The Latest

وحدت نیوز(آرٹیکل)وہ حسینؑ جو تنہا کھڑا تھا مقتل میں
 اب اس کے ساتھ زمانہ دکھائی دیتا ہے

سفر ِعشق سے نقوشِ عشق ایک ایسی تحریر جو اپنے اندر مختلف جہتیں لئے ہوئے ہے، آئیے دیکھتے ہیں کہ یہ سفرِ اربعین کیا ہے۔؟ اس میں شامل ہو کر کیسا لگتا ہے۔؟ اس کے مقاصد و اہداف کیا کیا ہو سکتے ہیں۔؟ اربعین واک سے دُنیا کو کیا کیا پیغام دیا جا سکتا ہے۔؟ اور اس واک کی افادیت اور اہمیت کیا ہے۔؟کیا امامِ زمانہ علیہ السلام کے ظہور کی راہ ہموار کرنے کے لئے اس واک سے مدد لی جاسکتی ہے ۔؟عالمی سامراجی قوتوں پر اس اربعین واک کی ہیبت کیسے ہو سکتی ہے ۔؟دُنیا کی اخلاقی اقدار میں اس کا کیا کردار ہے۔؟ دنیا کے کلچر میں تبدیلی کیا اربعین واک سے ممکن ہے ۔؟ایک طاقتور قوم کا وجود کیسے ممکن ہے ۔؟ عالمی انسانی حقوق کا تحفظ کیوں کر ہو سکتا ہے ۔؟ دینی تربیت گاہ کیسے۔؟ ہمت و حوصلہ کیسے پیدا ہوجاتا ہے ۔؟    

یہ عشق امام حسین علیہ السلام ہے جس کو مولا حسین علیہ السلام نے جنم دیا ہے اور بہت سے موضوعات کو اربعین واک جو نجف سے کربلا تقریبا 90سے 95کیلو میٹر ہوتی ہے جنم دیا ہے اور آئندہ آنے والے سالوں میں میں مزید نئے موضوعات جنم لیں گے۔ اور اسرائیل کی نابودی بھی اس واک کا حصہ بن سکتی ہے ،جبکہ عالمی دہشت گرد امریکہ کی موت ان چلتے ہوئے قدموں کے نیچے ہوسکتی ہے اس سے پہلے کہ میں اپنی بات کو آگے بڑھاو¿ں یہ واضح کردینا چاہتا ہوں کہ اس تحریر میں جو بھی کچھ لکھا جائے گا وہ میرے اپنے محسوسات ہیں اور جن سوالوں کے جواب تلاش کرنے کی کوشش کریں گے وہ سوال اس واک میں شرکت کرنے کی وجہ سے میرے ذہن میں آئے ہیں اس میں لکھے گئے مختلف نام اور واقعات میں نام تبدیل کر دوں گا پھر بھی کسی سے مماثلت ہو تو یہ اتفاقیہ ہوگی اور تمام اہل اسلام سے گزارش ہے کہ میری اس تحریر کو بغور پڑھیں اور اپنے تاثرات کا اظہار بھی کریں ضروری نہیں کہ آپ میری کسی بات یا باتوں سے اتفاق کریں ہو سکتا ہے آپ میری ساری باتوں کو رد کر دیں لیکن میں تب بھی یہی کہوں گا ۔میری اس تحریر کو کو ضائع مت کرنا اور انتظار کرنا کچھ عرصہ اور۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں نے اس سال لندن جانا تھا ویزہ بھی لگ چکا تھا اور پروگرام بھی کم و بیش فائنل ہو چکا تھا کہ ایک دن مجھے ایک عزیز دوست کی کال آئی کہ اس سال اربعین واک میں شرکت کرنا ہے میں نے سرسری سی ہاں کرکے فون بند کر دیا اور سمجھا کہ بات ختم ہوگئی ہے لیکن دو یا تین دن بعد اس محترم دوست کی دوبارہ کال آئی کہ میں نے آپ کا نام گروپ میں لکھوا دیا ہے اس لیے آپ کچھ رقم بھجوادیں اور تیاری کریں ان کا اخلاص دیکھ کر میں نے خاموشی اختیار کی اور دل میں سوچا کہ یہ بلا وہ امامؑ کی طرف سے ہی ہے اور اب مجھے کربلا جانا ہی جانا ہے لہذا میں نے کچھ رقم بھجوادی اور سفر کی سمت بدل دی ،اب میں اربعین کی طرف متوجہ ہوا تو اس پر لکھا کیا گیا سب نظروں کے سامنے آنے لگا میری عمر اس وقت پچاس سے اوپر ہے اور میں ہمیشہ یہی سوچتا تھا کہ اربعین جس میں کروڑوں لوگ شرکت کرتے ہیں میرے جیسا شخص کیسے شرکت کر سکتا ہے اتنا پیدل چلنا میرے بس میں نہیںاور ویسے بھی جب تک ضریح مقدس کے ساتھ نہ لگ جائیں اس دل کو سکون نہیں ملتا سوچتا تھا کہ میرے جیسے کمزور انسان کے لئے تو ایسا ممکن نہیں ہے لیکن اب فیصلہ ہو گیا کہ دنیا کی اس سب سے بڑی اور عظیم واک میں شرکت کی جائے ۔    

میرا نام ڈاکٹر افتخار حسین نقوی ہے اور جو واقعات اس میں تحریر کر رہا ہوں وہ میرے ساتھ یا میرے سامنے ہوئے ہیں اس تحریر کو مختصر اور جامع بنانے کی کوشش کی ہے تاکہ تھوڑے وقت میںہی آپ تک میرا پیغام پہنچ جائے ۔سفرِ عشق سے نقوشِ عشق ایک ایسی تحریر ہے جوامام حسین علیہ السلام کی برتری اور یزید لعین کی ذلت اور رسوائی کا پرچار کر رہی ہے اور اقوام عالم کو درِ حسینؑ ابن علی علیہ السلام پر آنے کی دعوت دیتی ہے میں تمام دنیا کے افراد کو دعوت دیتا ہوں کم از کم ایک بار ضرور اس واک میں شرکت کریں چاہے دیکھنے کے لئے ہی کیوں نہ ہو اور آکے دیکھو کہ امام حسین علیہ السلام کے عشق کی طاقت کیا ہے ۔ امام حسین علیہ السلام کی مظلومیت پر انسان روتے کیوں ہیں، کس طرح عاشق ِحسین علیہ السلام آپ کی مظلومیت پر نوحہ کناں ہوتے ہیں ،اور کیسے آپ کے ساتھ ہونے کا دعوی کرتے ہیں ،اور آپ پر ہونے والے ظلم کی کس طرح مذمت کرتے ہیں، اربعین واک اتنا وسیع موضوع ہے کہ میں اس پر بہت کچھ لکھ کر بھی یہی محسوس کر رہا ہونگا کہ اربعین واک کا احاطہ نہیں کر سکا۔     

اربعین واک جو نجف سے شروع ہوتی ہے اور کربلا پہنچ کر اختتام پذیر ہوتی ہے یہ واک ہر سال 19 صفر چہلم امام حسین علیہ السلام کے موقع پر کی جاتی ہے ۔اس کا فاصلہ تقریبا 80 یا85 کلومیٹر بتایا جاتا ہے جبکہ فاصلہ اس سے بھی زیادہ ہے کیوں کہ نجف اشرف کے اطراف سے جب آپ ہائی وے پر پہنچتے ہیں تو یہ فاصلہ کم و بیش 6یا7 کلومیٹر بنتا ہے۔ جبکہ جو فاصلہ بتایا جاتا ہے وہ صرف ہائی وے پرپول نمبر1 ایک سے پول نمبر 1554تک بتایا جاتا ہے لہذا میں سمجھتا ہوں کہ یہ واک تقریبا 90سے95 کلومیٹر کے قریب بنتی ہے اس واک کے دوران محبت امام حسین علیہ السلام کا ذکر کیا جاتا ہے اور دشمنانِ حسین ابن علی علیہ السلام سے بےزاری کا اظہار کیا جاتا ہے ۔

موسمی اعتبار سے دیکھا جائے تو چالیس بتالیس سینٹی گریڈ تک درجہ حرارت تھا یعنی شدید گرمی تھی لیکن سورج کے سامنے لوگ سینہ تانے ہوئے تھے اور آخر اپنا ہدف پورا کیا جب لوگ نجف اشرف سے کربلا پیدل چل کر پہنچ جاتے ہیں تو وہ اپنے آپ کو دنیا کا عظیم ترین انسان محسوس کرتے ہیں کیوں کہ وہ سمجھتے ہیں کہ ہم جو امام حسین علیہ السلام سے محبت اور عشق کی باتیں کرتے ہیں اس میں عقیدت کابھی بھرپور اظہار کردیا ہے یہ سب کچھ اس لئے ممکن ہوا ہے کہ امام علیہ السلام کی تائید انہیں حاصل تھی۔ بس میں اتنا ہی کہوں گا یہ ایک شاندار واک ہے جو آپ کو مولا علی علیہ السلام سے لے کر کر مولا ابوالفضل عباس علیہ السلام اور مولا امام حسین علیہ السلام کے انتہائی قریب لے جاتی ہے اس میں جو سرور ہے وہ بیان نہیں کیا جاسکتا لیکن محسوس کیا جا سکتا ہے عاشقان امام حسین علیہ السلام کے نظارے قابل دید ہوتے ہیں یہی وجہ ہے کہ اربعین واک میں ہر سال عاشقانِ امام حسین علیہ السلام کا اضافہ ہوتا چلا جا رہا ہے یہ چہلم امام حسین علیہ السلام پر پیادہ روی ہے اس کو مشی کا نام بھی دیا جاتا ہے اور امن واک بھی کہا جاتا ہے اس عظیم الشان واک کے مستقبل میں کیا نتائج برآمد ہوں گے آئندہ آنے والے موضوعات سے اندازہ ہو جائے گا۔

اب اگلے مرحلے میں ہم دیکھتے ہیں کہ اس واک کا سب سے بڑا ہدف یا مقصد ایک ایسے کلچر کو جنم دینا ہے جس میں برداشت، عزت و احترام، راواداری، ایثار اور قربانی کے جذبات موجود ہوں یہ ایک ایسا مقصد یا ہدف ہے جس کو میں نے محسوس کیا اس دور میں جب دنیا کو گلوبل ویلج کہا جاتا ہے ملکوں کے درمیان مادی فاصلے کم ہو رہے ہیں مثال کے طور پر بہت سے ممالک مل کر یورو کرنسی استعمال کرتے ہیں یعنی اس کرنسی میں لین دین کرتے ہیں اور کئی ملکوں کی سرحدیں ختم ہوجاتی ہیں اور یہ ایک ہی قسم کی تجارت کی جارہی ہے دوسری طرف ملکوں کے درمیان فاصلے کم کرنے کے لئے لیے جدید ذرائع مواصلات استعمال کیے جارہے ہیں جس میں ہوائی جہاز، بحری جہاز اور ان کے ساتھ ساتھ پاک چائنا پروجیکٹ جس کو کو سی پیک کے نام سے یاد کیا جاتا ہے جس کی وجہ سے ملکوں کے درمیان فاصلے کم ہورہے ہیں لیکن یہ عمل بھی مادی حوالے سے ہو رہا ہے جب کے الیکٹرونک اور سوشل میڈیا بھی اس کام میں بھرپور کردار ادا کر رہے ہیں اور قوموں کی ثقافت اور کلچر کو تبدیل کیا جا رہا ہے مثال کے طور پر اگر میں پاکستان کی بات کروں تو کچھ سالوں پہلے ہمارے کھانے پینے اٹھنے بیٹھنے سوچنے سمجھنے حتیٰ کہ لباس پہننے کے معیار کچھ اور تھے جبکہ غیر محسوس طریقہ سے اس میں وسیع پیمانے پر تبدیلیاں آچکی ہیں جس کی وجہ سے ہمارے ملک کے اندر معاشرتی بگاڑ بھی جنم لے رہا ہے عدم برداشت اور خود غرضی کو فروغ مل رہا ہے اور ہماری اخلاقی اور مذہبی روایات بہت بری طرح متاثر ہو رہی ہیں۔مشی پیادہ روی یا امن واک میں میں نے محسوس کیا کہ قوموں کے درمیان ایک مشترکہ کلچر فروغ پارہا ہے جس میںعجزو انکساری ،باہمی عزت و احترام، برداشت درگزر اور رواداری تیزی سے بڑھ رہی ہے ہے اور ایک مشترکہ کلچر کو فروغ مل رہا ہے اور امام حسین علیہ السلام سب کے عنوان سے دنیا میں بازگشت سنائی دے رہی ہے ۔

یعنی میں کہنا چاہ رہا ہوں کہ اس امن واک کے ذریعے اسلامی کلچر کا تحفظ کیا جاسکتا ہے اور مادی معاشرے کو روحانی معاشرے میں تبدیل کیا جاسکتا ہے، لہذا اسلامی کلچر کو فروغ دینا اور امام حسین علیہ السلام کے نام پر تمام افراد کا اکٹھے ہونا اس بات کو جنم دیتا ہے کہ اسلامی کلچر کے فروغ کی سمت حسین علیہ السلام اور حسینیت کی طرف ہوگی لہذا ایک اسلامی حسینی معاشرہ عالمی سطح پر وجود میں آجائے گا جیسا کہ ایران اور عراق کی سرحد دونوں ممالک کے درمیان سرحد کو ختم کر دیتی ہے اور ایک برادرانہ عمل سے آگے بڑھ رہے ہیں لہذا اگر میں یہ کہوں کہ ایک غیرمحسوس طریقہ سے اسلامی حسینیؑ کلچر عالمی سطح پر لے جایا جاسکتا ہے لہذا حقیقی روحانی اور اسلامی معاشرت جنم لے گی لہذا میں کہہ سکتا ہوں کہ اقوام عالم کے درمیان ایک مشترکہ معاشرہ جنم لے رہا ہے جس کی بنیاد نہ صرف عجز و انکساری پیار محبت رواداری اور عزت و احترام ہو گا بلکہ ایک مضبوط اسلامی ثقافتی نظام جنم لے گا اور حقیقی اسلام دنیا پر حکومت کرے گا اس سال پانچ کروڑ 96 لاکھ تین ہزار لوگوں نے اس واک میں شرکت کر کے یہ اعلان کر دیا ہے ہے اگرچہ عالمی سامراجی طاقتوں کے لئے یہ قابل قبول نہ ہوگا اور وہ اپنے طور پر اس کو سبوتاژ کرنے کی بھرپور کوشش کریں گے لیکن چونکہ یہ ایک پاکیزہ پیادہ روی ہے اس لیے دشمن کی کامیابیاں اس میں نظر نہیں آتیں۔ مجھے امید ہے میرے محترم قارئین اس آمن واک کی اہمیت سے آگاہ ہوں گے آگے۔    

آئیے اگلے مرحلے میں داخل ہوتے ہیں اور دیکھتے ہیں اس میں شامل ہو کر کیسالگتا ہے، اس کے مقاصد اور اہداف کیا ہو سکتے ہیں اس واک میں شامل ہونا تائید امام ؑکے بغیر ممکن نہیں اس کی وجہ یہ ہے کہ اس واک میں جو بھی شخص شر یک ہوتا ہے ہے اس کے اوپر روحانی اثرات ضرور آتے ہیں۔ لوگوں کے اندر زہدوتقوی میں اضافہ ہوتا ہے اور لوگ مشنِ امام حسین ؑ کو آگے بڑھانے کے لئے آمادہ نظر آتے ہیں اور اس بات پر لوگ حیرت زدہ ہوتے ہیں کہ ان شرکاءمیں سے جس سے بھی پوچھا وہ یہ ضرور کہتا ہے کہ میں نے نے امام علیہ السلام کی بارگاہ میں سلام کیا اور امام علیہ السلام کی ضریح مقدس تک پہنچنے میں کامیاب ہوگیا یہ بات کسی معجزہ سے کم نہیں گھر میں بیٹھ کر اس بات کو تسلیم کرنا مشکل ہے لیکن ایسا ہوتا ہے اور یہ زندہ حقیقت ہے ۔یہ کیسے ہوتا ہے؟ مجھے نہیں معلوم میں نے اپنے ایک بزرگ عباس صاحب سے سوال کیا کہ یہ کیسے ممکن ہے یہ نظام کیسے چل رہا ہے تو انہوں نے جواب میں کہا تھا مجھے تو ایسا لگتا ہے یہ انتظامات مولا ابوالفضل عباس علیہ السلام کے ہاتھ میں ہیںاور وہ بہترین انداز میں مینج کر رہے ہیں ان کے علاوہ اورکسی میں اتنی استعداد نہیں کہ انتظامات سنبھال سکے ۔

مجھے ان کی بات دل کو لگی اور اب مجھے ایسا ہی محسوس ہوتا ہے کہ اس امن واک کے منتظم حضرت ابوالفضل عباس علیہ السلام ہی ہیں یہی وجہ ہے کہ کربلا کے پیاسوں کے صدقے میں یہاں پر ایسا انتظام ہے کہ اگر کسی کو پیاس لگی ہے تو اسے انتظار نہیں کرنا پڑتا فورا پانی مل جاتا ہے۔ اگر کوئی بھوک محسوس کرتا ہے تو اس کو فورا کھانا مل جاتا ہے اور وہ بھی بغیر کسی قیمت کے۔ اب اگر ہم اس کے اہداف کا تعین کرنا چاہتے ہیں تو سب سے پہلے ظہورِ امامِ زمانہ علیہ السلام اس کا پہلا ہدف ہونا چاہیے۔ اسلامی حسینی معاشرہ کو وجود دینا بھی اس کا ہدف ہونا چاہیے۔ اقوام عالم کے درمیان مشترکہ عالمی کلچر کو فروغ دینا۔ اخلاقی و روحانی تربیت گاہ۔ مذہبی لگاو¿ او اور عبادات میں اضافہ ۔مظلو مین جہان کی مدد کرنااور ظالم کے خلاف آواز اٹھانا۔ استعماری طاقتوں کو شکست دینا۔امت مسلمہ کے درمیان غلط فہمیوں کو دور کرنا۔ مشترکہ اسلامی اقتصادی نظام کو جنم دینا۔ اسرائیل کی نابودی اور بیت المقدس کی آزادی ۔نظام خمس اور زکواة کو منظم کرکے غریب مسلم ممالک کی امداد کرنا ان اہداف کے لیے کام کرنا۔ اور رہبر معظم کی اس پیشگوئی جس میں آپ نے فرمایا اسرائیل آئندہ 25برس نہیں دیکھ پائے گا سچ کرنا ۔

 اس کے علاوہ امن واک سے دنیا کو یہ پیغام دیا جا سکتا ہے کہ حسینی معاشرہ ایسا معاشرہ ہے جس میں بہترین معاشرتی خصوصیات موجود ہیں۔ مثال کے طور پر یوسف اورندیم واک میں شریک تھے انہوں نے کسی بوڑھے شخص کو دیکھا جو تھکا ہوا محسوس ہو رہا تھا انہوں نے اس کا سامان اٹھایا اور ایک طرف بٹھا کے پانی وغیرہ پلایا اور اس کو دبانے لگے جبکہ اس بابا جس کا نام حسینؑ ہے ان کا عزیز نہیں ہے اسی طرح کے بے شمار واقعات دیکھے جن کو اگر لکھوں تو ایک اچھی خاصی موٹی کتاب پرنٹ کی جاسکتی ہے یہاں ایسے لوگ اکٹھے ہوتے ہیں جو ہر وقت متوجہ رہتے ہیں کہ اس کے ساتھ چلنے والے کو کوئی مسئلہ تو نہیں ہر کوئی ایک دوسرے کے لئے چاہتا ہے کہ وہ کسی نہ کسی طریقے سے دوسرے کی خدمت کر سکیں میں اس پوری واک اور پھر روضہ حضرت ابوالفضل عباس علیہ السلام اور حضرت امام حسین علیہ السلام پر کسی ایک شخص کو بھی نہیں دیکھا کہ وہ دوسرے سے لڑ رہا ہو، غصہ کر رہا ہو، بلکہ اگر غلطی سے کسی ایک شخص کو دوسرے شخص کا ہاتھ پاو¿ں وغیرہ لگ جائے تو فورا معافی کا خواستگار ہوتا ہے اور دوسرا شخص بھی فورا اس کو معاف کر دیتا ہے لوگوں کا سامان سڑکوں کے کنارے پڑا رہتا ہے سینکڑوں لوگ اکٹھے رہ رہے ہوتے ہیں لیکن کسی کی کوئی چیز چوری نہیں ہوتی اور کوئی کسی دوسرے کی چیز کو ہاتھ تک نہیں لگاتا۔ ہر ایک خوبصورت نظارہ ہے آپ کو جانا چاہیے میں تو کچھ بھی لکھ نہیں پا رہا یہ تو صرف آؤٹ لائین ہوں گی ۔میں آپ کو دعوت دیتا ہوں اس مشی،پیا دہ روی یا اربعین واک میں زندگی میں ایک دفعہ ضرور شرکت فرمائیں۔    

 آئیے اب اس بات کا جائزہ لیں عالمی سامراجی قوتوں کے لیے یہ واک کیسے ہیبت قائم کر رہی ہے، عالمی سامراج نے ہمیشہ مسلمانوں کو لوٹا ہے اور ان کے درمیان فرقہ واریت کو جنم دے کراپنے مذموم مقاصدحاصل کئے ہیں اور مسلمانوں کو اقتصادیات میں کمزور رکھنے کے ساتھ ساتھ ٹیکنالوجی کے میدان میں بھی پیچھے رکھا اور مسلمانوں میں مادی کلچر کو فروغ دے کر بے حیائی کو جنم دے کر اسلامی حدود کو ختم کرنے کی کوشش کرتا رہا ہے ۔مختلف فرقوں کے درمیان مختلف قسم کی رسوم ایجاد کرکے کے نہ صرف مسلم نوجوانوں کوحقیقی روحانی منزل اور قربِ خدا سے دور کر رہا ہے بلکہ اپنے زرخرید شیطان نما انسانوں کو شریعت محمدی میں تبدیلی کے اہداف بھی تجویز کیے ہوئے ہیں ۔مسلم حکمرانوں کو مختلف حربوں سے اپنا غلام بنایا ہوا ہے اور اگر کوئی مسلم حکمران عالمی سامراج کا چہرہ بے نقاب کرتا ہے تو یا تو اس سے اقتدار چھین لیا جاتا ہے اور یا اس کو قتل کر دیا جاتا ہے۔    ساری دنیا کے غیر مسلم ممالک اور کچھ مسلم ممالک بھی اسرائیل کے وجود کو دوام بخشنا چاہتے ہیں اس کے لیے کبھی نیو ورلڈ آرڈر اور کبھی داعش کبھی فلسطینیوں پر ظلم کبھی افغانستان، بحرین ،کشمیر اور یمن میں بربریت جاری رکھے ہوئے ہیں جس کی وجہ سے مسلم اُمہّ شدید نفسیاتی دباو¿ میں ہے اسلامی ثقافت اور کلچر کو بوسیدہ قرار دے کر جدید اسلامی ثقافت کا تعارف کرایا جارہا ہے جس کا شریعت محمدی سے کوئی تعلق نہ ہے اور اس میں تیزی سے کامیابیاں حاصل کر چکا ہے۔ہماری خواتین،بچیاں،بچے اسلامی احکامات سے نہ صرف آگاہ نہیں ہیں بلکہ بہت ساری جگہوں پر سوال جواب جنم لیتے ہیں یہ ایک عالمی سازش ہے جس کے ذریعے ہمارے اسلامی اور معاشرتی کلچر کو تباہ کیا جارہا ہے اور شرعی حدود کو پامال کیا جارہا ہے۔باہمی احترام، عزت ایک دوسرے کی قدردانی اور جائز ناجائز تعلقات کو فروغ دیا جارہا ہے جس کی وجہ سے ہمارے معاشرے میں مادی مسائل نے تو جنم لیا ہے اس کے ساتھ ساتھ اخلاقی روحانی اور جنسی مسائل بھی ایک اژدہا کی صورت میں موجود ہیں اور ان میں دن بدن اضافہ ہو رہا ہے۔    

اربعین واک اس سازش کا بھرپور جواب ہے آئندہ چند سالوں میں دنیا محسوس کرے گی کہ بے حیائی، بدخلقی، ناانصافی، جبر و تشدد اور دیگر ایسی تمام چیزوں کی معاشرہ میں قدر نہیں ہے بلکہ اخلاق، روحانی قوت، دینداری، خداپرستی ،حسن خلق، عجز و انکساری، پیار محبت، خدمت اورہمدردی کے جذبات معاشرے میں جنم لے رہے ہوں گے اور اسلامی ثقافت اسلامی معاشرے کا حصہ بنے گی۔خداسے قربت اوردین داری کی طرف لوگ متوجہ ہوں گے اور اس طرح یہ ایک ایسی قوت ہوگی جس میں پاکیزگی کا عنصر واضح ہو گا۔ اور یہ عالمی شیطانی طاقتوں اور سامراجی حکومتوں کے لیے ہیبت ہوگی جس کے بعد شیطان مردود اور اس کے چیلے خود اپنی موت آپ مر جائیں گے۔    

اب بات کو آگے بڑھاتے ہوئے ہم دیکھتے ہیں یہ مشی پیادہ روی اربعین واک یا امن واک ایک عالمی طاقتور قوم کو کیسے وجود دے سکتی ہے لیکن اس عمل سے ایسا ممکن ہے تو اس سلسلہ میں میں اپنے محترم قارئین سے گزارش کروں گا کہ آج کل کے حالات میں انسان تساہل پسند اور آسائشوں کا عادی ہو چکا ہے جسمانی مشقت ایک خواب بنتا جارہا ہے جس کی دلیل کے طور پر آپ دیکھ سکتے ہیں کہ آپ نے کوئی معمولی سا بھی کام کرنا ہو تو اس میں مشینری استعمال کی جاتی ہے پرانے زمانے کے لوگ مشقت کے عادی تھے اور اپنے امور احسن طریقہ سے انجام دیتے تھے اب اگر غور کریں تو سب سے مضبوط طبقہ جو کھیتی باڑی کرتا تھا اس کے لیے پیدل چلنا اور مشقت والے کام کرنا کوئی مسئلہ نہیں تھا لیکن آج کا زمیندار ان کاموں کا تصور بھی نہیں کر سکتا ہل چلانایا دیگر ایسے امور انجام دینا جو جسمانی طاقت کا مظہر تھے۔    

 اسی طرح عام زندگی میں گاڑی اور موٹر سائیکل کا استعمال بہت زیادہ ہے جس کی وجہ تساہل کے ساتھ ساتھ وقت کی کمی بھی بتائی جاتی ہے بات مختصر کر رہا ہوں کیونکہ مضمون کی طوالت میرے مدنظر ہے اور میں اس کو مختصرا سمیٹنا چاہتا ہوں مندرجہ بالا بحث سے یہ بات واضح ہوجاتی ہے کہ ہم تساہل اور سستی کا شکار ہیں جس کی وجہ سے مختلف عوارض کا بھی شکار ہو جاتے ہیں اور کبھی ذہنی طور پر بھی ہمت اور حوصلہ ساتھ چھوڑ دیتا ہے اس ماحول میں عشقِ امام حسین علیہ السلام ان کے اندر ایک ایسی حرارت پیدا کر دیتا ہے جس سے ان کی سستی اور ضعف ختم ہوجاتا ہے اور ایک بیمار لاغر کبھی پیدل نہ چلنے والا جب یہ واقعہ انجام دیتا ہے تو اپنے اندر بھرپور جسمانی اور روحانی توانائی محسوس کرتا ہے اور واپس اپنے اپنے مقام پر پہنچ کر پہلے سے زیادہ مستعدی سے کام کرتا ہے اور مشقتوں سے گھبرانا چھوڑ دیتا ہے لہذا اس کی روشنی میں یہ قیاس بالکل درست ہوگا کہ عالمی طاقتور قوم جنم لے رہی ہے جو بالآخر ظہور امام زمانہ علیہ السلام کی راہ ہموار کرنے میں مددگار ثابت ہوگی۔    

 اسی طرح ہم دیکھتے ہیں کہ اگر دنیا میں کسی جگہ پر انسانی حقوق کی پامالی ہورہی ہے تو اس عظیم موقع پر ان کے خلاف بھرپور آواز اٹھائی جا سکتی ہے اور اس طرح انسانی حقوق کا بھرپور دفاع ہو سکتا ہے۔ اس کو بچوں کی جسمانی ذہنی روحانی اور علمی تربیت گاہ کے طور پر بھی استعمال کیا جاسکتا ہے کہ یہ اعجازِ امام حسین علیہ السلام ہے اور دنیا حیران ہے کہ اتنے لوگ کیسے ایک جگہ پر اکٹھے ہو جاتے ہیں اور ان کی رہائش کھانا پینا اور دیگر ضروریات کیسے پوری ہوتی ہونگی اگر اس بات کو سوچتے رہو گے تو ورطہ حیرت میں ڈوبے رہو گے ہاں اگر ایک دفعہ اس واک میں شرکت کرو گے تو کبھی یہ وہم دماغ میں نہیں آئے گا یہ حضرت ابوالفضل عباس علیہ السلام کی قیادت میں ایک عظیم روحانی انقلاب ہے جو اپنی منزل کی طرف رواں دواں ہے۔    

اگرچہ اس پر اور بہت کچھ لکھا جا سکتا تھا لیکن مختصر اس لیے لکھا کہ آپ قارئین محترم کا زیادہ وقت نہ لگے اور آپ خداوند متعال کی تائید سے اس واک کے ذریعہ امام حسین علیہ السلام کے ساتھ متصل ہو جائےں۔اب بات یہ ہے کہ اس عظیم واقعے کے بارے میں اگر اتنے خیالات میرے ذہن میں آئے ہیں تو دشمن بھی اس سے غافل نہیں ہوگا اور یقینا اس اربعین واک اور اس کے نتائج پر گہری نظر رکھے ہوئے ہو گا اور اس کو سبوتاژ کرنے کے لیے سازشیں بن رہا ہوگا اس کا ایک اشارہ اس دفعہ اربعین سے کچھ دن پہلے بغداد میں جوحالات پیش آئے کو سمجھا جاسکتا ہے۔    

لہذااب ذمہ داران کی ذمہ داری ہے کہ اپنی اپنی ذمہ داری پوری کریں اس و اک کا حصہ بن جائیں اور یہ کروڑوںلوگ امام زمانہ علیہ السلام کے منتظر ہیں جب آئیں گے تو آپ کے لیے لبیک یا امامؑ کی صدائیں دنیا کے ہر کونے میں سنی جائیںگی ۔اور آخر میں یہ بھی کہنا چاہتا ہوں اگر واک کی منت مانی جائے اور واک میں شرکت کرکے التجا اور دعائیں کی جائیں تو باطفیلِ حضرت ابوالفضل عباس علیہ السلام ثاراللہ حضرت امام حسین علیہ السلام کو وسیلہ بنایا جائے اور دل سے توسل کیا جائے تو کوئی دعا رد نہیں ہوتی۔اور آخر میں دعا ہے جو جو اس اربعین واک میں شرکت کریں امام مہدی علیہ السلام امام زمانہؑ اس کے حامی و ناصر ہوں دشمنان حق ذلیل اور رسوا ہوں حق والوں کو خداوند متعال فتح عظیم عطا کرے آمین۔

تحریر: ڈاکٹر سید افتخار حسین نقوی (فیصل آباد)

وحدت نیوز(قم) ملک کے وزیراعظم کو ڈنڈا بردار فورس کے ذریعے گرفتار کرنے کی دھمکی ملکی نظام سے بغاوت اور اعلان جنگ ہے،جس جس نے بھی کشمیر سے خیانت کی ذلت رسوائی اس کا مقدر ہوگی،ان خیالات کا اظہار مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے سیکرٹری امور خارجہ علامہ ڈاکٹر سید شفقت حسین شیرازی نے اپنے بیان میں کیا۔

 انہوں نے اسلام آباد میں جاری کرپٹ اور مسترد شدہ نام نہاد اپوزیشن کے دھرنے پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ مظلوم کشمیریوں کی آھیں اور انکا ناحق بہنے والے خون اس دھرنے کو بھا لے جانے کا کفیل ہے، مولانا 1977 کی تاریخ دھرانے کی کوشش کر رہے ہیںلیکن اب زمانہ بہت بدل چکا ہے، اگر پی پی پی کی قیادت بھٹو کی صلبی اولاد کے پاس ہوتی تو انکے قاتلوں کے ساتھ ملکر عوامی منتخب حکومت گرانے دھرنے میں نہ جاتی۔

علامہ ڈاکٹر شفقت حسین شیرازی نے مزید کہا کہ دھرنوں کا فائدہ پاکستان کو نہیں مودی سرکار کو ہے کشمیریوں پر تین ماہ سے کرفیو مسلط کیا گیا ہے انکا سانس لینا مشکل ہو چکا ہےاور دوسری طرف ملک کے امن کو تباہ کرنے مولانا اسلام اباد پہنچ گئے ہیں،مولانا فضل الرحمن ملک میں انتشار اور انارکی کی فضا پیدا کرنے کے لئے نکلا ہے جس میں کامیابی ممکن نہیں عوام مولانا کے عزائم سے بخوبی واقف ہیں۔

وحدت نیوز(جیکب آباد) جیکب آباد کے مومنین کا گستاخِ اہل بیتؑ کی گرفتاری کے لئے دوسرے روز بھی احتجاجی مظاہرہ۔ ٹائر جلا کر گستاخ امام زمانہ کے خلاف فوری کاروائی کا مطالبہ۔احتجاج کئی گھنٹے احتجاج جاری رہا۔دادو کے گوٹھ پھلجی تحصیل جوہی کے کالعدم دھشت گرد گروہ کے کارکن گستاخ عبدالستار جمالی ولد سکندر جمالی کی جانب سے حضرت حجت خدا ولی اللہ الاعظم قطب عالم امکان فرزند رسول امام زمانہ آقا مہدی علیہ الصلوۃ والسلام کی شان میں گستاخی کرنے کے خلاف ملک بھر کے عاشقان اہل بیت میں شدید غم و غصہ جیکب آباد کے مومنین نے آج دوسرے روز بھی بھرپور مظاہرہ کیا۔

مظاہرین سے مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی ترجمان علامہ مقصود علی ڈومکی ،ممتاز شیعہ رہنما سید احسان شاہ بخاری ،سید کامران شاہ آئی ایس او کے رہنما اللہ بخش میرالی، رجب پیچوہو، ایم ڈبلیو ایم کے ضلعی رہنما حاجی سیف علی ڈومکی، وسیم لطیف مہر ،سٹی رہنما نذیر حسین دایو و دیگر نے خطاب کیا۔

اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے علامہ مقصود علی ڈومکی نے کہا کہ حضرت امام مہدی علیہ السلام پر ایمان تمام مسلمانوں کا مشترکہ عقیدہ ہے اور ان کے فضائل تمام آسمانی کتابوں میں بیان ہوئے ہیں تورات زبور انجیل اور قرآن کریم نے اس منجی عالم بشریت کی عظمت و صداقت کا تذکرہ کیا ہے۔ قرآن کریم کی 313 آیات کریمہ امام مہدی علیہ السلام کی شان میں نازل ہوئی ہیں۔ ان کی شان میں گستاخی سے کروڑوں انسانوں کی دل آزاری ہوئی ہے۔

وحدت نیوز(ملتان) مجلس وحدت مسلمین جنوبی پنجاب کے سیکرٹری جنرل علامہ سید اقتدار حسین نقوی نے کہا ہے کہ فرزند رسول خدا (ص) امام زمانہ علیہ السلام کی شان میں گستاخی کرنے والے شخص کو فی الفور گرفتار کرکے قرار واقعی سزا دی جائے۔

 ملتان سے جاری بیان کے مطابق ایم ڈبلیو ایم جنوبی پنجاب کے سیکرٹری جنرل کا کہنا تھا کہ سندھ حکومت پر یہ ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ خاندان رسالت کے خلاف کی جانے والی توہین کا فوری نوٹس لے اورعبدالستار جمالی نامی شخص کے خلاف سخت ایکشن لے، تاکہ ملک کے امن کو خراب ہونے سے بچایا جاسکے۔

 اُنہوں نے کہا کہ اس وقت پاکستان سمیت دنیا بھر سے عاشقان اہل بیتؑ کے دل زخمی ہیں اگر اس کے خلاف فوری کاروائی نہ کی گئی تو حالات کی ذمہ داری سندھ حکومت پر عائد ہوگی، ہم حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں اے ریاست مدینہ کے دعویداروں آج تاجدار مدینہ کا دل زخمی کردیا گیا ہے۔ اُنہوں نے کہا کہ اگر اتوار تک اس گستاخ اہلیبیت کے خلاف کاروائی نہ کی گئی تو احتجاج کا سلسلہ شروع کریں گے۔

وحدت نیوز(لاہور) مجلس وحدت مسلمین سینٹرل پنجاب کے سیکرٹری جنرل علامہ عبدالخالق اسدی نے لاہور میں عہدیداروں سے خطاب کرتے ہوئے حجتِ خدا امام مہدی(ع) کی شان میں گستاخی کرنیوالے دادو کے گوٹھ پھلجی تحصیل جوہی کے کالعدم دہشت گرد گروہ کے کارکن عبدالستار جمالی ولد سکندر جمالی کی فوری گرفتاری کا مطالبہ کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ گستاخ اور دہشتگرد عبدالستار جمالی نے جہاں ریاست کی رٹ کی چیلنج کیا ہے وہیں اس نے آل رسول کی بھی توہین کی ہے جس کی سزا پھانسی ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کو اس گستاخ کیخلاف فوری کارروائی کرنی چاہیے بصورت دیگر ملک گیر احتجاج کی کال دی جا سکتی ہے۔

 انہوں نے کہا کہ ایسے بیانات سے امن و امان میں خلل کا امکان ہوتا ہے، اور کوئی بھی صاحبِ ایمان مسلمان امام مہدی (ع) کی شان میں گستاخی برداشت نہیں کر سکتا۔ امام مہدی(ع) تمام مسلم مکاتب فکر کے مشترک امام ہیں اور ان کے حوالے سے تمام مکاتب فکر کا عقیدہ ہے، عبدالستار جمالی نے جہاں امام مہدی(ع) کی شان میں گستاخی ہے وہیں اس نے یزید لعین کی بھی تعریف کرکے اپنے شجرہ نسب کی بھی وضاحت کر دی ہے۔ اس لئے حکومت فوری طور پر اس گستاخ کو کیفر کردار تک پہنچائے۔

وحدت نیوز (لاہور) مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی پولیٹیکل سیکریٹری اور فوکل پرسن حکومت پنجاب برائے بین المذاہب ہم آہنگی سید اسدعباس نقوی نے مجلس وحدت مسلمین لاھور شعبہ خواتین کی اراکین کابینہ سے خصوصی ملاقات کی۔ ‎

مرکزی پولیٹیکل سیکرٹری ایم ڈبلیو ایم سید اسد عباس نقوی نے محترمہ حنا تقوی سیکرٹری جنرل مجلس وحدت مسلمین شعبہ خواتین لاہور سے  وحدت ہاؤس میں خصوصی ملاقات کی۔

اس موقع پر محترمہ عظمیٰ نقوی ڈپٹی سیکرٹری جنرل،محترمہ حمیرا سیکریٹری شعبہ سیاسیات اور محترمہ نگین رضوی میڈیا سیکرٹری بھی موجود تھیں۔‎اس موقع پر 17 نومبر کو لاہور میںوحدت کانفرنس کے انعقاد کے حوالے سے آراء و تجاویز پیش کی گئیں۔

محترمہ حنا تقوی نے پارٹی کی سماجی،مذہبی و سیاسی کارکردگی کو بہتر بنانے کے لیے حکمت عملی تیار کرنے پر زور دیا۔‎محترم اسد نقوی کا کہنا تھا کہ ہمیں مجلس وحدت مسلمین کے پلیٹ  فارم پر لوگوں کو نظریات و افکار کے ذریعے اکٹھا کرنے کی ضرورت ہے۔ ‎پارٹی ورکنگ کے دیگر امور پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا۔

وحدت نیوز (اسلام آباد) دھرنا حکومت کے خلاف ہے اور گھبراہٹ اپوزیشن کے حلقوں میں ہے ۔ مولانا کو گھیر کر اسلام آباد لانے والے دور سے تماشا دیکھ رہے ہیں ۔ لاہور میں آزادی مارچ کے فلاپ شو نے ن لیگ کی عوامی قوت پر بھی سوالیہ نشان لگادیا ہے ۔ان خیالات کااظہار مرکزی سیکرٹری سیاسیات وفوکل پرسن حکومت پنجاب برائے مذہبی ہم آہنگی سید اسدعباس نقوی نے میڈیا سیل سے جاری بیان میں کیا۔

 انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم کا استعفی مانگنے والوں کو عوام نے مسترد کر دیا ہے اور مخصوص طبقہ فکر و جماعت کے لوگ مولانا کے ساتھ نکلے ہیں ۔ اسلام آباد بائیس لاکھ سے زیادہ کی آبادی کاشہر ہے جہاں پی پی پی اور ن لیگ کے ہزاروں ووٹر موجود ہیں اس کے باوجود مولانا کے دھرنے میں چند سو بھی جیالے اور متوالے نظر نہیں آرہے ۔

انہوں نے کہاکہ ن لیگی قیادت تذبذب کا شکار نظر آتی ہے ۔اے این پی مارچ میں شرکت کے بعد گھروں کو واپس جا چکی ہے ۔پی پی پی اپنی بے وجہ کی جلسہ کمپین میں مصروف ہے ۔ مولانا کے پاس اب بھی وقت ہے کہ حالات کی نزاکت کو سمجھتے ہوئے فیصلہ کریں اور دھرنا دھرنا کھیلنا بند کریں ۔

وحدت نیوز(اسلام آباد) یکم نومبر جشن آزادی گلگت بلتستان پر سربراہ مجلس وحدت مسلمین پاکستان علامہ راجہ ناصر عباس جعفری کا خراج تحسین۔ جدوجہد آزادی گلگت بلتستان کے عظیم شہدا ءکو خراج تحسین پیش کرتے ہیں ۔

ان کا کہناتھا کہ گلگت بلتستان پاکستان کا سب سے باوفا اور نظریاتی خطہ ہے ۔ستر سالہ محرومیوں کے باوجود سبز ہلالی پرچموں میں لپٹے شہداء وفاداری کی عظیم مثالیں ہیں ۔حکومت اور پاکستان کی تمام سیاسی جماعتوں کو مل کرگلگت بلتستان کے مستقبل پر فیصلہ کرنا ہوگا ۔

انہوںنے کہاکہ گلگت بلتستان کے آئینی حقوق سلب رکھ کر ہم مجرمانہ غفلت کا ارتکاب کر رہے ہیں ۔اگر سیاسی جماعتیں گلگت بلتستان کے الحاق سے متفق ہیں تو پارلیمنٹ میں فوری طور پر قرادار لائیں۔ آئین پاکستان کے اندر رہتے ہوئےگلگت بلتستان کو مسئلہ کشمیر کے فیصلے تک فوری عبوری صوبے کا سیٹ اپ دیا جائے۔

انہوںنے مزید کہاکہ گلگت بلتستان کی محرومیوں نے عوامی سطح پر تشویش اور غلط فہمیوں کو جنم دیا ہے۔ سپریم کورٹ آف پاکستان  کے گلگت بلتستان کی آئینی حیثیت اور حقوق پر فیصلے پر عملدرآمد نا ہونا افسوس ناک ہے ۔

وحدت نیوز(جیکب آباد) مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی ترجمان علامہ مقصود علی ڈومکی کی قیادت میں شہر کے مین ڈی سی چوک پر جیکب آباد کے مومنین کا احتجاجی مظاہرہ ٹائر جلا کر گستاخ امام زمانہ کے خلاف فوری کاروائی کا مطالبہ شدید بارش کے باوجود کئی گھنٹے احتجاج جاری رہا۔دادو کے گوٹھ پھلجی تحصیل جوہی کے کالعدم دھشت گرد گروہ کے کارکن گستاخ عبدالستار جمالی ولد سکندر جمالی کی جانب سے حضرت حجت خدا ولی اللہ الاعظم قطب عالم امکان امام زمانہ آقا مہدی علیہ الصلوۃ والسلام کی شان میں گستاخی کرنے کے خلاف ملک بھر کے عاشقان اہل بیت میں شدید غم و غصہ جیکب آباد کے مومنین نے ھنگامی طور پر مظاہرہ کیا۔

مظاہرین سے مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی ترجمان علامہ مقصود علی ڈومکی ،ممتاز شیعہ رہنما سید احسان شاہ بخاری، عزاداری کونسل ضلع جیکب آباد کے جنرل سیکرٹری سید غلام شبیر نقوی ،سید کامران شاہ ،آئی ایس او کے رہنما ندیم ڈومکی ،رجب پیچوہو، ایم ڈبلیو ایم کے ضلعی رہنما وسیم لطیف، مہر سٹی رہنما نذیر حسین دایو و دیگر نے خطاب کیا۔

اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے علامہ مقصود علی ڈومکی نے کہا کہ حضرت امام مہدی علیہ السلام پر ایمان تمام مسلمانوں کا مشترکہ عقیدہ ہے اور ان کے فضائل تمام آسمانی کتابوں میں بیان ہوئے ہیں تورات زبور انجیل اور قرآن کریم نے اس منجی عالم بشریت کی عظمت و صداقت کا تذکرہ کیا ہے۔ قرآن کریم کی 313 آیات کریمہ امام مہدی علیہ السلام کی شان میں نازل ہوئی ہیں۔ ان کی شان میں گستاخی سے کروڑوں انسانوں کی دل آزاری ہوئی ہے۔

در ایں اثناء مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی ترجمان علامہ مقصود علی ڈومکی نے ایس ایس پی دادو جناب فرخ رضا صاحب سے ٹیلیفون پر گفتگو کرتے ہوئے اس افسوسناک واقعہ کے تناظر میں مجرم کی فوری گرفتاری کا مطالبہ کیا اور اس کے خلاف توہین اہل بیت ع اور توہین رسالت ص جیسے دفعات کے تحت ایف آئی آر درج کرنے کا مطالبہ کیا ایس ایس پی صاحب نے اپنے تعاون کا یقین دلایا۔

وحدت نیوز(کراچی) علامہ سید باقر زیدی نے رحیم یار خان میں تیزگام ایکسپریس حادثے میں قیمتی انسانی جانوں کے ضیاع پر اظہار افسوس کرتے ہوئے کہا کہ ٹرین حادثے میں جاں بحق ہونیوالے مسافروں کے اہل خانہ سے تعزیت کرتے ہیں اور زخمیوں کی جلد اور مکمل صحت یابی کے لئے دعاگو ہوں ۔

اطلاعات کے مطابق مجلس وحدت مسلمین صوبہ سندھ کے سیکریٹری جنرل علامہ سید باقر عباس زیدی نے رحیم یار خان کے نزدیک تیزگام ایکسپریس میں ہولناک آتشزدگی اور اس نتیجے میں 70 سے زائد مسافروں کی المناک ہلاکت پر اپنے انتہائی رنج و غم کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ گزشتہ ایک سال میں سندھ اور پنجاب میں ٹرین حادثوں میں قیمتی انسانی جانوں کا ضیاع المیہ ہے۔پاکستان ریلوے کی اعلیٰ قیادت کی جانب سے ریلوے کے نظام کو آسمان کی بلندیوں پر پہنچانے کے دعوے فقط دعوے ہی نظر آتے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ چند ماہ قبل سندھ کے شہر حیدرآباد میں بھی ٹرین کی بوگیاں الٹ جانے سے کئی مسافر اپنی جان کی بازی ہار گئے تھے، لیکن اس حادثے کی تحقیقات کے نتائج ابھی تک سامنے نھیں آئے تھے کہ آج رحیم یار خان میں ایک اور ہولناک حادثہ پیش آگیا۔

علامہ باقر عباس زیدی کا کہنا تھا کہ آج بھی پاکستان میں ریلوے کا وہی نظام چل رہا ہے کہ جو پاکستان کے قیام سے قبل تھا۔انھوں نے کہا کہ ہر دور میں ریلوے کی اہم وزارت پر براجمان ہونے والے وزراء نے ادارے کی کارکردگی کو بہترین اور اس کے نظام کو آسمان کی بلندیوں پر پہنچانے کے دعوے تو بہت کئے لیکن وہ دعویٰ ہی کیا جو وفا ہو جائے۔

علامہ باقر عباس زیدی نے وفاقی حکومت خصوصاً وفاقی وزیر ریلوے شیخ رشید احمد سے مطالبہ کیا کہ وہ ٹرین حادثے میں زخمی مسافروں کو بہتر سے بہتر طبی سہولیات کی فراہمی کو ممکن بناتے ہوئےجاں بحق مسافروں کے ورثا اور زخمیوں کے لئے فوری مالی معاونت کا اعلان کریں اور حادثے کی فوری اور شفاف تحقیقات کراتے ہوئے ذمہ داروں کے خلاف کاروائی کریں۔

Page 5 of 978

مجلس وحدت مسلمین پاکستان

مجلس وحدت مسلمین پاکستان ایک سیاسی و مذہبی جماعت ہے جسکا اولین مقصد دین کا احیاء اور مملکت خدادادِ پاکستان کی سالمیت اور استحکام کے لیے عملی کوشش کرنا ہے، اسلامی حکومت کے قیام کے لیے عملی جدوجہد، مختلف ادیان، مذاہب و مسالک کے مابین روابط اور ہم آہنگی کا فروغ، تعلیمات ِقرآن اور محمد وآل محمدعلیہم السلام کی روشنی میں امام حسین علیہ السلام کے ذکر و افکارکا فروغ اوراس کاتحفظ اورامر با لمعروف اور نہی عن المنکرکا احیاء ہمارا نصب العین ہے 


MWM Pakistan Flag

We use cookies to improve our website. Cookies used for the essential operation of this site have already been set. For more information visit our Cookie policy. I accept cookies from this site. Agree