The Latest

وحدت نیوز(گلگت) کرونا کا خاتمہ تب ممکن ہے جب لوگ ماہرین کی جانب سے دی گئی ہدایات پر من وعن عمل پیرا ہوں۔ضلع نگر کے عوام نے ایک ذمہ دار قوم بن کر کرونا کا مقابلہ کیا اور آج نگر کرونا فری ضلع قرار پایا۔ضلع گلگت اور ضلع استور میں کرونا کا پھیلائو تشویشناک ہے۔ ان خیالات کا اظہارمجلس وحدت مسلمین گلگت بلتستان کے ڈپٹی سیکرٹری جنرل شیخ نیئر عباس مصطفوی نے دنیور مچوکال میں مستحقین کو راشن تقسیم کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے کہا کہ استور اور گلگت میں کرونا مریضوں کی بڑھتی ہوئی تعداد انتہائی تشویشناک ہے حکومت ان علاقوں میں کرونا کے پھیلائو کو روکنے کیلئے عملی اقدامات کرے۔گلگت اور استور میں کرونا کا پھیلائو حکومت کی نااہلی اورعوام کا احتیاطی تدابیر پر عمل نہ کرنے کا نتیجہ ہے۔عوام احتیاطی تدابیر پر عمل پیراہوکر روزگار کا حصول ممکن ہے،روزانہ اجرت پر کام کرنے والے انتہائی مشکل سے دوچار ہیں،مخیر حضرات آگے بڑھ کر مشکل کی اس گھڑی میں اپنا کردار ادا کریں۔

انہوں نے کہا کہ اس وبا کا مقابلہ حکمت اور تدبیر سے کرنا ہے جس کیلئے قوم اپنے آپ کو تیار کرے۔کرونا کا وبا ایک آزمائش ہے اور اس آزمائش سے نکلنے کا واحد حل خدا و رسول کے بتائے ہوئے سنہرے اصولوں کو اپنانے میں پنہاںہے۔انسانی ہمدردی کے جذبے کے تحت صاحب ثروت افراد کی ذمہ داری ہے کہ کم آمادنی والے اور غریب خاندانوں کا خیال رکھیں اور اگر ہم اس مشکل گھڑی میں اپنے غریب بھائیوں کو یاد رکھیں گے تو انشا ء اللہ خداوند عالم ہمیں اس وبائی مرض سے نجات عطا کرے گا۔

وحدت نیوز (اسلام آباد) عزاداری ہمارا قانونی و آئینی حق ہے جس پر کوئی سمجھوتہ نہیں ہو سکتا۔حکومت کی طے شدہ ایس او پیز پر عمل کرتے ہوئے عزاداری کے مراسم کو ادا کیا جائے ،صدر اور وزیراعظم پاکستان کی طرف سے جاری کردہ ایس او پیز کے تحت عزاداری کے اجتماعات پر صوبائی حکومتوں کا رکاوٹیں کھڑی کرنا افسوسناک عمل ہے۔ان خیالات کا اظہار سربراہ مجلس وحدت مسلمین پاکستان علامہ راجہ ناصرعباس جعفری نے میڈیاسیل سے جاری بیان میں کیا۔

انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومتوں عزاداری کے اجتماعات میں رکاوٹ ڈالنے سے باز رہیں۔لاک ڈاؤن میں نرمی کے بعد عزاداری میں رکاوٹ ڈالنے کا کوئی جواز باقی نہیں رہا ۔ایس او پیز پر عمل کرتے ہوئے عبادات کو آزادی سے سر انجام دینا ہر لحاظ سے درست اور قانون کے مطابق ہے ۔صدر، وزیر اعظم ، آرمی چیف اور چیف جسٹس آف پاکستان صوبائی حکومتوں کی ہٹ دھرمی کا نوٹس لیں ۔

وحدت نیوز(آرٹیکل) مفاتیح الجنان سے نقل ہے کہ رمضان المبارک کی انیسویں رات پہلی شب قدر ہے اور شب قدر وه رات ہے که پورے سال کوئی رات اس کی فضیلت کو نہیں پہنچ سکتی ہے اوریہ رات ہزآر مہینوں سے افضل  اس رات کے اعمال ہزار مہینه کے اعمال سے بہترہیں اور اس رات میں سال کے امور مقدر ہوتے ہیں اور ملائکه اور روح جو سب سے عظیم ملک ہے اس رات میں پروردگار کے حکم سے زمین پر نازل ہوتے ہیں اور امام زمانه (عج) کی خدمت میں پہنچتے ہیں اور جو کچھ ہر شخص کے لئے مقدر ہوا ہے امام کے روبرو پیش کرتے ہیں .
شب قدر کے اعمال دو قسم کے ہیں .
اعمال مشترک اوراعمال مخصوصه.اعمال مشترک
وه ہیں جو تینوں شب قدر میں بجالائے جاتے ہیں اور اعمال مخصوصه وه ہیں جو هر ایک رات کے ساتھ مخصوص ہیں.

اعمال مشترک

1- غسل کرنا، علامه مجلسی نے فرمایا ہے که ان راتوں کا غسل غرب آفتاب سےمتصل کرنا بهتر ہے تاکه نماز مغرب کو غسل کے ساتھ پڑھے.
2- دو رکعت نماز پڑھے.ہر رکعت میں حمد کے بعد سات مرتبه سوره توحید پڑھے،اور فارغ ہونےکے بعدستر مرتبه کھے:أَسْتَغْفِرُ اللَّهَ وَ أَتُوبُ إِلَيْه.
حضرت رسول خد(ص)کی روایت ہے که یه اپنی جگه سے اٹھےگامگریه که خدا اس کواور اس کے ماں باپ کو بخش دے.
3- قرآن مجیدکو کھولےاور اپنے سامنے رکھ کر یه دعا پڑھے:اللَّهُمَّ إِنِّي أَسْأَلُكَ بِكِتَابِكَ الْمُنْزَلِ‏ وَ مَا فِيهِ وَ فِيهِ اسْمُكَ الْأَكْبَرُ وَ أَسْمَاؤُكَ الْحُسْنَى وَ مَا يُخَافُ وَ يُرْجَى أَنْ تَجْعَلَنِي مِنْ عُتَقَائِكَ مِنَ النَّارِ، خدایا!
میں تجھ سے درخواست کرتاہوں تیری نازل شده کتاب کے ذریعه اور جو کچھ اس میں ہے اس میں ہے اوراس میں تیرا عظیم نام ہے اور تیرےنیک نام ہیں اورجس سے خوف کیا جاتا ہے اور امید لگائی جاتی ہے که تو مجھ کو جهنم سے آزاد کردے
اس کے بعد جوبھی حاجت چاہے طلب کرے.
4- قرآن کو اپنے سر پر رکھے اور کہے :
اللَّهُمَّ بِحَقِّ هَذَا الْقُرْآنِ‏وَ بِحَقِّ مَنْ أَرْسَلْتَهُ بِهِ وَ بِحَقِّ كُلِّ مُؤْمِنٍ مَدَحْتَهُ فِيهِ وَ بِحَقِّكَ عَلَيْهِمْ،فَلا أَحَدَ أَعْرَفُ بِحَقِّكَ مِنْكَ.خدایا اس قرآن کے حق کےواسطه سے اور اس شخص کے حق کے واسطه سے جن کو تونے بھیجا ہے اس کے ساتھ اور هر مؤمن کے حق کے واسطه سے جس کی تونے اس میں مدح کی ہے اور تیرے حق کے واسطه سے ان کے اوپر کوئی تجھ سے زیاده تیرے حق کا پهچاننے والا نہیں ہے.
پھردس مرتبه کہے بِكَ يَا اللَّهُ دس مرتبه بِمُحَمَّدٍ دس مرتبه بِعَلِيٍّ اور ان پر تیرے حق کا واسطه پس کوئی نہیں جانتا تیرے حق کو تجھ سے بڑھ کر اے الله تیرا واسطه ، محمد کا واسطه، علی کا واسطه،دس مرتبه بِفَاطِمَةَ دس مرتبه بِالْحَسَنِ دس مرتبه بِالْحُسَيْنِ دس مرتبه بِعَلِيِّ بْنِ الْحُسَيْنِ دس مرتبه بِمُحَمَّدِ بْنِ عَلِيٍّ،فاطمه کا واسطه حسن کا واسطه، حسین کا واسطه ، محمد بن علی کا واسطه دس مرتبه بِجَعْفَرِ بْنِ مُحَمَّدٍ دس مرتبه بِمُوسَى بْنِ جَعْفَرٍ دس مرتبه بِعَلِيِّ بْنِ مُوسَى دس مرتبه بِمُحَمَّدِ بْنِ عَلِيٍّ،
جعفربن محمد کا واسطه موسی بن جعفر کا واسطه علی بن موسی کا واسطه محمد بن علی کا واسطه دس مرتبهبِعَلِيِّ بْنِ مُحَمَّدٍ دس مرتبه بِالْحَسَنِ بْنِ عَلِيٍّ دس مرتبه بِالْحُجَّةِ،علی بن محمد کا واسطه حسن بن علی کا واسطه حجة قائم کا واسطه.
پھر اپنی حاجات طلب کرو
5- امام حسین کی زیارت پڑھے ، حدیث میں ہے که جب شب قدرآتی ہےهفتم آسمان کا منادی ندا کرتا ہے بطن عرش سے که خداوند عالم نے بخش دیا اس شخص کو جو زیارت قبر امام حسین کے لئے آیاہے.
6- رات بھر بیدار رہےروایت میں ہے که جو شب قدر میں بیدار رہے اس کے گناه بخش دیئے جائیں گے چاہے وه آسمانوں کے ستاروں اورپهاڑوں اور در یاؤں کے عدد کے برابر ہوں .
7- سو رکعت نمازپڑھے جس کی فضیلت بهت زیاده ہے بهتر یه ہے که هر رکعت میں حمد کے بعد دس مرتبه توحید پڑھے.
8-یه دعا پڑھے
اللَّهُمَّ إِنِّي أَمْسَيْتُ لَكَ عَبْدا دَاخِرالا أَمْلِكُ لِنَفْسِي نَفْعا وَ لا ضَرّا وَ لا أَصْرِفُ عَنْهَا سُوءا، أَشْهَدُ بِذَلِكَ عَلَى نَفْسِي وَ أَعْتَرِفُ لَكَ بِضَعْفِ قُوَّتِي وَ قِلَّةِ حِيلَتِي فَصَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وَ آلِ مُحَمَّدٍ وَ أَنْجِزْ لِي مَا وَعَدْتَنِي وَ جَمِيعَ الْمُؤْمِنِينَ وَ الْمُؤْمِنَاتِ مِنَ الْمَغْفِرَةِ فِي هَذِهِ اللَّيْلَةِ وَ أَتْمِمْ عَلَيَّ مَا آتَيْتَنِي فَإِنِّي عَبْدُكَ الْمِسْكِينُ الْمُسْتَكِينُ الضَّعِيفُ الْفَقِيرُ الْمَهِينُ اللَّهُمَّ لا تَجْعَلْنِي نَاسِيالِذِكْرِكَ فِيمَا أَوْلَيْتَنِي وَ لا [غَافِلا] لِإِحْسَانِكَ فِيمَا أَعْطَيْتَنِي وَ لا آيِسا مِنْ إِجَابَتِكَ وَ إِنْ أَبْطَأَتْ عَنِّي فِي سَرَّاءَ [كُنْتُ‏] أَوْ ضَرَّاءَ أَوْ شِدَّةٍ أَوْ رَخَاءٍ أَوْ عَافِيَةٍ أَوْ بَلاءٍ أَوْ بُؤْسٍ أَوْ نَعْمَاءَ إِنَّكَ سَمِيعُ الدُّعَاء،خدا یا میں نے شام کی ہے بنده آستاں بوس کی طرح جو اپنے نفع اور نقصان کا اختیار نہیں رکھتا ہے اور اپنے نفس سے کسی برائی کو دور نہیں کرسکتامیں گواهی دیتاہوں اس کی اپنے نفس پراور تجھ سے اعتراف کرتاہوں اپنی قوت کی کمزوری اوراپنی تدبیرکی کمی کا تومحمد وآل محمد پردرود نازل کراور جس کا تونے مجھ سے وعده کیا ہے اس کو پورا کردے اور جس کا تونے تمام مومنین و مومنات سے وعده کیا ہے بخش دینے کا اس رات میں اسے پورا کردے اور جو تونے مجھ کو دیا ہے اس کو مکمل عطاکر میں تیرا مسکین،حاجت مند،کمزور اور فقیر او رناتواں بنده ہوں خدایا مجھ کو اپنے ذکر کا بھولنے والا نه قرار دینا اس میں جس کو تونے عطا کیا ہے ااورنه اپنے احسان سے غافل جس میں تونے مجھ کو عطا کیا ہے اور نه اپنی قبولیت سے مایوس ہونے والا چاہے دیر ہوجائے مجھ سے راحت میں نقصان میں یا سختی میں یا آسایش میں یا عافیت میں یا بلاء میں یا تنگی میں یا نعمت میں بیشک تو دعا کا سننے والا ہے.اس دعا کوکفعمی نےامام زین العابدین سےروایت ہے که ان راتوں میں پڑھے قیام و قعود اور رکوع سجده کی حالت میں.علامه مجلسینےفرمایا ہے که ان راتوں میں بهترین اعمال طلب مغفرت اور اپنے دینا و آخرت کے مطالب کے لئے دعا کرنا اوراپنے والدین اور اپنے عزیزوں اور برادران ایمانی زنده و مرده کے لیے دعا کرنااور ذکر خدا اور محمد و آل محمد پر صلوات پڑھنا ہے جتنا ممکن ہو اور
بعض روایتوں میں ہے که دعائے جوشن کبیر ان تینوں راتوں میں پڑھے.اور روایت ہے که رسول (ص) کی خدمت میں عرض کیا گیا اگر میں شب قدر کوپالوں تو خدا سے کیا مانگوں تو فرمایاکه عافیت .

اعمال مخصوصه

انیس شب کے اعمال

جو هر شب قدر کے ساتھ مخصوص ہیں ، انیسویں شب کے مخصوص اعمال میں چند چیزیں ہیں :
1-أَسْتَغْفِرُ اللَّهَ رَبِّي وَ أَتُوبُ إِلَيْه100مرتبه
2-اللَّهُمَّ الْعَنْ قَتَلَةَ أَمِير الْمُؤْمِنِين100مرتبه
بخشش چاهتاہوں الله سے جو میرارب ہے اور اس کے حضور توبه کرتاہوں اے معبود!لعنت
فرما امیرالمؤمنین کے قاتلین پر .
3- دعا:يَا ذَا الَّذِي کان،کوپڑھے“اے وه جو موجود تھا”.
4- یه دعا پڑھے
اللَّهُمَّ اجْعَلْ فِيمَا تَقْضِي وَ تُقَدِّرُ مِنَ الْأَمْرِ الْمَحْتُومِ‏وَ فِيمَا تَفْرُقُ مِنَ الْأَمْرِ الْحَكِيمِ فِي لَيْلَةِ الْقَدْرِ وَ فِي الْقَضَاءِ الَّذِي لا يُرَدُّ وَ لا يُبَدَّلُ أَنْ تَكْتُبَنِي مِنْ حُجَّاجِ بَيْتِكَ الْحَرَامِ الْمَبْرُورِ حَجُّهُمْ الْمَشْكُورِ سَعْيُهُمْ الْمَغْفُورِ ذُنُوبُهُمْ الْمُكَفَّرِ عَنْهُمْ سَيِّئَاتُهُمْ وَ اجْعَلْ فِيمَا تَقْضِي وَ تُقَدِّرُ أَنْ تُطِيلَ عُمْرِي وَ تُوَسِّعَ عَلَيَّ فِي رِزْقِي وَ تَفْعَلَ بِي كَذَا وَ كَذَا،خدایا تو مقرر فرما اپنی قضا وقدر میں حتمی امرسے اور جس میں تو تقسیم کرتاہے امور حکیمانه کو شب قدر میں اور اس فیصله میں جو رد و بدل نہیں کیا جاتا ہے که تو مجھ کو لکھ دے اپنے بیت حرام کے حاجیوں میں جن کا حج مقبول ہو جن کی کوشش مشکور ہو جن کے گناه بخشے ہوئے ہوں جن کی برائیاں در گذر کی ہوئی ہوں اور قرار دے اپنےقضا وقدر میں که میری عمر لمبی ہو اور میرا رزق و سیع ہو اور میرے ساتھ ایسا برتا ؤکر(حاجت ذکر کرے)

اکیسویں رات کے اعمال

اس کی فضیلت انیسویں شب سے زیاده ہےاور چاهئے که اس شب میں بھی غسل،بیداری،
زیارت امام حسین، سات قل ہو الله والی نماز،قرآن کو سر پر رکھنا ، سور رکعت نماز اور دعاء جوشن کبیر وغیره کا عمل بجالائیں.
جو دعائیں کافی کی سند کے ساتھ اور مقنعه و مصباح میں مرسل طورپر نقل ہوئی ہیں ان میں سے ایک یه ہے که اس کو اکیسویں رمضان کی رات پڑھے.
يَا مُولِجَ اللَّيْلِ فِي النَّهَارِ وَ مُولِجَ النَّهَارِ فِي اللَّيْلِ وَ مُخْرِجَ الْحَيِّ مِنَ الْمَيِّتِ وَ مُخْرِجَ الْمَيِّتِ مِنَ الْحَيِّ يَا رَازِقَ مَنْ يَشَاءُ بِغَيْرِ حِسَابٍ يَا اللَّهُ يَا رَحْمَانُ يَا اللَّهُ يَا رَحِيمُ يَا اللَّهُ يَا اللَّهُ يَا اللَّهُ لَكَ الْأَسْمَاءُ الْحُسْنَى وَ الْأَمْثَالُ الْعُلْيَا وَ الْكِبْرِيَاءُ وَ الْآلاءُ أَسْأَلُكَ أَنْ تُصَلِّيَ عَلَى مُحَمَّدٍ وَ آلِ مُحَمَّدٍ وَ أَنْ تَجْعَلَ اسْمِي فِي هَذِهِ اللَّيْلَةِ فِي السُّعَدَاءِ وَ رُوحِي مَعَ الشُّهَدَاءِ وَ إِحْسَانِي فِي عِلِّيِّينَ وَ إِسَاءَتِي مَغْفُورَةً وَ أَنْ تَهَبَ لِي يَقِينا تُبَاشِرُ بِهِ قَلْبِي وَ إِيمَانا يُذْهِبُ الشَّكَّ عَنِّي وَ تُرْضِيَنِي بِمَا قَسَمْتَ لِي وَ آتِنَا فِي الدُّنْيَا حَسَنَةً وَ فِي الْآخِرَةِ حَسَنَةً وَ قِنَا عَذَابَ النَّارِ الْحَرِيقِ وَ ارْزُقْنِي فِيهَا ذِكْرَكَ وَ شُكْرَكَ وَ الرَّغْبَةَ إِلَيْكَ وَ الْإِنَابَةَ وَ التَّوْفِيقَ لِمَا وَفَّقْتَ لَهُ مُحَمَّدا وَ آلَ مُحَمَّدٍ عَلَيْهِ وَ عَلَيْهِمُ السَّلامُ، اے رات کو دن میں داخل کرنے والے اور دن کو رات میں داخل کرنے والے اے زنده کو مرده سے نکالنے والےاور مرده کو زنده سے نکالنے والے،اے روزی دینے والے ، جس کو چاہے بے حساب اے الله ، اے رحم کرنے والے، اے الله ، اے رحیم ،اے الله ، اے الله تیرے هی نیک نام ہیں اوربلند ترین مثالیں ہیں اور کبریائی اور نعمیتں ہیں. میں تجھ سے سؤال کرتاہوں که تو دورد نازل کرمحمد وآل محمد پر.،اور میرےنام کواس رات میں نیک بختوں میں قرار دے،اور میری روح کو شهیدوں کے ساتھ اور میری اطاعت کو علین میں،.اور میری برائیوں کو معاف کیا ہوا اور مجھ کو عطاکر وه یقین جو میرے دل سے برابر ملارہے اور وه ایمان که شک مجھ سے دور ہوجائیں اور مجھ کو راضی کردے اس سے جو تو میرے لئے تقسیم کی ہے اور هم کو دنیا میں نیکی اور آخرت میں نیکی عطا کر اورجهنم کی جلانے والی آگ سے هم کو بچالے اور اس رات میں هم کو اپنےذکر کی توفیق دےاور اپنے شکر کی اور اپنی طرف رغبت کی اور توبه کی اور وه توفیق جو تونے محمد و آل محمد علیهم السلام کو عطا فرمائی ہے.

تییسویں رات کی دعا

يَا رَبَّ لَيْلَةِ الْقَدْرِ وَ جَاعِلَهَا خَيْرا مِنْ أَلْفِ شَهْرٍ وَ رَبَّ اللَّيْلِ وَ النَّهَارِ وَ الْجِبَالِ وَ الْبِحَارِ وَ الظُّلَمِ وَ الْأَنْوَارِ وَ الْأَرْضِ وَ السَّمَاءِ يَا بَارِئُ يَا مُصَوِّرُ يَا حَنَّانُ يَا مَنَّانُ يَا اللَّهُ يَا رَحْمَانُ يَا اللَّهُ يَا قَيُّومُ يَا اللَّهُ يَا بَدِيعُ يَا اللَّهُ يَا اللَّهُ يَا اللَّهُ لَكَ الْأَسْمَاءُ الْحُسْنَى وَ الْأَمْثَالُ الْعُلْيَا وَ الْكِبْرِيَاءُ وَ الْآلاءُ أَسْأَلُكَ أَنْ تُصَلِّيَ عَلَى مُحَمَّدٍ وَ آلِ مُحَمَّدٍ وَ أَنْ تَجْعَلَ اسْمِي فِي هَذِهِ اللَّيْلَةِ فِي السُّعَدَاءِ وَ رُوحِي مَعَ الشُّهَدَاءِ وَ إِحْسَانِي فِي عِلِّيِّينَ وَ إِسَاءَتِي مَغْفُورَةً وَ أَنْ تَهَبَ لِي يَقِينا تُبَاشِرُ بِهِ قَلْبِي وَ إِيمَانا يُذْهِبُ الشَّكَّ عَنِّي وَ تُرْضِيَنِي بِمَا قَسَمْتَ لِي وَ آتِنَا فِي الدُّنْيَا حَسَنَةً وَ فِي الْآخِرَةِ حَسَنَةً وَ قِنَا عَذَابَ النَّارِ الْحَرِيقِ وَ ارْزُقْنِي فِيهَا ذِكْرَكَ وَ شُكْرَكَ وَ الرَّغْبَةَ إِلَيْكَ وَ الْإِنَابَةَ وَ التَّوْبَةَ وَ التَّوْفِيقَ لِمَا وَفَّقْتَ لَهُ مُحَمَّدا وَ آلَ مُحَمَّدٍ عَلَيْهِمُ السَّلام.
اے شب قدر کے رب اور اس کو هزارمهینه سے بهتربنانےوالے اوررات دن،پهاڑ، دریا،تاریکی اور روشنی زمین و آسمان کے پرور
دگار ، اے پیدا کرنے والے اے صورت گر اے مهربان اے نعمت دینےوالے، اے الله،
اے رحمن ، اے قائم بذات خود، اے الله اے پیدا کرنے والے ، اے الله ، اے الله ، تیرے هی لیے بهترین نام ہیں،اوربلند مثالیں، اور بزرگی اورنعمتیں ہیں میں تجھ سے سوال کرتاہوں که دورد نازل کر محمد وآل محمد پر اور میرے نام کو تو قرار دے آج کی رات خوش بختوں میں اور میری روح کوشهیدوں کےساتھ اور میرے عمل کومقام علیین میں اور میری غلطیوں کو بخشا ہوا اور مجھ کوعطا کرده یقین جو میرے دل سےملارہے اور ایمان جو مجھ سے شک کودور کردے اور تو مجھ راضی کردےاس سے جو تو نے تقسیم کیا ہے اور مجھ کو عطا کردنیا میں نیکی اور آخرت میں نیکی اور هم کو بچالے جهنم کی جلتی ہوئی آگ سے اور مجھ کو توفیق عطا کر اس رات میں اپنے ذکر،شکر اور اپنی طرف رغبت کی اور انابت اور توبه کی اور توفیق کی جو تونے محمد وآل محمد علیهم السلام کو عطا کی ہے.
اور روایت کی ہےمحمد بن عیسیٰ نے اپنی سند سے صالح لوگوں سےانہوں نے فرمایا :
تیئسوں شب میں ماه رمضان کی اس دعا کومکر سجده قیام و قعود، رکوع اورهر حالت میں پڑھے پورے مهینه بھر اور جتنا ممکن ہو اور جس وقت بھی یاد آجائے اس دعا کو زندگی میں پڑھتا رہے خداوند عالم کی حمدثنا اور پیغمبراکرم(ص) پر صلوات پڑھنے کے بعد، اللَّهُمَّ كُنْ لِوَلِيِّكَ
فلان بن فلان کی جگه نام امام زمانه لے:الْحُجَّةِ
بْنِ الْحَسَنِ صَلَوَاتُكَ عَلَيْهِ وَ عَلَى آبَائِهِ فِي هَذِهِ السَّاعَةِ وَ فِي كُلِّ سَاعَةٍ وَلِيّا وَ حَافِظا وَ قَائِدا وَ نَاصِراوَ دَلِيلا وَ عَيْنا حَتَّى تُسْكِنَهُ أَرْضَكَ طَوْعا وَ تُمَتِّعَهُ فِيهَا طَوِيلا.خدایا ہوجا اپنے ولی حجة بن الحسن کے لئے تیرا درود ہو ان پر اور ان کے آباء طاهریں پر اس وقت میں اور هر وقت میں سرپرست ، محافظ قائد،مدگار، رهنما اور نگهبان تاکه ان کو اپنی زمین پر سکونت دے اور
ان کو زیاده زمانه تک بهر ه مند کرتا رہے
یه دعا پڑھے: يَا مُدَبِّرَ الْأَمُورِ يَا بَاعِثَ مَنْ فِي الْقُبُورِ يَا مُجْرِيَ الْبُحُورِ يَا مُلَيِّنَ الْحَدِيدِ لِدَاوُدَ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وَ آلِ مُحَمَّدٍ وَ افْعَلْ بِي كَذَا وَ كَذَا
اے امور کی تدبیر کرنے والے اور قبروالوں کو اٹھا نے والے دریاؤں کو جاری کرنے والے اے داود کے لئے لوہے کو نرم کرنے والے دورد نزال کر محمد و آل محمد علیهم السلام پر اور میرے لئے ایسا ایسا کر،اور اس وقت اپنی حاجت کو زکر کرے. اللَّيْلَةَ اللَّيْلَة، اور بلند کرکے اپنے هاتھوں کو آسمان کی طرف یعنی دعاء ،يا مدبر الامور.
آخر تک پڑھتے وقت اور اس دعا کورکوع وسجده وقیام و قعود کی حالت میں مکرر پڑھتا رہے اور شب آخر ماه رمضان میں بھی پڑھے.

وحدت نیوز(کراچی) مجلس وحدت مسلمین کے صوبائی ڈپٹی سیکریٹری جنرل سید علی حسین نقوی نے وحدت ہاؤس کراچی میں منعقدہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ سندھ حکومت کی جانب سے مجلس وجلوس عزاداری امام علیؑ کے انعقاد میں ابہام پیدا کرنا باعث تشویش ہے۔ سندھ حکومت وفاقی حکومت کی ہدایات پر عمل کرتے ہوئے ملت جعفریہ پاکستان کو عزاداری کی اجازت فراہم کرے۔ عزادارحکومتی ایس او پی اور احتیاطی تدابیر پر عمل کرتے ہوئے عزاداری کے اجتماعات منعقد کرنے کے پابند ہیں۔ ایسی وقت میں کے جب ہمارا دشمن پڑوسی بھارت لائن آف کنٹرول پر ہماری قومی سلامتی کو چیلنج کررہا ہے،داخلی طور پر عزاداری کے خلاف ایسا حکومتی رویہ ناقابل فہم ہے۔

انہوں نے کہا کہ سندھ حکومت ماہ مبارک رمضان کے آغاز سے آج تک ایام شہادت امام علی ؑ کے اجتماعات کے انعقاد کی اجازت کے حوالے سے لیت ولعل سے کام لے رہی ہے، اکابرین ملت جعفریہ نے صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی اور وزیر اعظم پاکستان عمران خان سمیت تمام اعلیٰ حکومتی اور عسکری شخصیات کے سامنے کورونا وائرس کے پیش نظر طبی ماہرین کی ہدایات اور ایس اوپی پر عمل کرتے ہوئے عزائے امام علی ؑ کے انعقاد کی یقین دہانی کروائی تھی جس کی توثیق صدرمملکت اور وزیر اعظم پاکستان نے بھی کی تھی۔

علی حسین نقوی نے کہا کہ سندھ حکومت ہو ش کے ناخن لے اور شیعیان حیدر کرار ؑ کے جذبات سے کھیلنے کی کوشش نا کرے، ہم محب وطن قوم ہیں، ماضی ہماری تاریخ کا گواہ ہے، ہم نے ہر مشکل وقت میں اس مادر وطن کا فرنٹ لائن پر دفاع کیا ہے،کورونا وائرس اور لاک ڈاون میں بھی ایم ڈبلیوایم اور ملت جعفریہ نے بلاتفریق پاکستانیوں کی خدمت کو اپنا شعار سمجھا ہے، ایسے میں کہ جب ہمارااذلی دشمن لائن آف کنٹرول پرجارحیت کرکے ہماری قومی سلامتی اور خودمختاری کو چیلنج کررہا ہے،داخلی طور پر بحرانی کیفیت اور حالات پیدا کرنا دانشمندی نہیں،وزیر اعلیٰ سندھ فوری طور پر مرکزی جلوس یوم علیؑ اور علاقائی مجالس وجلوس عزا کے انعقاد کی اجازت جاری کریں۔

وحدت نیوز(اسلام آباد)مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی سیکرٹری جنرل علامہ راجہ ناصر عباس جعفری نے امیر المومنین حضرت علی علیہ السلام کی شب ضربت کے موقع پر مختلف وفو د سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ مسجد میںتاریخ کی پہلی دہشت گردی مولائے کائنات ،وصی پیغمبر ،امام اول حضرت علی ؑ کو ضرب لگا کر کی گئی۔انہوں نے کہا کہ دور عصر کی طرح اس وقت بھی دین کا لبادہ اوڑھ کر اسلام کی صفوں میں منافقین موجود تھے جنہوں نے اپنے دنیاوی فائدے کے لیے داماد رسول امام وقت کے خون سے اپنے ہاتھوں کو رنگنے سے دریغ نہ کیا۔

انہوں نے کہا کہ مولائے کائنات نے دین کوہر شے پر ہمیشہ مقدم رکھا۔ان کا کردار وعمل اسلامی تعلیمات کا حقیقی عکاس ہے۔حضرت علی علیہ السلام نے اپنے ظاہری دور خلافت میں جس طرح عدل و انصاف کی حکمرانی قائم کی اس کی مثال تاریخ میں نہیں ملتی۔ایک پرامن معاشرے کے لیے انہیں اصولوں کو رائج کرنا ہو گا۔اپنے امور کو منظم کرنے اور یتمیوں کے حقوق کے بارے میں ان کی وصیت پر عمل کر معاشرے کو طبقاتی تفریق سے پاک کیا جا سکتا ہے۔انہوں نے کہا حضرت علی علیہ السلام کی حکمت و بصیرت پوری انسانیت کے لیے رہنما اصول ہیں جن پر عمل باوقار زندگی گزارنے کے لیے انتہائی ضروری ہے۔

وحدت نیوز(لاہور) مجلس وحدت مسلمین پاکستان شعبہ خواتین کی مرکزی سیکرٹری جنرل سیدہ زہرا نقوی نے نرسوں کے عالمی دن کے موقع پر اپنے پیغام میں کہا ہے کہ نرسنگ ایک مقدس پیشہ ہے۔اس شعبے سے منسلک خواتین نے آزمائش کی ہر گھڑی میں پورے حوصلے کے ساتھ ملک و قوم کی خدمت کی ہے۔کورونا وبا کے پھیلاؤ کی موجودہ صورتحال میں طبی عملے کی یہ اراکین ہمیشہ صف اول میں نظر آتی ہیں جولائق تحسین ہے۔اس جرات مندی پر مذکورہ شعبے سے وابستے خواتین کو داد نہ دینا بددیانتی ہو گی۔

انہوں نے کہا کہ پوری قوم پر یہ فرض عائد ہوتاہے کہ قوم کی ان باوقار بچیوں اور بہنوں کا انتہائی احترام کیا جائے۔انہوں نے کہا کہ انسانیت کی خدمت کو شعار بنانے والی خواتین کا مقام ہر معاشرے میں بلاشبہ بلندہے۔پاکستان میں نرسنگ کے فرائض منصبی ادا کرنی والی خواتین کو کم تنخواہ،مراعات کے فقدان اور محدود سہولیات کے باعث مشکلات کا بھی سامنا ہے۔ حکومت کو چاہیے کہ مہنگائی کی موجودہ شرح کے تناسب سے نرسوں کی تنخواہ میں اضافے کا اعلان کرے۔مالی تنگدستی ذہنی دباؤ کا باعث بنتی ہے اور ذہنی دباؤ میں رہتے ہوئے فرائض کی بجا ادائیگی ممکن نہیں۔

وحدت نیوز(ملتان) مجلس وحدت مسلمین جنوبی پنجاب کے سیکرٹری جنرل علامہ اقتدار حسین نقوی ،ڈپٹی سیکرٹری جنرل سلیم عباس صدیقی اور سیکرٹری سیاسیات مہر سخاوت علی نے اپنے مشترکہ بیان میں کہاہے کہ حکومت یوم علی کے جلوسوں میں رکاوٹ بننے سے گریز کرے۔یوم علی کی مناسبت سے مجالس پر کسی قسم کی پابندی قابل قبول نہیں۔اس سلسلے میں صدر پاکستان، وزیر اعظم اور وفاقی وزیر مذہبی امور کو خطوط بھی ارسال کر دیے گئے ہیں۔کورونا وائرس کے پھیلا کو روکنے کے لیے حکومت کی طرف سے جاری ایس او پیز کے تحت ملت تشیع کواپنی عبادات اور مذہبی رسومات ادا کرنے کا مکمل حق حاصل ہے۔صدر پاکستان اور وزیر اعظم نے علماکے ساتھ اجلاس میں بھی واضح طور پر کہا تھا کہ ایس او پیز کے بیس نکات کی پاسداری کو یقینی بنانے والوں کی مذہبی معاملات میں کوئی خلل نہیں ڈالا جائے گا مگر سندھ اور پنجاب کی صوبائی حکومتیں یوم علی کے جلوسوں میں رکاوٹیں ڈالنے کی کوششوں میں مصروف ہیں۔ مسلکی تعصب کی آڑ میں ملت تشیع کو نشانہ بنانے کی کسی کو بھی ہرگز اجازت نہیں دی جاسکتی۔

انہوں نے کہا کہ وفاقی اور صوبائی حکومتوں کا یہ فرض بنتا ہے کہ ملت تشیع کے حوالے سے کوئی بھی یکطرفہ فیصلہ کرنے کی بجائے شیعہ قائدین کو اعتماد میں لیا جائے اور مشاورت کے بعد وہ فیصلے کیے جائیں جن پر دونوں فریق راضی ہوں۔انہوں نے کہاکہ ملک کے آٹھ کروڑ تشیع پر کوئی اپنی مرضی کیسے ٹھونس سکتا ہے۔کورونا وائرس کے پھیلا کو روکنے کے لیے حکومت کی طرف سے جاری ہدایات پر ہمارے لوگ پہلے بھی سختی سے کاربند رہے ہیں اور آئندہ بھی احتیاط کے تمام تقاضوں کو ملحوظ خاطر رکھا جائے گا۔ عزاداری ہمارے ایمان کا حصہ ہے جس پر کسی قسم کو کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جا سکتا۔انہوں نے کہا کہ ملت تشیع قانون کی بالادستی پر یقین رکھتی ہے یہی وجہ ہے کہ ہم نے قانونی تقاضوں کو ہمیشہ اور ہر حال میں مقدم رکھا۔اگربازار،شاپنگ مال اور کاروبار کی اجازت دی جاسکتی ہے تو عزاداری کے خلاف سازش کیوں؟حکومت اپنے فیصلوں پر نظر ثانی کرے اور یوم علی کے سلسلے میں نکلنے والے جلوس اور مجالس کی فی الفور اجازت دے وگرنہ انتظامیہ خود ذمہ دارہوگی۔

وحدت نیوز(جیکب آباد) مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی ترجمان مقصود علی ڈومکی نے کہا ہے کہ یوم القدس اللہ کا دن ہے اور رسول اللہ کا دن ہے پوری دنیا کے مسلمان اس دن کو فلسطین کے مظلوم مسلمانوں سے اظہار یکجہتی کے طور پر مناتے ہیں۔ غاصب اسرائیل اور اس کے سرپرست امریکہ کی جانب سے قبلہ اول بیت المقدس اور سرزمین فلسطین کے خلاف مسلسل سامراجی سازشیں جاری ہیں لہذا وقت کا تقاضہ ہے کہ اس سال مسلمان گزشتہ سالوں کی نسبت بھر پور انداز سے آزادی قدس کا دن منائیں۔ ڈیل آف سنچری کا مقصد فلسطین کے مظلوم عوام کو اپنے وطن سے بے دخل کرنا ہے دنیا بھر کے غیرت مند مسلمان امریکہ اسرائیل اور عرب حکمرانوں کی  اس سازش کو ناکام بنائیں گے گے۔

انہوں نے کہا کہ کرونا کی احتیاطی تدابیر کے باوجود ہر سطح پر مظلوم فلسطینیوں کے حق میں صدائے احتجاج بلند کی جائے گی۔ کشمیر اور فلسطین امت مسلمہ کا دیرینہ مسئلہ ہے دنیا بھر کے مسلمان فلسطین کے ساتھ ساتھ مظلوم کشمیریوں کے حق میں بھی صدائے احتجاج بلند کریں۔ آج بھارت اور اسرائیل مل کر امت مسلمہ کے خلاف سازشوں میں مصروف ہیں اور ان شیطانی سازشوں کو امریکہ برطانیہ اور دیگر سامراجی طاقتوں کی مکمل سرپرستی حاصل ہے۔

 انہوں نے پوری دنیا کے مسلمانوں اور پاکستان کے عوام سے اپیل کی کہ وہ جمعۃ الوداع عالمی یوم القدس کے حوالے سے سے بھرپور آواز بلند کریں اور غاصب اسرائیل کے خلاف اپنے مظلوم فلسطینی بھائیوں کے حق میں موثر آواز بلند کریں انشاءاللہ وہ دن قریب ہے کہ جب بیت المقدس آزاد ہوگا اور ہم کشمیر اور فلسطین کی آزادی کا جشن منائیں گے۔

وحدت نیوز(لاہور)محترمہ حنا تقوی سیکرٹری جنرل مجلس وحدت مسلمین شعبہ خواتین لاہور نے ولادت امام حسن مجتبیٰ علیہ السلام کے موقع پر گلشن کالونی، نادر آباد اور علی پارک کے علاقوں میں موجود ضرورت مند گھرانوں میں راشن تقسیم کیا۔

محترمہ حنا تقوی نے فرمان امام حسن علیہ السلام بیان کرتے ہوئے کہا کہ نیکی کا مطلب یہ ہے کہ اس سے پہلے ٹال مٹول نہ ہو اور اس کے آخر میں احسان نہ جتایا جائے۔

آپ کا مزید کہنا تھا کہ ماہ رمضان المبارک ہمیں درس دیتا ہے کہ مخلوقِ خداکی تکلیفوں کوکم کیاجائے ان کی پریشانیوں دکھوں اورمصیبتوں کے وقت ان کے کام آیا جائے اللہ تعالیٰ کی مخلوق کیلئے آسانیاں پیداکرنا ہی مقصد دین ہے۔

وحدت نیوزّ(پشاور) مجلس وحدت مسلمین خیبر پختونخوا کے صوبائی ڈپٹی سیکرٹری جنرل علامہ جہانزیب جعفری نے صدائے مظلومین پاراچنار کے رہنماؤں پر ایف آئی ار کے اندراج کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے اسے انتقامی کارروائی قرار دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اپنے حق کے لیے آواز بلند کرنے کی پاداش میں مقدمات قائم کرنا آمرانہ طرز عمل ہے۔ایک جمہوری معاشرہ ایسے کسی اقدام کی قطعاً اجازت نہیں دیتا۔

انہوں نے کہا کہ ظلم وجبر کے حربوں سے حق سچ کی آواز کو دبایا نہیں جا سکتا۔ پارا چنار انتظامیہ کی غفلت کے باعث شورکی مسجد و امام بارگاہ کی تباہی کا المناک سانحہ رونما ہوا۔اپنی ناہلی چھپانے کے لیے ملت تشیع کو نشانہ بنایا جانا اپنےاختیارات سے تجاوز کی بدترین مثال ہے۔

انہوں نے پاراچنار کے مذہبی رہنماؤں مولانا مزمل حسین، شبیر ساجدی، شفیق طوری، حشمت طوری اور مجاہد طوری کوایف آئی آر میں نامزد کرنے کی مذمت کرتے ہوئے رپورٹ کو فوری طور پر کالعدم قرار دینے کا مطالبہ کیا ہے۔انہوں نے کہا کہ اس معاملے میں ہم خاموش نہیں رہیں گے۔اگر ہمارا مطالبہ نہ مانا گیا تو ذمہ دارن کے خلاف ہر طرح کی قانونی و آئینی چارہ جوئی کی جائے گی۔

Page 20 of 1053

مجلس وحدت مسلمین پاکستان

مجلس وحدت مسلمین پاکستان ایک سیاسی و مذہبی جماعت ہے جسکا اولین مقصد دین کا احیاء اور مملکت خدادادِ پاکستان کی سالمیت اور استحکام کے لیے عملی کوشش کرنا ہے، اسلامی حکومت کے قیام کے لیے عملی جدوجہد، مختلف ادیان، مذاہب و مسالک کے مابین روابط اور ہم آہنگی کا فروغ، تعلیمات ِقرآن اور محمد وآل محمدعلیہم السلام کی روشنی میں امام حسین علیہ السلام کے ذکر و افکارکا فروغ اوراس کاتحفظ اورامر با لمعروف اور نہی عن المنکرکا احیاء ہمارا نصب العین ہے 


MWM Pakistan Flag

We use cookies to improve our website. Cookies used for the essential operation of this site have already been set. For more information visit our Cookie policy. I accept cookies from this site. Agree