفوں میں اتفاق اور وحدت پیدا کرنا ہوگا۔ دشمن جن حربوں کے زریعے ہماری طاقتوں کو پارہ پارہ کرنا چاہتا ہے ہمیں انہی راستوں سے دشمن کے نفوذکو روکنا ہوگا۔ 13جنوری کو لیاقت باغ، راولپنڈی میں انشاء اللہ شہداء عزاداری محرم الحرام کا چہلم پوری شہامت اور عظمت کے ساتھ منایا جائے گا جس میں علماء تشیع و اھل سنت ، خطباء ، زاکرین ،سیاسی و سماجی شخصیات اور عوام شرکت کریں گے۔ خانوادہ شہداء ڈھوک سیداں، کر اچی، کوئٹہ اور ڈی آئی خان خصوصی شرکت کریں گے۔مجلس عزا سے ضلعی سیکرٹری تبلیغات مولانا اکبر کاظمی نے خطاب کیا اور فضائل اہل بیت ؑ و شہادت امام زین العابدین ؑ بیا ن کیے۔مجلس عزا میں مومنین کی ایک کثیر تعداد شریک تھی۔

karachi sit-inشیعہ نسل کشی کے خلاف شیعہ علما کونسل کی جانب سے دی گئی دعوت پر پاکستان کی تمام شیعہ جماعتوں کا مشترکہ دھرنا اب اپنے چوبیس گھنٹے پورے کر چکا ہے اب تک کسی بھی حکومتی اہلکار نے شرکاء دھرنا سے رابط نہیں کیا دھرنے کی انتظامیہ نے مختلف جماعتوں پر مشتمل ایک کیمیٹی بنائی ہے جس میں مجلس وحدت مسلمین ،شیعہ ایکشن کیمیٹی ،آئی ایس او،جے ایس او،اور خود شیعہ علماکونسل کے علاوہ بھی جماعتیں ،ادارے وغیرہ شامل ہیں یوں بظاہر یہ اتحاد و وحدت کا ایک بہترین نمونہ ہے 
اس کیمیٹی کی یہ ذمہ داری ہے کہ وہ دھرنے کے اختتام نیز مذاکرات کے حوالے سے فیصلہ کرے اور مذاکرات کی صورت میں یہی کیمیٹی مذاکرات کرے گی ۔
اب تک جب کہ دھرنے کو چوبیس گھنٹے گذرچکے ہیں دھرنے میں شریک تمام افراد کی جانب سے مکمل احتیاد برتی جارہی ہے خاص طور پر میزبان جماعت شیعہ علماکونسل پر سب سے زیادہ ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ کسی بھی طور احتیاد کے دامن کو ہاتھ سے جانے نہ دے نیز ہر حال میں اس قومی وحدت کو برقرار رکھے تمام ترفیصلوں میں سب کے اعتماد کو حاصل کرنے کی کوشش کرے 
الحمداللہ اب تک دھرنے میں ہزاروں مردوزن اور یہاں تک کہ بچے بھی شامل ہیں پوری پوری خاندان شریک ہیں آج صبح اگرچہ گذشتہ رات کراچی میں پھیلائے جانے والے حالات کے سبب ٹرانسپورٹ بند تھی لیکن ہزاروں افراد نے پیدل یا ذاتی گاڑیوں میں دھرنے میں شرکت کی جبکہ شہر میں خوف کی فضا کے ساتھ ساتھ شدید خطرات بھی موجود ہیں ۔
اب جبکہ ایک اچھا قدم اٹھایا گیا ہے تو پھر ضرورت اس بات کی ہے کہ اسے پائے تکمیل تک پہنچایا جائے اور کسی بھی قسم کو دباو یا سازش کا شکار نہ ہوں 
دوسری جانب تمام ملت کو چاہیے کہ وہ مختلف خول سے باہر نکل کر دھرنے کی پوری مددکرے جیساکہ اس وقت قومی مختلف تنظموں کی جانب سے ہورہا ہے ۔
مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے کارکن جیساکہ سیکرٹری جنرل کراچی علامہ صادق تقوی نے کہا پورے ملک میں کسی بھی قسم کی کال پر عمل درآمد کے لئے تیار ہیں اگر کراچی میں حکومت نے دھرنے کے شرکا کو شرپسندوں کے زریعئے یا پالتوسامراجی آلہ کاروں کے توسط سے کسی قسم کا غلط قدم اٹھایا تو اس کا اثر پورے ملک میں پڑے گا ۔مجلس وحدت مسلمین کے میڈیا سیل نے اس سلسلے میں خصوصی میڈیا ٹیم تشکیل دی ہوئی جو بہت ہی باریکی سے تمام چیزوں کو مانیٹر کررہے ہیں ۔
ذمہ دار افراد اور اداروں کو جان لینا چاہیے کہ کسی بھی قسم کا غلط قدم ملک میں بحران پیدا کر سکتا ہے اس لئے حکومتی ذمہ داروں کو شرکاء دھرنا کے پاس جاناچاہیے اور ان سے مذاکرات کر کے مطالبات پورے کرنے چاہیے دوسری صورت میں ممکن ہے کہ دھرنوں کا یہ سلسلہ پورے ملک میں شروع ہوجائے ۔

molana nazir.sucشیعہ علماء کونسل پاکستان صوبہ سندھ کے جنرل سیکرٹری علامہ ناظر عباس تقوی نے کہا ہے کہ ہمارے مطالبات پورے نہ ہوئے تو ایوانوں کا گھیراؤ کریں گے، کفن پوش دھرنے کاپیغام اتحاد کا پیغام ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے کراچی میں نمائش چورنگی پر کفن پوش دھرنے کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ دہشت گرد روزانہ اس ملت کی خواتین، بچوں اور مردوں کو نشانہ بنا رہے ہیں اور ہمارے ملک کی ایجنسیاں خواب خرگوش کے مزے لے رہے ہیں، اگر ہمارے مطالبات کو تسلیم نہ کیا گیا تو ایوانوں کا گھیراؤ کریں گے۔ علامہ ناظر تقوی نے کہا کہ ہم کسی بھی حال میں عزاداری کو ترک نہیں کریں گے، وزیر داخلہ رحمان ملک چاہے کتنی ہی سازشیں کرلیں ہم عزاداری سے دستبردار نہیں ہوں گے۔

شیعہ علماء کونسل سندھ کے جنرل سیکرٹری نے کہا کہ اس ملک کی سیاسی جماعتیں شیعہ نسل کشی پر خاموش ہیں۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ شہر کراچی میں دہشت گردوں کے ٹھکانوں کو ختم کیا جائے اور دہشت گردوں کے خلاف فوجی آپریشن کیا جائے۔ انہوں نے اعلان کیا کہ آج ہم کسی بھی انتظامیہ کے فرد سے بات نہیں کریں گے، انتظامیہ چاہے کچھ بھی کرے، حالات چاہے کچھ بھی ہوں ہم ہر صورت اس دھرنے کے مقام پر خالی نہیں کریں اور ہر صورت اپنے مطالبات کو منوائیں گے۔

sadiq taqvi krcمجلس وحدت مسلمین پاکستان کراچیکے سیکرٹری جنرل علامہ صادق رضا تقوی نے کہا ہے کہ حکومت ملت جعفریہ کے تحفظ میں مکمل ناکام ہوگئی ہے، کراچی میں دہشت گردوں کے خلاف فی الفور فوجی آپریشن کیا جائے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے نمائش چورنگی پر شیعہ ٹارگٹ کلنگ کے خلاف دیئے جانے والے احتجاجی دھرنے کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر ہزاروں کی تعداد میں احتجاجی مظاہرین موجود ہیں۔ علامہ صادق رضا تقوی نے مزید کہا کہ کراچی میں باقاعدہ منظم سازش کے تحت شیعہ قوم کے افراد کو ٹارگٹ کلنگ کا نشانہ بنایا جارہا ہے، اب بات مردوں کی ٹارگٹ کلنگ سے بڑھ کر خواتین اور بچوں تک آپہنچی ہے، محضر زہرا اور کنیز فاطمہ پر حملے نے ثابت کر دیا ہے کہ دہشت گردوں میں غیرت نام کی کوئی چیز نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ ان دہشت گردوں کے ہاتھوں اب فقط ملت جعفریہ کے افراد ہی نہیں بلکہ اب یہ سلسلہ اہلسنت افراد اور حتیٰ کہ سکیورٹی اداروں کے اہلکاروں تک آن پہنچا ہے۔ انہوں نے صدر مملکت آصف علی زرداری، وزیراعظم پاکستان راجہ پرویز اشرف، آرمی چیف اشفاق پرویز کیانی سے مطالبہ کیا کہ کراچی میں دہشت گردوں کے خلاف فوجی آپریشن کیا جائے اور دہشت گردوں کے ٹھکانوں کو ختم کیا جائے۔
شیعہ علماء کونسل کی کال پر منعقدہ دھرنے میں مجلس وحدت مسلمین پاکستان، آل پاکستان شیعہ ایکشن کمیٹی، مرکزی تنظیم عزاء، مجلس ذاکرین امامیہ، امامیہ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن، ہیئت آئمہ مساجد و علمائے امامیہ پاکستان، جعفریہ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن، پیام ولایت فاؤنڈیشن و دیگر ملی تنظیمیں بھی شامل ہیں

مجلس وحدت مسلمین پاکستان

مجلس وحدت مسلمین پاکستان ایک سیاسی و مذہبی جماعت ہے جسکا اولین مقصد دین کا احیاء اور مملکت خدادادِ پاکستان کی سالمیت اور استحکام کے لیے عملی کوشش کرنا ہے، اسلامی حکومت کے قیام کے لیے عملی جدوجہد، مختلف ادیان، مذاہب و مسالک کے مابین روابط اور ہم آہنگی کا فروغ، تعلیمات ِقرآن اور محمد وآل محمدعلیہم السلام کی روشنی میں امام حسین علیہ السلام کے ذکر و افکارکا فروغ اوراس کاتحفظ اورامر با لمعروف اور نہی عن المنکرکا احیاء ہمارا نصب العین ہے 


MWM Pakistan Flag

We use cookies to improve our website. Cookies used for the essential operation of this site have already been set. For more information visit our Cookie policy. I accept cookies from this site. Agree